2020 کے چند چٹپٹے اشتہارات

21ویں صدی کے میڈیا پر کیسے کیسے چٹپٹے اشتہارات نشر ہوتے ہیں، اس کی ایک جھلک۔

(سوشل میڈیا)

 میرا بیٹا روزانہ شام کو میری گاڑی لے کراپنے دوستوں کے ساتھ گھومنے پھرنے جاتا ہے۔ اس ٹویٹ کے ذریعے بچے کے ’دوستوں‘ سے اپیل ہے کہ وہ اس کے ساتھ سیر کو ضرور جائیں مگر اپنی لپ سٹک اور نیل پالش وغیرہ گاڑی میں چھوڑ کر نہ جایا کریں۔ شکریہ۔

                                       ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 بذریعہ پوسٹ ہٰذا تمام رشتہ داروں اوردوستوں کو اطلاع دی جاتی ہے کہ بیگم غریب جان، جو ایک سرکاری ہسپتال میں داخل تھی، اپنا علاج مکمل کرا کے گھر واپس پہنچ گئی ہے۔ اس کی نماز جنازہ شام پانچ مقامی قبرستان میں اداکی جائے گی۔

                                            ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جناب وزیراعظم  نے جذبات میں آ کر بیچ چوراہے کے کشکول توڑ دیا تھا، جس کے ٹکڑے عوام تبرکاً اٹھا کر لے گئے۔ ٹکڑے اٹھانے والوں کو ہدایت کی جاتی ہے کہ اندر سات یوم یہ ٹکڑے وزارت خزانہ میں جمع کراد یں۔ کشکول جوڑنا پڑ گیا ہے۔

                                      ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

ایک عدد ضمیر چالو حالت میں برائے فروخت موجودہے۔ فروخت کنندہ نے ساری عمراس ناہنجارکے جھانسے میں آ کر ناقابل تلافی نقصانات اٹھائے ہیں۔ اب مہنگائی کے سبب بچوں کی تعلیم اور گھریلو اخراجات حالات کو اس نہج پر لے آئے ہیں کہ فروخت کنندہ کے لیے جسم وجاں کا رشتہ برقرار رکھنا مشکل ہو گیا ہے۔ لہٰذا وہ مطابق حکم شریک حیات اپنا طرز حیات تبدیل کرتے ہوئے ’باعزت‘ زندگی گزارنا چاہتا ہے اورضمیر جس نے فروخت کنندہ کو زندگی کے ہر موڑ پر نیلام کیا ہے، اب خود اس نے ضمیر کو نیلام کرنے کے لیے سرعام رکھ چھوڑا ہے۔ فروخت کے بعد ضمیر ناقابل واپسی ہو گا۔

                      ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کالے علم اورکالے علم کی کاٹ کے ماہر کالے شاہ سرکارکا اعلان ہے کہ دنیا میں ہرمصیبت کا حل موجود ہے، چاہے وہ کالے علم کے اثرات ہوں یا کالے دھن کے۔ ایک رات کے عمل سے آپ پرکالا جادو کرنے والے کا منہ کالا اور اگر آپ کالا دھن اکٹھا کر کر کے اپنا منہ کالا کر چکے ہیں تو شرطیہ ایک ہفتے میں آپ کا منہ اور دھن دودھ کی طرح سفید۔

کالا دھندا کرنے والوں کے لیے پولیس اورقانون نافذ کرنے والے دیگراداروں کی آنکھوں میں دھول جھونکنے یا رام کرنے کے تیربہدف نسخے، مخالفین اور رقیبوں کو کالے پانی کی سزائیں دلوانے کے کامیاب گُر، سرکاری محکموں کی کالی بھیڑوں کا گارنٹی شدہ تحفظ، کالی راتوں کی شرمناک وارداتوں پر پردہ ڈالنے کے حیرت انگیز ہنر، کالے کرتوت میڈیا سے چھپانے کے موثر عملیات اور کالا من کسی پر ظاہر نہ ہونے کے آزمود ہ تعویذات۔ محبت میں ناکامی، امتحان میں ناکامی، دھرنوں کے مقاصد میں ناکامی یا دھرنا بازوں کو منتشر کرنے میں ناکامی، ہر ناکامی کو کامیابی میں بدلنے کا کام بذریعہ عملیات و تعویذات و جِنات و چکریات کیا جاتا ہے۔

یاد رہے کہ کالے شاہ سرکار کے قبضے میں جِنات کا پورا ریوڑ ہے، جوان کے حکم پر کسی بھی دھرنے کو چشم زدن میں کامیاب یا تہس نہس کر سکتا ہے (پہلے آؤ، پہلے پاؤ کی بنیاد پر) جنات سے دشمن کی ٹانگیں تڑوائیں، اسمبلیاں تڑوائیں، اپنے حق میں ووٹ ڈلوائیں، عوام کو بے وقوف بنوائیں، قرضہ معاف کرائیں، رقم ڈبل کروائیں یا کوئی بھی دونمبر کام کروائیں، ہرکام آپ کی مرضی کے مطابق ہو گا۔ سنگدل محبوب اور وزیراعظم کا استعفیٰ آپ کے قدموں میں، دل پھینک شوہر منٹوں میں تارک العورات (آپ کے علاوہ)، ساس آپ کی اگلے جہان، دولت کی دیوی آپ پر مہربان، بجلی چوری آپ کی دسترس میں، انعامی رقم آپ کی جیب میں، شہرت آپ کی لونڈی اور کھایا پیا سب ہضم۔

نوٹ: ہر کام بغیر لالچ اور نذرانے کے کیا جاتا ہے۔ البتہ جنات کے ٹی اے ڈی اے پر کافی خرچہ اُٹھ جاتا ہے۔ اس سلسلے میں کھلے دل سے عطیات دینے پر کوئی پابندی نہیں (اس پوسٹ کوسو بار شیئر کرنے والا کالے شاہ سے اپنا ایک کام بغیر عطیہ دیے کروا سکتا ہے)۔

                              ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

لالی وڈ کی مایہ ناز ’بے ڈھنگ پروڈکشن‘ نے مچا دی ایک دفعہ پھر دھوم۔ ہالی وڈ اور بالی وڈ کے فلم سازوں نے منہ میں دبالیں انگلیاں۔ کامیاب رومانی فلموں’سجن کرارا،‘ ’پیار تے اچار،‘ ’گُھگو ماہی‘ اور قتل و غارت سے بھرپور شاہکاروں ’جَٹ دی سٹ‘ اور’جٹ دا لنگوٹا‘ کے بعد نئی دھماکہ خیز فلم ’ناممکن‘ کی نمائش جاری ہے۔ فلم نے کھڑکی توڑ رش کے تمام سابقہ ریکارڈ توڑ دیے۔

’ناممکن‘ ایک ایسے پرعظم، انتھک اورباہمت ہیروکی کہانی ہے، جسے دیکھ کر شائقین کی عقل دنگ رہ جائے گی۔ سب سے پہلے ہیرو نے بغیر چائے پانی کے اپنا ڈومیسائل بنوا لیا۔ پھر اپنا شناختی کارڈ اور پاسپورٹ بھی خوار ہوئے بنا ہی بنوا لیے۔ حیرت انگیز طور پر اس نے تین دن میں مکان کا نقشہ بھی منظور کروا لیا۔ ایف ایس سی کی ڈگری میں اس کا نام غلط درج ہو گیا تو شیرکے بچے نے گھر بیٹھے اسے درست کرا لیا۔

بے جرم پکڑا گیا تو پولیس نے اسے مفت میں رہا کر دیا۔ اس نے اپنے دیوانی مقدمے کا فیصلہ محض چار ماہ میں کرا کے قانون کی دنیا کو ورطہ حیرت میں ڈال دیا۔ ناقابل یقین کامیابیاں حاصل کرتے کرتے اس نے بجلی اور سوئی گیس کے میٹر بھی دو روز میں لگوا لیے۔ ڈریکولا سے بھی زیادہ خوفناک اور حیرت انگیز فلم، جس کے ہر سین پر آپ پکاراٹھیں گے’ناممکن! ناممکن!‘

صبر و ہمت کے لازوال مظاہرے۔ اس کے علاوہ بے ڈھنگ پروڈکشن نے منی بیک گارنٹی دیتے ہوئے کہا ہے کہ اگر ہیروئن کے شرمناک ڈانس دیکھ کر شائقین کا سر شرم سے نہ جھک جائے تو ان کے پیسے واپس۔

                             ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مجھے کسی کا زیورات سے بھرا ہوا بکس ملا ہے۔ میری اس فیک آئی ڈی سے مجھے تلاش کر کے اپنا بکس لے جائیں۔

                             ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نیک سیرت، پردہ دار20 سالہ گرین کارڈ ہولڈر دوشیزہ سے شادی کے خواہشمند رابطہ کریں۔ لڑکی کا اپنا کاروبار، کروڑوں کی جائیداد۔ ذات پات، عمر کی کوئی قید نہیں۔ دوسری، تیسری، چوتھی شادی کے خواہشمند، نیز لُولے، لنگڑے، بہرے، بوڑھے بھی رابطہ کر سکتے ہیں۔ دولہا کے علاوہ اس کی پہلی بیویوں اور ان کے بچوں، حتیٰ کہ بھانجوں بھتیجوں تک کو گرین کارڈ دلوائے جائیں گے۔ ٹرمپ اپنا یار ہے۔ جلدی کریں تاکہ دوشیزہ کا کاروبار اور بھی ترقی کر سکے (رجسٹریشن فیس صرف پچاس ہزارروپے)

                                    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میرا نام پھنے خان سدا بہار ممبر اسبلی ہے مگر دشمنوں کی سازشوں سے لوٹا مشہور ہو گیا ہے۔ کوئی شرم ہوتی ہے، کوئی حیا ہوتی ہے۔ مجھے  پھنے خان کے اصلی نام سے یاد فرمایا جائے۔ یاد رہے کہ  نام بگاڑنا ویسے بھی غیر اخلاقی حرکات کے زمرے میں آتا ہے۔

                      ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میرا نام گھیبا خان ہے۔ جبکہ بی اے کی ڈگری میں غلطی سے بُوٹا خان درج ہو گیا ہے۔ حالانکہ وہ کمبخت تو ماضی کے ایک الیکشن میں بی اے کی شرط کی مجبوری کی بنا پر فقط میری جگہ امتحان میں بیٹھا تھا۔ جاہل نے داخلہ فارم پُر کرتے وقت نام بھی اپنا لکھ دیا اور احمقوں نے ڈگری بھی اسی کے نام پر جاری کر دی، حالانکہ سارا خرچہ میرا تھا۔

 

زیادہ پڑھی جانے والی بلاگ