پل چرخی جیل کے سابق سربراہ کے خلاف جنگی جرائم کا مقدمہ

ایک تجزیاتی ویب سائٹ افغانستان اینالسٹ نیٹ ورک کی ایک رپورٹ کے مطابق یہ مقدمہ جنگی جرائم میں کسی افغان ملزم کے عدالت میں پیش ہونے کی ایک نادر مثال ہے۔

طالبان 17 اکتوبر 2021 کو کابل کے نواح میں واقع پل چرخی جیل کا معائنہ کر رہے ہیں (اے ایف پی)

80 کی دہائی میں جنگی جرائم کے الزام میں ایک افغان عبدالرزاق عارف کے خلاف جنگی جرائم کے الزامات کے تحت ہالینڈ میں بدھ سے عدالتی کارروائی کا آغاز شروع ہو رہا ہے۔ عبدالرزاق عارف کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ انہوں نے 1983 سے 1990 تک افغانستان کی پل چرخی جیل میں اعلیٰ عہدوں پر خدمات انجام دی تھیں اور ان پر غیر انسانی سلوک اور شخصی آزادیوں سے محروم کرنے میں معاون ہونے یا اس کی اجازت دینے کا الزام عائد کیا گیا ہے۔

عبدالرزاق عارف کو نومبر 2019 میں ہالینڈ میں ایک ڈچ افغان شہری سے 2012 میں خفیہ اطلاع ملنے اور سات سال طویل تفتیش کے بعد گرفتار کیا گیا تھا۔ ایک تجزیاتی ویب سائٹ ’افغانستان اینالسٹ نیٹ ورک‘ کی ایک رپورٹ کے مطابق یہ مقدمہ جنگی جرائم میں کسی افغان ملزم کے عدالت میں پیش ہونے کی ایک نادر مثال ہے۔

 ڈچ پبلک پراسیکیوشن سروس کی طرف سے آٹھ فروری کو ایک مختصر نوٹ جاری ہوا جس میں کہا گیا تھا کہ 16 فروری 2022 سے دی ہیگ میں جنگی جرائم کے اس مقدمے کا آغاز ہو گا۔ پراسیکیوشن سروس نے ملزم کا نام لیے بغیر کہا کہ ایک 76 سالہ شخص کے خلاف  فوجداری کارروائی شروع ہو جائے گی جن پر 1980 کی دہائی میں افغانستان میں جنگی جرائم کے ارتکاب کا شبہ ہے جب وہ 1983-1990 کے دوران کابل کی پل چرخی جیل میں کمانڈر اور سیاسی امور کے سربراہ تھے۔

یان میں مزید کہا گیا کہ ’ان کی قیادت میں اس وقت کی حکمران افغان حکومت کے (مبینہ) مخالفین کو خوفناک حالات میں، بغیر (منصفانہ) مقدمے کے برسوں تک قید رکھا گیا۔‘

پراسیکیوشن سروس کے مطابق عبدالرزاق عارف نے ڈچ شہریت حاصل کی تھی اور وہ 2010 سے اپنی بیوی اور دو بچوں کے ساتھ کیرکراڈ شہر میں مقیم تھے۔ وہ 2001 میں پہلی مرتبہ ہالینڈ آئے تھے۔ عبدالرزاق اب دو سال سے زیادہ عرصے سے قبل از سماعت حراست میں ہیں۔

دیگر ممالک کی طرح کرونا (کورونا) وائرس وبائی مرض کی وجہ سے اس کو مقدمے کی سماعت میں تاخیر ہوئی ہے۔

اس کی گرفتاری کے بعد کے مہینوں میں، اے اے این نے دو ڈچ پراسیکیوٹرز کا انٹرویو کیا کہ ڈچ فوجداری انصاف کا نظام جنگی جرائم کا شبہ رکھنے والے افغانوں کے ساتھ کس طرح برتاؤ کر رہا ہے، جن میں عبدالرزاق بھی شامل ہیں۔ اس کے علاوہ انہوں نے دو افغانوں کا انٹرویو بھی کیا جنہیں 1980 کی دہائی میں پل چرخی میں رکھا گیا تھا۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

انٹرویو لینے والوں نے بتایا کہ عبدالرزاق نے 1982 سے 1987 تک پل چرخی جیل میں تین مختلف عہدوں پر خدمات انجام دیں، جیل میں خاد انٹیلی جنس ایجنسی کے سیاسی یونٹ کے سربراہ، اس وقت کے ڈپٹی جنرل ڈائریکٹر (رئیسِ علمی) اور آخر میں جیل کے جنرل ڈائریکٹر۔ استغاثہ نے اے اے این کو بتایا کہ ان کا خیال ہے کہ عارف نے جیل میں تین عہدوں پر کام کرنے کی تصدیق کرنے کے لیے کافی تفصیلات فراہم کی ہیں، حالانکہ اس وقت اس کی تفصیلات واضح نہیں تھیں کہ وہ ان عہدوں پر کب فائز رہے۔ پریس ریلیز صرف پل چرخی میں ’کمانڈر اور سیاسی امور کے سربراہ‘ کے طور پر ان کے کردار کا حوالہ دیا گیا ہے۔

عبدالرزاق عارف پر الزامات

عبدالرزاق کے خلاف چارج شیٹ کے مطابق ان پر الزام ہے کہ وہ:

  • غیر انسانی سلوک اور آزادی سے محروم کرنے میں ملوث تھے
  • ایک اعلیٰ افسر کی حیثیت سے غیر انسانی سلوک اور آزادی سے محرومی کی اجازت دی، یعنی ان جرائم کے مرتکب ہوئے

چارج شیٹ میں کہا گیا ہے کہ اکیلے یا دوسروں کے ساتھ مل کر انہوں نے ’(بار بار) جنگ کے قوانین اور رواج کی خلاف ورزی کی،‘ بشمول ایسے جرائم:

  • جن کے نتیجے میں شدید جسمانی نقصان اور/یا
  • افراد اور/یا کے خلاف تشدد میں ملوث
  • دوسروں کو کچھ کرنے پر مجبور کرنا، کچھ نہ کرنا یا کچھ برداشت کرنا اور/یا
  • منظم دہشت گردی کی پالیسی کے مظہر تھے اور/یا
  • آبادی کے ایک مخصوص گروہ کے خلاف غیر قانونی کارروائیاں تھیں اور/یا
  • ملزم اور/یا کے مقابلے میں دوسروں کی موت یا شدید جسمانی نقصان کا امکان تھا
  • غیر انسانی سلوک میں ملوث۔

چارج شیٹ میں عارف پر سابق صدر ’اے‘ کے خاندان کے 18 میں سے ایک یا زیادہ افراد کے خلاف بدسلوکی کا الزام لگایا گیا ہے (ہمارے 2020 کے انٹرویو لینے والوں کے مطابق یہ سابق صدر حفیظ اللہ امین تھے) جنہیں پل چرخی جیل میں سیاسی قیدیوں کے طور پر حراست میں رکھا گیا تھا۔ عبدالرزاق پر نظر بندوں کے خلاف درج ذیل بدسلوکیوں کا یا تو تنہا یا دوسروں کے ساتھ مل کر الزام ہے:

۔ ان کے ساتھ ظالمانہ اور غیر انسانی سلوک کیا اور/یا

۔ (بار بار) ان کے ذاتی وقار پر حملہ کیا (اور/یا) (خاص طور پر)

۔ مذکورہ بالا افراد کے ساتھ ذلت آمیز سلوک کیا اور/یا

۔ ان کے خلاف فیصلہ سنایا اور/یا ان کے خلاف ماضا میں کسی ایک باضابطہ تشکیل شدہ ٹربیونل کے ذریعہ جو مہذب قوموں کی طرف سے ناگزیر اور/یا تسلیم شدہ تمام عدالتی ضمانتیں پوری کرتا ہے ​​فیصلے کے بغیر اپنا فیصلہ نافذ کیا گیا۔

۔ من مانی کرتے ہوئے انہیں ان کی آزادی سے محروم کیا۔

اس کے اقدامات سے (سنگین) جسمانی اور/یا (سنگین) نفسیاتی نقصان پہنچانے کا الزام ہے، جس کے نتیجے میں (دوسری چیزوں کے علاوہ):

۔ نظر بندی کے ابتر حالات

۔ تشدد کے جسمانی واقعات

۔ سزاؤں پر عمل درآمد

۔ طویل نفسیاتی دباؤ اور/یا

۔ دہشت کی فضا اور/یا جسمانی یا نفسیاتی تشدد کے سامنے آنے کا خوف۔

پل چرخی میں جن حالات کا چارج شیٹ میں حوالہ دیا گیا ہے ان میں زیادہ بھیڑ، کم دن کی روشنی، ناکافی بیت الخلا، خراب اور/یا گندا کھانا اور پینے کا پانی، نہ یا ناکافی طبی دیکھ بھال، سیلوں میں طویل مدت تک الگ تھلگ رکھا جانا شامل ہیں۔

عبدالرزاق پر لگائے گئے الزامات سنگین ہیں، حالانکہ وہ تشدد، بدسلوکی اور قتل کے پورے پیمانے کی عکاسی نہیں کرتے جو ان برسوں کے دوران پل چرخی میں ہو رہے تھے جب وہ وہاں کمانڈ پوزیشن پر تھے۔ یہ ہو سکتا ہے کہ پبلک پراسیکیوشن سروس کے پاس عبدالرزاق کو کسی خاص، زیادہ سنگین جنگی جرائم میں براہ راست ملوث ہونے کی کوشش کرنے کے لیے کافی ثبوت نہ ہوں۔ تاہم، اگلے حصے کی تفصیلات کے طور پر، یہ بڑے پیمانے پر دستاویز کیے گئے ہیں کہ جیل میں اس وقت کیا ہوا جب وہ قائدانہ عہدوں پر تھے۔

پل چرخی میں جنگی جرائم کی دستاویزات

انسانی حقوق کے کارکنوں کے جمع کردہ احوال جیل میں ہونے والے جرائم کے پیمانے کا پتہ بتاتے ہیں، جسے آنجہانی برطانوی صحافی اینتھونی ہائیمن نے ’ایک بڑے پہیے کے طور پر بیان کیا ہے جو آٹھ کثیر المنزلہ بلاکس پر مشتمل ہے، جس میں واچ ٹاور اور اونچی دیواریں جیل کو مین روڈ سے جنوب میں جلال آباد اور سرحد تک، صرف ایک میل کے فاصلے پر تقسیم کر رہی ہیں۔‘

پل چرخی میں بدترین زیادتیاں، خاص طور پر بڑے پیمانے پر 1978-1979 کے دوران جبری گمشدگیاں، جب خلقی پارٹی PDPA کے پہلے دو صدور اقتدار میں تھے، ان سالوں میں اور درحقیقت 1992 میں نجیب اللہ کی صدارت کے خاتمے تک جب عبدالرزاق مبینہ طور پر قیادت کے عہدوں پر فائز تھے جیل میں من مانی گرفتاری، تشدد اور غیر منصفانہ مقدمات کے بعد پھانسی دینے کا سلسلہ جاری رہا۔ ببرک کارمل نے سوویت حملے کے بعد دسمبر 1979 میں اقتدار میں آنے پر سیاسی قیدیوں کے لیے عام معافی کا اعلان کیا تھا، لیکن اقوام متحدہ کی ایک رپورٹ کے مطابق ان کی حکومت نے ’مشتبہ مخالفین کا خود تعاقب شروع کر دیا۔‘

اس وقت، ایمنسٹی انٹرنیشنل کی 1986 کی ایک رپورٹ کے مطابق پل چرخی کے 'بلاکس' کا کنٹرول وزارت داخلہ اور خاد کے درمیان تقسیم کیا گیا تھا (بعد کے سالوں میں سرکاری طور پر وزارتِ سلامتی کے نام سے جانا جاتا ہے)۔ خاد کو 1980 میں سوویت یونین نے ڈاکٹر نجیب اللہ کی قیادت میں سوویت KGB کے ماڈل پر قائم کیا تھا یہاں تک کہ وہ 1986 میں صدر بن گئے۔ ایمنسٹی نے رپورٹ کیا کہ سیاسی قیدیوں کو پہلی بار KhAD کی اپنی سہولیات میں حراست میں لیا گیا اور ان پر تشدد کیا گیا اور اس کے بعد پوچھ گچھ کی گئی۔ اور بعض اوقات طویل عرصے تک نظربندی کے بعد انہیں پل چرخی منتقل کیا جا سکتا ہے:

انٹرویو کیے گئے زیادہ تر قیدیوں نے بتایا کہ جیل منتقل ہونے کے بعد انہیں مزید تشدد کا نشانہ نہیں بنایا گیا، لیکن خاد کی طرف سے پل چرخی کے اندر تشدد اور جیل حکام کی جانب سے بدسلوکی کے واقعات کی خاص طور پر بلاک ایک میں اطلاع ہے۔

ایمنسٹی رپورٹ اور ہیومن رائٹس واچ کی ایک اور رپورٹ جو 1984 میں شائع ہوئی تھی، اس وقت تعینات کیے گئے تشدد کی – شدید مار پیٹ، نیند، پانی اور خوراک سے محروم ہونا، دباؤ والی پوزیشنوں پر مجبور کرنا اور لمبے عرصے تک برف یا پانی یا دھوپ میں کھڑے رکھنا اور بجلی کے جھٹکے بشمول کان، زبان یا اعضا تک۔ ایمنسٹی نے کہا، ’بجلی کے جھٹکے سے تشدد کی اطلاع پل چرخی جیل کے اندر سے ملی تھی۔‘

ماضی میں سزائیں

افغانستان میں حکومتوں اور مسلح اپوزیشن گروپوں کی طرف سے پچھلے 40 سالوں میں جنگی جرائم کی دستاویزات ہزاروں، ممکنہ طور پر دسیوں ہزار صفحات پر مشتمل ہیں۔ افغانوں اور دیگر لوگوں کے ساتھ ہونے والے مظالم اور ناانصافیوں کے بارے میں بہت کچھ معلوم ہے۔ اس کے باوجود عبدالرزاق عارف ان مٹھی بھر افغانوں میں سے ایک ہوں گے جن پر جنگی جرائم کا الزام ہے جو مجرمانہ تحقیقات یا مقدمات کا سامنا کر رہے ہیں۔ ان میں سے زیادہ تر یورپ میں ہوئے ہیں، بشمول ہالینڈ میں پانچ دیگر افغان، تمام PDPA، یا تو خلقی یا پرچمی، برطانیہ میں حزب اسلامی کا ایک کمانڈراور جرمنی میں افغان نیشنل آرمی کا ایک افسر۔ 

خود افغانستان میں، صرف دو مبینہ جنگی مجرموں کو مقدمات کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ ان میں سے ایک عبداللہ شاہ تھے جو عبدالرب رسول سیاف کی قیادت میں اتحاد اسلامی کے کمانڈر رہے تھے، جنہوں نے ایک ’بزرگ سیاست دان‘ کے طور پر اثر و رسوخ حاصل کیا اور بعد میں 2001 کے بعد میں رکن پارلیمان۔ عبداللہ شاہ نے جنگی جرائم میں اپنے کردار سے انکار نہیں کیا لیکن کہا کہ وہ سیاف کے حکم پر عمل کر رہے ہیں۔

عبداللہ شاہ کو 20 اپریل 2004 کو خفیہ طور پر پھانسی دی گئی۔

دوسرا اسد اللہ سروری تھا، جو انٹیلی جنس ایجنسی AGSA کے ڈائریکٹر رہ چکے ہیں، جو PDPA کے پہلے صدر نور محمد ترکئی (1978-79) کے دور حکومت میں کام کرتے تھے۔ سروری کو شوریٰ نظر فورسز نے اپریل 1992 میں کابل میں داخل ہونے کے بعد حراست میں لے لیا تھا اور وادی پنج شیر میں حراست میں رکھا گیا تھا، یہاں تک کہ انہیں کابل لایا گیا اور 2005 میں صدارتی محل میں قید کر دیا گیا۔ سروری کو قصوروار ٹھہرایا گیا تھا اور انہیں موت کی سزا سنائی گئی تھی، لیکن 2016 میں پراسرار حالات میں رہائی ہوئی۔

ڈچ پولیس اور پبلک پراسیکیوٹرز نے عبدالرزاق عارف کے خلاف تحقیقات کرنے اور مقدمہ تیار کرنے میں برسوں گزارے۔ جیسے ہی مقدمے کی سماعت شروع ہوتی ہے، ایک ایسے شخص پر مقدمہ چلانے کی مشکلات کا اندازہ لگایا جا سکتا ہے جس نے چار دہائیاں قبل کسی دوسرے، جنگ زدہ ملک میں مبینہ طور پر جرائم کا ارتکاب کیا تھا۔

پل چرخی میں ہونے والے جرائم کے پیمانے کو دیکھتے ہوئے جب عبدالرزاق عارف کے پاس کمانڈ پوزیشن تھی، اس کے خلاف الزامات زیادہ سنگین نہیں ہیں۔ اس کے باوجود، پراسیکیوشن سروس کے ایک ترجمان نے اے اے این کو بتایا کہ اگر جرم ثابت ہو جائے تو سزا ہر الزام کے لیے 15 سال تک چل سکتی ہے، یا اگر ’حالات کی سنگینی‘ کو مدنظر رکھا جائے تو 20 سال بھی ہو سکتی ہے۔

مقدمے کی سماعت تقریباً دو ہفتے تک جاری رہنے کی توقع ہے۔

نوٹ: یہ تحریر ایک آزاد غیر منافع بخش پالیسی تحقیقی ادارے ’افغانستان اینالسٹ نیٹ ورک‘ (اے این این) پر شائع ہو چکی ہے۔ کیٹ کلارک افعانستان میں بی بی سی کی نامہ نگار رہ چکی ہیں۔

زیادہ پڑھی جانے والی تاریخ