پاکستان میں تین ارب ڈالر ڈپازٹ میں توسیع پر غور

سعودی وزیر خزانہ محمد عبدالله عبدالعزيز الجدعان نے کہا کہ پاکستان اہم اتحادی ہے اور سعودی عرب اس کے ساتھ کھڑا رہے گا۔

سعودی وزیر خزانہ، محمد الجدعان 13 دسمبر 2021 کو ریاض میں سعودی 2022 بجٹ فورم کے دوران خطاب کر رہے ہیں (فائل تصویر: روئٹرز)

سعودی عرب کے وزیرخزانہ محمد عبدالله عبدالعزيز الجدعان نے آج سوئٹزرلینڈ کے شہر ڈیووس میں ہونے والے ورلڈ اکنامک فورم کے موقعے پرکہا ہے کہ سعودی عرب پاکستان کو دیے جانے والے تین ارب ڈالر ڈیپازٹ میں توسیع پر غور کر رہا ہے۔

سعودی وزیرخزانہ نے برطانوی خبر رساں ادارے روئٹرز کو بتایا ’اس وقت تین بلین ڈالرز ڈیپازٹ کی مدت میں توسیع کو حتمی شکل دے رہے ہیں۔‘

گزشتہ سال سعودی عرب نے پاکستان کے مرکزی بینک میں تین ارب ڈالر پاکستان کے زرمبادلہ کے ذخائر کو سپورٹ کرنے کے لیے جمع کرائے تھے۔

محمد عبدالله عبدالعزيز الجدعان نے مزید تفصیلات نہیں بتائیں تاہم یکم مئی کو دونوں ممالک نے ایک مشترکہ بیان میں کہا تھا کہ وہ زرمبادلہ کے ذخائر کی مد میں سپورٹ کے لیے ڈیپازٹ کی مدت میں توسیع سمیت دوسرے آپشن پر غور کریں گے۔

پاکستان کو اس وقت افراط زر میں اضافے، زرمبادلہ کے ذخائر میں کمی اور روپے کی قدر میں مسلسل گراوٹ کے سبب زرمبادلہ کی اشد ضرورت ہے۔

سعودی وزیر خزانہ محمد عبدالله عبدالعزيز الجدعان نے کہا کہ پاکستان اہم اتحادی ہے اور سعودی عرب اس کے ساتھ کھڑا رہے گا۔

پاکستان میں نئی حکومت آنے کے بعد آئی ایم ایف کے ساتھ قرض معاہدے کی بحالی کے اوپر منڈلاتے خدشات کی وجہ سے مارکیٹ اور معیشت کو بہت زیادہ عدم استحکام کا سامنا ہے۔

زیادہ پڑھی جانے والی معیشت