برطانیہ کی نرس نے سات بچے کیوں قتل کیے؟

استغاثہ نے مقدمے کی سماعت کے دوران سیریل کلر نرس کے بچوں کو قتل کرنے کے کئی ممکنہ محرکات پیش کیے۔

17 اگست، 2023 کو مانچسٹر میں چیشائر کانسٹیبلری پولیس فورس کی طرف سے جاری کردہ ایک ہینڈ آؤٹ تصویر میں نرس لوسی لیٹبی کی نومبر 2020 کو تحویل میں لی گئی تصویر دکھائی گئی ہے۔ لوسی لیٹبی کو 18 اگست 2023 کو سات نوزائیدہ بچوں کو قتل کرنے اور اسپتال کے نوزائیدہ یونٹ میں چھ دیگر کو قتل کرنے کی کوشش کرنے کا مجرم پایا گیا تھا (چیشائر کانسٹیبلری/ اے ایف پی)

نرس لوسی لیٹبی کو ایک انوکھے مقدمے میں چیسٹر ہسپتال کے کاؤنٹیس میں سات بچوں کے قتل کا قصوروار پایا گیا۔ اس واقعے نے برطانیہ کو چونکا دیا۔

اب یہ سمجھنے کے لیے آزاد تحقیقات شروع کی گئی ہیں کہ پولیس کو اطلاع ملنے سے پہلے لیٹبی کس طرح چھ قتل کی کوشش کرنے میں کامیاب رہی۔

ایک نوزائیدہ نرس، لیٹبی نے قتل کا ارتکاب کیوں کیا اس کی وجوہات شاید کبھی پوری طرح سمجھ میں نہ آئیں، حالانکہ استغاثہ اور دیگر ماہرین نے اس مقدمے کے دوران ججوں کو کئی ممکنہ محرکات کے بارے میں بتایا۔

ساتھی ڈاکٹر کی توجہ حاصل کرنے کا اسے 'جنون' تھا

استغاثہ کی طرف سے پیش کردہ ایک وجہ یہ تھی کہ لیٹبی نے ایک ڈاکٹر کی ہمدردی حاصل کرنے کے لیے، جس کے لیے وہ ’پاگل‘ ہوچکی تھی اپنی نگہداشت میں موجود بچوں پر حملہ کیا اور انہیں مار ڈالا۔

یہ الزام لگایا گیا تھا کہ وہ خود کو اس (ڈاکٹر) کی توجہ کا مرکز بنانا چاہتی تھی۔

مقدمے کے دوران، لیٹبی نے 16 فروری تک جذبات کا کوئی اظہار نہیں کیا جب وہ ڈاکٹر، جس کی قانونی وجوہات کی بنا پر شناخت نہیں کی جا سکتی، حلف اٹھانے کے بعد اپنے نام کی تصدیق کی۔

لیٹبی اور گیلری میں موجود لوگ شادی شدہ رجسٹرار کو نہیں دیکھ سکے کیونکہ انہوں نے سکرین کے پیچھے سے اپنا بیان دینے کو کہا تھا۔

اس کی آواز سننیے پر نرس کے آنسو نکل آئے جب وہ اچانک اپنی سیٹ چھوڑ کر باہر جانے والے دروازے کی طرف چل پڑی۔

جب اس کا گواہی دینے کا وقت آیا تو اس نے کہا کہ وہ ڈاکٹر سے ایک ’قابل اعتماد دوست‘ کی حیثیت سے پیار کرتی ہیں لیکن رومانوی طور پر اس کی محبت میں گرفتار نہیں تھیں۔

اس نے استغاثہ کے ان دعوؤں کی تردید کی کہ وہ ڈاکٹر سے ’انتہائی متاثر‘ تھیں۔

وہ ’خدا‘ بننا پسند کرتی تھی

چائلڈ پی، لیٹبی کے قتل ہونے والے تین بچوں میں سے ایک، 24 جون 2016 کو گر گیا اور اسے دوسرے ہسپتال منتقل کرنے کی تیاریاں کی جا رہی تھیں۔

منتقلی سے کچھ دیر پہلے، کہا جاتا ہے کہ لیٹبی نے ایک ساتھی کو بتایا تھا، جس کا جنون اس پر طاری ہونے کا الزام لگایا گیا تھا، ’کیا وہ یہاں سے زندہ جا رہا ہے، وہ زندہ نہیں ہے؟۔‘

لیٹبی کے مقدمے کی سماعت کے دوران، پراسیکیوٹر نک جانسن کے سی نے کہا کہ نرس نے یہ تبصرہ اس لیے کیا کیونکہ وہ ’جانتی تھیں کہ کیا ہونے والا ہے۔‘

اس نے کہا: ’وہ چیزوں کو کنٹرول کر رہی تھی۔ وہ جو کچھ ہو رہا تھا اس سے لطف اندوز ہو رہی تھی اور خوشی سے کسی ایسی چیز کی پیشں گوئی کر رہی تھی جسے وہ جانتی تھی کہ ہونے والا ہے۔

’وہ حقیقت میں خدا کا کردار ادا کر رہی تھی۔‘

لیٹبی نے پہلے چائلڈ پی کے پیٹ میں جب اسے دودھ پلایا ہوا پمپ کی - بچے کے بھائی کو قتل کرنے کے صرف 13 منٹ بعد۔

لیٹبی کو والدین کے 'غم اور مایوسی' سے 'سنسنی' ملی

والدین اور اس وارڈ میں موجود دیگر نرسوں نے جہاں وہ کام کرتی تھی بتایا کہ لیٹبی نے اس وقت غیر معمولی کام کیا جب اس نے جن بچوں کو مارا یا قتل کرنے کی کوشش کی ان کی تعداد اچانک کم ہو گئی۔

بچہ نمبر ایک کے والدین نے، جو لیٹبی کے بار بار حملوں کی وجہ سے مر گیا، پولیس کو بتایا کہ انہیں ’مسکراتے ہوئے اور اس کے بارے میں بتایا کہ وہ [بچے کے] پہلے غسل کے وقت کس طرح موجود تھی اور اسے یہ کتنا اچھا لگا تھا۔‘

مسٹر جانسن کے سی نے لیٹبی کو مشورہ دیا کہ وہ ’اس کمرے میں جو آپ دیکھ رہے تھے، غم اور مایوسی سے ایک سنسنی حاصل کر رہی ہے۔‘

لیٹبی نے اس الزام کی تردید کی۔

سیریل کلر نے اپنے مقتولین کے خاندانوں کو ان کی موت کی برسی کے موقع پر فیس بک پر تلاش کیا اور اکثر چند منٹوں میں ان کے نمبر تلاش کر لیتی۔

ایک مثال کرسمس کے دن اس کی سرچ تھی۔ لیٹبی نے گواہی دیتے ہوئے کہا کہ وہ صرف یونٹ میں موجود بچوں کے والدین نہیں بلکہ ہر طرح کے لوگوں کی تلاش کرتی تھی۔

اس نے کم بیمار بچوں کی دیکھ بھال میں 'بوریت' پائی

کہا جاتا ہے کہ لیٹبی کی ایک سینیئر ساتھی کے ساتھ بحث ہوئی جب اسے ایک ’باہر (دوسری) نرسری‘ میں کام کرنے کو کہا گیا، جہاں واپس گھر جانے والے زیر علاج بچوں کی تیاری کروائی جاتی تھی۔

عدالت کو بتایا گیا کہ یونٹ کو چار کمروں میں تقسیم کیا گیا تھا - نرسری ایک میں انتہائی نگہداشت، نرسری نمبر دو میں زیادہ توجہ والوں کی دیکھ بھال اور تین اور چار کمروں میں ’واپس لوٹنے والوں کی نرسری‘ تھی۔

سینیئر نرس کیتھرین پرسیول کالڈربینک نے ججوں کو بتایا کہ اگر اسے تین یا چار کمرے میں شفٹیں دی جاتیں تو لیٹبی ’ناخوش‘ ہوتی تھیں۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

اس نے کہا: ’اس نے واضح کیا کہ وہ باہر کی نرسریوں میں رکھے جانے پر ناخوش تھی۔

’اس نے کہا کہ یہ بورنگ تھا اور وہ بچوں کو دودھ پلانا نہیں چاہتی تھی۔ وہ انتہائی نگہداشت نرسری میں رہنا چاہتی تھی۔‘

مسز پرسیول-کالڈربینک، جنہوں نے 1988 میں بطور نرس کوالیفائی کیا، مزید کہا: ’اگر نرسری میں کچھ ہو رہا تھا تو آپ کو معلوم ہوگا کہ وہ وہاں آ جاتی تھیں، جیسا کہ ہم سب مدد کرنے کے لیے جاتے ہیں۔ وہ یقینی طور پر نرسری نمبر ایک میں مدد کرنے کے لیے پہنچ جاتی تھیں۔

’ہم لوسی کی ذہنی صحت کے لیے پریشان تھے کیونکہ اگر آپ کو ہر وقت اس دباؤ والی صورت حال میں رکھا جاتا ہے تو یہ پریشان کن، جذباتی اور بعض اوقات ایک شفٹ کے اختتام پر تھکا دینے والا کام بھی ہوسکتا ہے۔

’کبھی کبھی آپ کو اس ماحول سے نکل کر باہر کی نرسری میں رہنا پڑتا ہے۔‘

لیٹبی ’ان کی دیکھ بھال کے لیے مناسب نہیں تھی‘

لیٹبی نے اپنے گھر سے پولیس کو ملنے والے پوسٹ کے نوٹ پر "I AM EVIL I DID THIS" لکھا تھا، جو استغاثہ کے اعتراف جرم کے قریب ترین پہنچنے تک کا مرتبہ حاصل تھا۔

انہوں نے یہ بھی لکھا: ’میں زندہ رہنے کے لائق نہیں ہوں۔ میں نے انہیں جان بوجھ کر مارا کیونکہ میں ان کی دیکھ بھال کرنے کے لیے ٹھیک نہیں ہوں۔ میں کبھی شادی نہیں کروں گی اور نہ ہی بچے پیدا کروں گی۔ میں کبھی نہیں جان پاؤں گی کہ خاندان کا ہونا کیسا ہوتا ہے۔‘

لیٹبی نے عدالت کو بتایا کہ یہ نوٹس، جو اسے تحقیقات کے دوران کام سے معطل کیے جانے کے بعد لکھے گئے تھے، اس کی دیکھ بھال میں بچوں کی موت کے بعد اس کی ذہنی پریشانی کو ظاہر کرتے تھے۔

نرس نے کہا کہ ان جملوں میں بےگناہی کا احتجاج بھی تھا اور انہیں کبھی بھی عدالت میں اس کے مقصد کے ٹھوس ثبوت کے طور پر نہیں دیکھا گیا۔

© The Independent

زیادہ پڑھی جانے والی خواتین