جارحیت ایران کی خارجہ پالیسی بن چکی ہے: فائزہ ہاشمی

سابق ایرانی صدر ہاشمی رفسنجانی کی صاحبزادی فائزہ ہاشمی کہتی ہیں کہ کئی سالوں سے ہماری خارجہ پالیسی دیگر ممالک کے ساتھ بین الاقوامی قانون کے اصولوں کے مطابق پالیسی کی بجائے جارحانہ پالیسی بن چکی ہے۔

فائزہ ہاشمی حکومت کے سخت ناقدوں میں سے ایک ہیں (اے ایف پی)

سابق ایرانی صدر آیت اللہ اکبر ہاشمی رفسنجانی کی صاحبزادی فائزہ ہاشمی سابق رکنِ پارلیمان اور فعال سیاسی کارکن ہیں جو حکومت کو دوٹوک الفاظ میں تنقید کا نشانہ بناتی ہیں۔ وہ محمد خاتمی کی صدارت سے چند ماہ قبل تہران کے دوسرے منتخب رکن کی حیثیت سے اسلامی مشاورتی اسمبلی کے لیے منتخب ہوئی تھیں۔

انہوں نے حکومت پر تنقید کی وجہ سے کچھ وقت جیل میں بھی گزارا۔ ابھی حال ہی میں انہوں نے امریکی انتخابات کے بارے میں کہا تھا کہ ٹرمپ ایران کے لیے بہتر تھے۔

فائزہ ہاشمی کے آئندہ صدارتی انتخابات میں حصہ نہ لینے کے اعلان نے بھی ایک بہت بڑا تنازع کھڑا کر دیا ہے۔

انڈپینڈنٹ فارسی کی ایڈیٹر کامیلیا انتخابی فرد کو دیے گئے ایک انٹرویو میں فائزہ ہاشمی نے سعودی عرب کے ساتھ تعلقات، انتخابات میں حصہ نہ لینے کی وجوہات اور ایران کے حکومتی اصلاح پسندوں کے تعطل کے بارے میں بات کی۔ انہوں نے اسلامی جمہوریہ کی حکومت کے طرز عمل پر غیر ملکی دباؤ کے اثرات کے بارے میں بھی بات کی۔

سوال: ایران اور سعودی عرب کے مابین تنازعات کے حل نہ ہونے کا سب سے اہم مسئلہ علاقائی امور میں پاسدارانِ انقلاب کا کردار ہے۔ ہم جانتے ہیں کہ حالیہ برسوں میں ان تعلقات میں بہت سے اتار چڑھاؤ آئے ہیں۔ آپ کے مرحوم والد نے دونوں ممالک کے مابین تعلقات کو بہتر بنانے کے لیے بہت کوششیں کیں۔ لیکن ہم جانتے ہیں کہ اس طرز عمل کے حکومت میں شدید مخالف ہیں۔ لیکن کیا آپ کو لگتا ہے کہ ایران اور سعودی عرب کے مابین تعلقات قائم کرنے سے ایران کی معیشت پر مثبت اثر پڑ سکتا ہے، ایرانی حجاج کرام کے لیے حج کا راستہ کھل سکتا ہے، اور خطے میں امن و سلامتی ممکن بنائی جا سکتی ہے؟ کیا یہ ممکن ہے کہ آیت اللہ خامنہ ای سعودی عرب کے ساتھ تناؤ کو ختم کرنے کے لیے پاسدارانِ انقلاب کے طرز عمل کو تبدیل کریں؟ آپ کا سعودی عرب سے تعلقات کے بارے میں کیا خیال ہے؟

بات وزیرِ خارجہ جواد ظریف کے بیان تک جاتی ہے۔ در حقیقت ترجیح سفارت کاری کے بجائے میدانِ جنگ کا اصول بن گئی ہے۔ بدقسمتی سے اب کئی سالوں سے ہماری خارجہ پالیسی تعمیری، جامع باہمی تعامل اور دیگر ممالک کے ساتھ بین الاقوامی قانون کے اصولوں کے مطابق پالیسی کے بجائے ایک جارحانہ پالیسی بن چکی ہے۔ یقیناً میں سارا الزام پاسداران پر نہیں ڈال سکتی۔ سعودی عرب کے ساتھ ایران کے تعلقات خراب ہونے کے بارے میں میں سمجھتی ہوں کہ یہ خود حکومت کی کوتاہی تھی، اور اس مسئلے کے لیے جو کوشش کی جانی چاہیے تھی، خاص طور پر جب بابا (ہاشمی رفسنجانی) زندہ تھے، نہیں کی گئی۔ در حقیقت حکومت نے موقع ضائع کیا۔ خوش قسمتی سے اب بات چیت شروع ہو گئی ہے۔ مجھے نہیں معلوم کہ نتیجہ کیا نکلے گا، لیکن مجھے امید ہے کہ اگر بنیاد پرست خود ہی صدارت کا عہدہ سنبھال لیں گے، جو یقیناً وہ کریں گے، تو موجودہ حالات میں یہ مسئلہ حل ہو سکتا ہے۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

جناب تقی نے ایک بار کہا تھا کہ اگر امریکہ کے ساتھ مذاکرات ہونے ہیں تو یہ کام بنیاد پرست کریں گے۔ شاید اب وہ سعودی عرب کے ساتھ تعلقات کے معاملے کو حل کرنے کی طرف جائیں گے، کیونکہ یہ ضروری ہے۔ مشرق وسطیٰ میں اور دوسرے اسلامی اور عرب ممالک کے ساتھ تعلقات میں سعودی عرب اہم ملک ہے، اور یہ ان ممالک کے ساتھ ہمارے تعلقات کو بہتر بنانے میں بہت فیصلہ کن کردار ادا کرتا ہے۔ کیونکہ ہم صرف سعودی عرب کو بطور ملک نہیں دیکھ سکتے، سعودی عرب بہت سے عرب اور اسلامی ممالک کی نمائندگی کرتا ہے، اور سعودی عرب کے ساتھ ہمارے تعلقات ان تمام اسلامی ممالک کے ساتھ ہمارے تعلقات کو متاثر کرتے ہیں۔

ایران کے ساتھ سعودی عرب کے تعلقات کی اہمیت کے پیش نظر کیا یہ ممکن ہے کہ آیت اللہ خامنہ ای اسلامی جمہوریہ ایران کے علاقوں کے طرز عمل اور اس کی پالیسی پر نظر ثانی کریں جو دوطرفہ تعلقات کے بالکل منافی ہے؟

تجربے سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ جب ہم دباؤ میں ہوتے ہیں تو ہم عام طور پر اپنے طرز عمل کو کسی حد تک درست کرتے ہیں۔۔۔ مجھے یقین ہے کہ جہاں ایران پر بین الاقوامی دباؤ اور اس کے بڑھتے اثرات کے پیشِ نطر ہم نے پالیسی تبدیل کر دی ہے۔ لیکن مجھے زیادہ امید نہیں کہ اس بارے میں کوئی بڑی پیش رفت ہو گی۔ آپ کو قبول کرنا ہو گا کہ یہاں ایک غیر معمولی صورت حال ہے تبھی آپ پالیسی تبدیل کرنے کا فیصلہ کریں گے۔ جب آپ ان میں سے بیشتر عہدیداروں کی تقریریں دیکھیں تو وہ یوں بولتے ہیں جیسے یہاں کوئی ڈراؤنا خواب ہے، جیسے ہم طاقت، نشوونما، ترقی، ترقی، اخلاقیات، ثقافت اور ہر چیز کے عروج پر ہیں، اور دنیا گرتی جا رہی ہے، ترقی یافتہ ممالک کو بہت ساری پریشانیوں کا سامنا ہے۔ ہم سب سے اوپر ہیں اور وہ سب سے نیچے ہیں۔

۔۔۔ اگر ہم دس سال سے بھی کم عرصے میں شام میں ہلاکتوں کی تعداد پر نظر ڈالیں تو یہ گذشتہ صدی کے دوران فلسطینیوں کی سرزمین پر قبضے اور اسرائیلی جرائم کے نتیجے میں فلسطینیوں کی ہلاکتوں کی تعداد سے کہیں زیادہ ہے۔ اگر مسلمانوں کو قتل کرنا برا ہے تو پھر ہم اس جگہ پر کیسے ہو سکتے ہیں جہاں اتنے سارے مسلمان مارے گئے ہیں؟ یعنی ہمارا ایک طرح کا تضاد ہے۔ فلسطینی عوام کی حمایت کرنے یا فلسطین کی سرزمین پر غاصبانہ قبضے کی اس پالیسی کی مجھے سمجھ نہیں آتی، کیونکہ اگر ہم ظلم اور جرم کا مقابلہ کرنا چاہتے ہیں تو ہمیں خود اچھا کام کرنا چاہیے تاکہ ہمارے یہاں کوئی بات ہو۔ ہم خود خرابی کا شکار ہیں۔ ہم خود اسرائیل سے بھی بدتر ہیں۔ ہمارے خلاف الزامات ہیں، شامیوں کے قتل یا یمن میں کیا ہوا۔

اگر ہم سنی فلسطینیوں کے حقوق کا دفاع کرنا چاہتے ہیں تو، کیوں نہ پہلے ایران کے اندر سنیوں کے حقوق کی طرف توجہ دیں؟ انہیں اس ملک میں مساوی حقوق حاصل نہیں ہیں۔ مجھے سمجھ نہیں آ رہی ہے کہ ہمیں اس پالیسی پر کیوں عمل کرنا چاہیے، اور مجھے لگتا ہے کہ ہم فلسطین کے حالات روز بروز خراب کرتے جا رہے ہیں۔ فلسطین میں یاسر عرفات کوئی چھوٹی شخصیت نہیں تھی۔ وہ امن کے لیے گئے، لیکن ہم نے یاسر عرفات کو چھوڑ دیا اور راکھ سے بھی زیادہ گرم ہو گئے، اور اسلامی جہاد اور حماس کی حمایت سے ہم نے اپنی پالیسیاں تبدیل کر دیں۔ مجھے نہیں لگتا کہ یہ ایک ساتھ پڑھیں۔ میں یہ قبول نہیں کرتا کہ فلسطین اور اسرائیل سے متعلق ہماری جو پالیسیاں ہیں وہ جبر اور جرم سے لڑنے کے لیے دیانتدارانہ پالیسیاں ہیں۔

آپ نے کہا تھا کہ آپ انتخابات میں حصہ نہیں لیں گی اور بہت سے لوگ آپ کے ساتھ انتخابات میں حصہ نہیں لیں گے۔ کیا آپ کے خیال میں اسلامی جمہوریہ ایران کے لیے انتخابات میں حصہ نہ لینا اہم ہے؟ جناب کدخدائی نے کہا ہے کہ عوام کی وسیع پیمانے پر عدم موجودگی سے انتخابات کی ساکھ پر کوئی فرق نہیں پڑے گا۔ انتخابات میں رونما ہونے والے اس ممکنہ سقم کے بارے میں آپ کا کیا خیال ہے؟

میں سمجھتی ہوں کہ لوگوں کی عدم شرکت کا مطلب ایک ایسی آبادی کی غیر موجودگی ہے جو بنیاد پرستوں کو ووٹ نہیں دے گی اور یہی وہ چاہتے ہیں۔ کیونکہ اگر لوگوں کی اکثریت ووٹ دے گی تو وہ منتخب نہیں ہوں گے۔ یہ پچھلے ادوار کی طرح ہو گا جب روحانی جیتے تھے اور اس سے پہلے جب خاتمی جیتے تھے۔ لیکن مجھے لگتا ہے کہ یہ سچ ہے کہ کدخدائی نے کہا ہے کہ ان کے خیال میں انتخابات کی ساکھ متاثر نہیں ہو گی۔ کیونکہ انتخابات میں لوگوں کو انتخاب کرنا پڑتا ہے کہ وہ ووٹ ڈالیں یا نہیں۔ اگر ان کی بڑی تعداد ووٹ نہیں ڈالتی تب بھی قانونی مسئلہ نہیں ہوگا چاہے اگر کوئی امیدوار بہت کم فرق سے جیت جائے تب بھی۔ لیکن میری رائے میں اس طرح ’نظام کی قانونی حیثیت‘ پر سوال اٹھ جاتا ہے، کیونکہ جو انتخابات میں نہیں آتے وہ احتجاج کر رہے ہیں اور ووٹ نہ دے کر کچھ کہنا چاہتے ہیں۔ اگر ٹرن آؤٹ کم ہے تو اس کا مطلب یہ ہے کہ انتخابی حلقوں میں کوئی مسئلہ ہے، جن کا حل نہیں نکلا ہے، اور وہ بیلٹ باکس کو اتنا اہم نہیں سمجھتے کہ ووٹ ڈالیں اور اکثریت کو ووٹ دیں اور اکثریت کیا چاہتی ہے۔ اگر عوام کی رائے حکومت کے لیے اہم ہے تو ایک چیز کو بدلنا ہو گا۔ جو لوگ ووٹ نہیں دیتے، وہ تبدیلی کی تلاش میں ہیں، اور وہ ووٹ نہ ڈال کر کچھ دکھانا چاہتے ہیں۔ نظام کے ذمہ داران کو یہ جان لینا چاہیے کہ نظام میں بہت سی چیزوں کو زیربحث لایا جا سکتا ہے۔

آپ ایران میں اصلاحات کے عمل پر شدید تنقید کرتی ہیں۔ آپ نے پہلے بھی اس کے بارے میں بات کی ہے اور اب آپ نے واضح طور پر اس کا تذکرہ کیا ہے۔ آپ سمجھتی ہیں کہ اصلاح پسندوں نے اقتدار کی جدوجہد میں اصلاح پسندی کے طور طریقے ترک کر دیے ہیں۔ دوسری طرف ہم جانتے ہیں کہ بنیاد پرست ہمیشہ اقتدار میں اپنے اقتدار سے وابستہ ہونے کی وجہ سے سیاست میں شامل رہے ہیں، اور انہیں طاقت کی ضمانت دی گئی ہے۔ اصلاح پسندوں پر اب کی جانے والی تنقید اور عوامی قبولیت کے فقدان کے پیش نظر کیا آپ کو ایرانی سیاست، انتخابات، اور اقتدار میں کوئی سیاسی رکاوٹ نظر نہیں آتی؟ ایرانی عوام کا برسوں سے اقتدار میں کوئی نمائندہ نہیں ہے، اور جب بھی انہوں نے احتجاج کیا، ان پر سخت دباؤ ڈالا گیا۔ ایرانی عوام کے لیے اس سیاسی ناکہ بندی کا کیا انجام ہو گا؟

میں کچھ جگہوں پر آپ کی بات کی اصلاح کروں گی اور اپنی رائے کا اظہار کروں گی۔ سب سے پہلے تو یہ کہ اصلاح پسند طاقت سے اختلاف نہیں کرتے۔ کاش ان میں کوئی تنازع ہو۔ وہ سب سے مشکل حالات کے باوجود بھی بقا کی تلاش میں ہیں۔ یعنی وہ باقاعدگی سے پوائنٹس دیتے ہیں اور پوائنٹس حاصل کیے بغیر، ساتھ چلتے ہیں۔ وہ اقتدار کے بھوکے نہیں ہیں۔ وہ اسی حالت میں رہنا چاہتے ہیں۔

میں اس بات سے اتفاق نہیں کرتی کہ ایرانی عوام کو برسوں سے اقتدار میں نمائندگی حاصل نہیں ہے۔ کیوں کہ جب بھی الیکشن ہوتا ہے، سٹی کونسل میں یا پارلیمنٹ میں عوامی نمائندے اور ایوان صدر یا قیادت کے ماہرین چلے جاتے ہیں، لیکن پچھلے چار سالوں میں یہ بابا کے چلے جانے کے بعد اصلاح پسند راستے سے بھٹک گئے ہیں۔ اصلاحات کسی طرح اپنا راستہ کھو بیٹھی ہیں۔ پچھلے چار سالوں میں، قوم کے نمائندوں یا اصلاح پسند طبقے نے عوام سے بہت کم رابطہ رکھا ہے یا بالکل منقطع کر دیا ہے۔ بدقسمتی سے انہوں نے دوسرا راستہ اختیار کرنے کی کوشش کی ہے، یعنی لوگوں سے دوری اور حکومت سے قربت۔

اگرچہ ایسا لگتا ہے کہ معاشرے کا ایک بہت بڑا حصہ ان انتخابات میں حصہ نہیں لے گا، دوسری طرف کہا جاتا ہے کہ عوامی قبولیت کی کمی کے باوجود یہ انتخاب بہت اہم ہیں کیوں کہ آیت اللہ خامنہ ای کے جانشین کا مسئلہ ہے۔ میں اس پر آپ کی رائے جاننا چاہتی ہوں کہ کیا ولایت فقیہ ایران میں وراثت میں منتقل ہو سکتی ہے؟ کیا آیت اللہ خامنہ ای کا بیٹا اپنے والد کی جانشین ہو گا یا ان کی موت کے بعد وہ ملک کی پالیسیوں میں شامل ہو سکتا ہے؟

میں اس انتخابات کو دوسرے انتخابات سے زیادہ اہم نہیں دیکھ رہی۔ میری رائے میں یہ انتخابات دوسرے انتخابات کی طرح ہیں اور میری رائے میں، آیت اللہ خامنہ ای یا خامنہ ای کے جانشینی کا اس الیکشن سے کوئی تعلق نہیں ہے، کیونکہ قیادت کا ایک راستہ ہے اور صدارت کا دوسرا راستہ ہے، اور میں نہیں سمجھتی کہ ان کے درمیان کوئی تعلق ہے۔ ولایت فقیہ وراثت میں ملنا چاہیے یا نہیں، اس کی پیش گوئی نہیں کی جا سکتی، اور میں نہیں جانتی۔ میں نے کہیں سے سنا ہے کہ ایک تین رکنی کمیٹی اس بارے میں فیصلہ کرے گی۔

آیت اللہ خامنہ ای کے بعد کیا اقتدار قیادت میں مرکوز رہے گا؟ کیا یہ اس طرح کام کرتا رہتا ہے؟ یہ دیکھتے ہوئے کہ آپ ایران میں ہیں اور آپ نے ساری زندگی سیاست میں کام کیا ہے، آپ کو اسلامی جمہوریہ ایران کا مستقبل کس طرح نظر آتا ہے، جس کی سربراہی رہبرِ اعلیٰ کرتے ہیں؟

قدرتی طور پر ہاں، کیونکہ ہمارے آئین میں رہبرِ اعلیٰ کا ادارہ موجود ہے، اور جب تک آئین نہیں بدلا جاتا، فطری طور پر وہی نظام جاری رہے گا۔ انقلاب کے 10 سال بعد 1989 میں ہونے والی اس ترمیم کے بعد آئین میں تبدیلی کرنا بہت مشکل ہو گیا ہے۔ یعنی ہر چیز کا انحصار رہبر کی رائے پر ہے۔ انہیں اتفاق کرنا ہو گا۔ وہ کمیٹی مقرر کرتے ہیں۔ انہیں معاملات کی نشاندہی کرنا ہو گی۔ کمیٹی اس کی جانچ پڑتال کے بعد کیا تبدیلیاں کرتی ہے، انہیں دوبارہ منظوری دینی ہو گی اور پھر اسے ریفرنڈم میں رکھنا ہو گا۔ اس بات کا کوئی ثبوت نہیں ہے کہ آئندہ بھی رہبرِ اعلیٰ کا ادارہ جاری نہیں رہے گا۔ چاہے یہ نظام کام جاری رہے یا نہ رہے، مجھے لگتا ہے کہ یہ کام کر سکتا ہے۔ کیونکہ ایران دولت سے بھرا ہوا ہے اور اس کے دروازوں اور دیواروں سے دولت نکل رہی ہے، اور جب تک دولت ہے یہ نظام جاری رہ سکتا ہے۔

مالی اور مالیاتی وسائل کے بارے میں، آپ نے کہا کہ ملک میں بہت ساری رقم ہے، لیکن ہم جانتے ہیں کہ اس دولت کو کس قدر غیر منصفانہ طور پر تقسیم کیا گیا ہے۔ اس کی ایک وجہ یہ ہے کہ وسیع پیمانے پر مالی بدعنوانی اور پاسدارانِ انقلاب کا کردار، جو ملک کے تمام معاشی اداروں میں شامل ہے، اور ہم جانتے ہیں کہ یہ موجودگی نہ صرف معاشی ہے بلکہ سیاسی، ثقافتی اور دفاعی بھی ہے۔ پاسدارانِ انقلاب کے بارے میں تھوڑی بات کریں۔ آپ ایران کے مستقبل کے لیے ملک کے تمام اداروں میں شامل ایسی مسلح افواج کے وجود کو کس قدر خطرناک سمجھتی ہیں؟

اس بحث سے قبل میں یہ کہوں گی کہ ہمارا سب سے اہم مسئلہ بد انتظامی ہے۔ میرٹ کی پامالی اور اشرافیہ کی گردش نہ ہونا، اور لوگوں کے پاس مختلف راستے نہ ہونا۔۔۔ ہم نے ماہرین کو ہٹا دیا ہے۔ ہم نے کسی مینیجر کو تربیت نہیں دی اور ایران میں اس وقت سب سے بڑا مسئلہ بدانتظامی کا ہے۔

جہاں رقم خرچ کی جا رہی ہے اور جس پر خرچ کی جا رہی ہے اس کے مابین کوئی توازن موجود نہیں ہے، میری رائے میں اس کی وجہ ایک بار پھر وہی بدانتظامی ہے۔ ہمارے پاس اب بہت کم اچھے مینیجر موجود ہیں۔ ہمارے ہنر مند، ماہر اور ماہر مینیجر ایک استثنا ہیں۔ آپ نے پاسدارانِ انقلاب کے بارے میں بات کی ہے۔ بدقسمتی سے، اب ہم تقریباً یہ کہہ سکتے ہیں کہ سب کچھ پاسدارانِ انقلاب کی کی طرف واپس جاتا ہے، اور وہی معیشت، معاشرتی امور، سیاسی معاملات، عدلیہ، سیاستدانوں کے ساتھ معاملات اور ہر مسئلے میں پائے جاتے ہیں۔ یہ آئین کے خلاف اور ان سارے نظاموں کے خلاف ہے، جو ہونا چاہیے تھا اور اب نہیں ہے۔ در حقیقت، ان پریشانیوں اور بدانتظامی کی ایک وجہ پاسدارانِ انقلاب کی طرف سے ان معاملات میں مداخلت کرنا ہے جو معاملات کو اس کے اصل اور حقیقی چینل میں نہیں جانے دیتے۔

زیادہ پڑھی جانے والی ایشیا