’ایک دہائی تک دھمکیاں سنیں‘: ’سابقہ شوہر کو موردالزام ٹھہرائیں‘

مریم نواز اور جمائما گولڈ سمتھ ٹوئٹر پہ آمنے سامنے، وزیر اعظم  نے مریم صفدر کے بیٹے کو ایک جلسے میں تنقید کا نشانہ بنایا تو مریم نواز نے اس کا جواب  بھی ایک  جلسے میں ہی دیا اور عمران خان کے بیٹوں پر تنقید کی۔  

مریم اور جمائما کی ’ٹوئٹر وار‘ میں سوشل میڈیا صارفین بھی کود پڑے (تصاویر: اے ایف پی)

وزیراعظم عمران خان کے جنید صفدر کے متعلق دیے گئے حالیہ بیان سے شروع ہونے والی لفظی تکرار  سوشل میڈیا پر بھی پہنچ گئی۔  

وزیر اعظم  نے مریم صفدر کے بیٹے جنید صفدر کو ایک جلسے کے دوران  تنقید کا نشانہ بنایا تو مریم نواز  نے اس کا جواب  بھی ایک  جلسے میں ہی دیا اور عمران خان کے بیٹوں قاسم اور سلمان پر تنقید کی۔  

مریم نواز نے  پاکستان کے زیر انتظام کشمیر میں ایک جلسے سے خطاب کرتے ہوئے کہا  ’وہ (جنید صفدر) تو آج وہاں کی پولو ٹیم کا کپتان بن کر پاکستان کی عزت میں اضافہ کر رہا ہے۔ وہ (عمران خان) کہتا ہے کہ نواسہ باہر جا کر پولو کھیل رہا ہے، وہ بچوں کو بھی نہیں بخشتا۔۔۔ وہ کہتا ہے  اس (جنید)  کے پاس پولو کے پیسے کہاں سے آئے ہیں۔‘ 

’میں بچوں تک نہیں جانا چاہتی تھی لیکن جیسی بات کرو گے منہ توڑ جواب ملے گا اب۔۔۔ وہ (جنید صفدر) نواز شریف کا نواسہ ہے، وہ گولڈ سمتھ کا نواسہ نہیں ہے۔وہ یہودیوں کی گود میں نہیں پل رہا۔‘  

مریم نواز کے اس بیان پر  وزیر اعظم عمران خان کی اہلیہ جمائما گولڈ سمتھ نے ٹوئٹر پر ردعمل دیا اور کہا کہ ’مریم نواز نے اعلان کیا ہے کہ میرے بچے یہودیوں کی گود میں پرورش پا رہے ہیں۔  ایک دہائی تک  سیاستدانوں اور میڈیا کی جانب سےالزامات برداشت کرنے اور  ہفتہ وار قتل کی دھمکیوں اور گھر کے باہر احتجاج کے بعد میں نے 2004 میں پاکستان چھوڑ دیا تھا۔ مگر اب بھی یہ سلسلہ جاری ہے۔‘ 

اس ٹویٹ پر ردعمل دیتے ہوئے مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز نے تحریر کیا:  ’ مجھے آپ کی اور آ پ کے بیٹوں کی ذاتی زندگیوں  میں کوئی دلچسپی نہیں ہے کیونکہ میرے پاس  کرنے اور کہنے کو اور بہت کچھ ہے۔ ‘ 

انہوں نے مزید تحریر کیا کہ ’ اگر آپ کے سابق شوہر دوسروں کے خاندانوں کو بلاوجہ اپنی گفتگو میں لائیں گے تو دوسروں کے پاس بھی کہنے کواس سے بدتر موجود ہے۔ آپ صرف اپنے شوہر کو ہی موردِ الزام ٹھہرا سکتی ہیں۔‘  

 اتوار کے  روز  عمران  خان نے پاکستان کے زیر انتظام کشمیر میں ایک جلسے سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ ’ کمزور جیلوں میں جائے اور طاقتور این آر او لے  ، باہر جا کر بیٹھ جائے اور اپنے پوتے کا پولو میچ دیکھے، پوتا جو برطانیہ میں پولو میچ کھیل رہا ہے، میرے سے پوچھیے۔۔۔‘ 

’ آپ کے کشمیر سے کتنے لوگ باہر رہتے ہیں، میں آپ کے کتنے رشتہ داروں سے لندن اور مانچسٹر میں ملا ہوں، کبھی اُن سے پوچھیں کہ وہاں کس طرح کا انسان پولو کھیل سکتا ہے تو وہ آپ کو بتائیں گے کہ یہ بادشاہوں کا کھیل ہے۔ یہ عام آدمی نہیں کھیل سکتا۔‘ 

وزیر اعظم عمران خان کا مزید کہنا تھا :   ’وہاں (برطانیہ میں) گھوڑا رکھنے اور پولو کھیلنے کے لیے بڑا پیسہ چاہیے۔ تو یہ بتائیں کہ پوتا جی کے پاس اتنا پیسہ کدھر سے آیا؟  یہ آپ کا پیسہ ہے، یہ یہاں سے باہر گیا ہے۔‘ 

مریم اور جمائما کی ’ٹوئٹر وار‘ میں سوشل میڈیا صارفین بھی کود پڑے۔ کوئی جمائما کا  ساتھ دیتا نظر آیا تو کسی نے مریم نواز کے موقف کی تائید کی۔  

ٹوئٹر صارف عمر نے تحریر کیا کہ ’ عمران نے بالکل سچ کہا 1500  ریال پہ نوکر کا بیٹا بادشاہوں والا کھیل کیسے کھیل رہا؟ 

شاہزر نامی  ٹوئٹر صارف نے لکھا: ’غلطی عمران خان کی ہے، دو روز قبل انہوں نے ہی حزب اختلاف کے نمائندوں کے بچوں کا ذکر اپنی تقریر میں کیا تھا۔ 

محمد فیصل نامی ٹوئٹر صارف  کا کہنا تھا کہ ’مریم نواز کی جانب سے جمائما کو پاکستان کی سیاست میں گھسیٹنا  ٹھیک نہیں ہے۔‘  

ٹوئٹر صارف سمی عباسی نے  تحریر کیا : ’مریم نواز نے بہترین جواب دیا،  اپنے سابقہ شوہر کو منع کریں کہ وہ کسی اور کی اولاد کو سیاست میں مت گھسیٹیں اگر اپنی اولاد کے لیے یہ بولنے کا حق رکھتی ہیں تو آپ کو بھی اُتنا ہی حق حاصل ہے۔‘ 

زیادہ پڑھی جانے والی سوشل