کلاسیکی میوزک بے سُرا گانے پر بنگلہ دیش میں گلوکار گرفتار

اپنے منفرد سٹائل اور حالیہ گرفتاری کے بعد عالم تقریباً 20 لاکھ فیس بک فالوورز اور یوٹیوب پر تقریباً 1.5 ملین سبسکرائبرز رکھتے ہیں۔

تین اگست 2022 کی اس تصویر میں بنگلہ دیشی یو ٹیوبر اور گلوکار ’ہیرو‘ عالم انٹرویو دے رہے ہیں۔ (فوٹو اے ایف پی)

ایک بے سرے بنگلہ دیشی گلوکار کو پولیس نے آج صبح گرفتار کر لیا اور کہا کہ وہ ’کلاسیکی گانوں کی تکلیف دہ پیشکشیں بند کر دیں‘ ان کی وجہ سے سوشل میڈیا پر ہنگامہ برپا ہو چکا ہے۔

مذکورہ گلوکار ’ہیرو عالم‘ کے نام سے جانے جاتے ہیں اور انٹرنیٹ پر ان کی بڑی تعداد میں فالوونگ ہے۔

اپنے منفرد سٹائل اور حالیہ گرفتاری کے بعد عالم تقریباً 20 لاکھ فیس بک فالوورز اور یوٹیوب پر تقریباً 1.5 ملین سبسکرائبرز رکھتے ہیں۔

ان کے گانوں میں سے ایک ’عربی گانا‘ جس میں وہ روایتی عرب لباس میں ریت کے ٹیلے پر اونٹوں کے ساتھ پس منظر میں نظر آتے ہیں، 17 ملین ویوز حاصل کر چکا ہے۔

لیکن وہ ناقدین کے طعنوں کا نشان بھی بنے ہیں، خاص طور پر نوبل انعام یافتہ رابندر ناتھ ٹیگور اور بنگلہ دیش کے قومی شاعر قاضی نذر الاسلام کے کلاسک گانوں کے ورژن کی وجہ سے۔

بدھ کے روز عالم نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ پولیس نے انہیں گزشتہ ہفتے ’ذہنی تشدد‘ کا نشانہ بنایا اور انہیں کلاسیکی گانے بجانے سے روکا۔ اور کہا کہ وہ گلوکار ہونے کے لیے بہت بے سُرے ہیں اور انہیں معافی نامے پر دستخط کرنا ہو گا۔

’پولیس نے مجھے صبح چھ بجے اٹھایا اور آٹھ گھنٹوں تک وہاں رکھا۔ انہوں نے مجھ سے پوچھا کہ میں رابندر ناتھ ٹیگور اور نذرالاسلام کے گانے کیوں گاتا ہوں؟‘

ڈھاکہ کے چیف ڈیٹیکٹیو ہارون الرشید نے صحافیوں کو بتایا کہ عالم نے اپنی ویڈیوز میں بغیر اجازت پولیس کی وردی پہننے پر بھی معذرت کی ہے۔

ہارون رشید نے کہا کہ ہمیں ان کے خلاف بہت سی شکایات موصول ہوئی ہیں۔ ’انہوں نے مکمل طور پر روایتی انداز کو بدل دیا ہے۔ انہوں نے ہمیں یقین دلایا کہ وہ اب یہ سب کچھ دوبارہ نہیں کریں گے۔‘

ڈھاکہ کے ڈپٹی پولیس کمشنر فاروق حسین نے 37 سالہ عالم کے اس دعوے کو مسترد کر دیا کہ ان پر اپنا نام تبدیل کرنے کے لیے دباؤ ڈالا گیا تھا۔

انہوں نے اے ایف پی کو بتایا ’وہ یہ تبصرے صرف سوشل میڈیا پر وائرل ہونے کے لیے کر رہے ہیں۔‘

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

رہا ہونے کے بعد عالم نے ایک نئی ویڈیو جاری کی جس میں خود کو جیل کے لباس میں سلاخوں کے پیچھے دکھایا ہے اور غمزدہ انداز میں وہ کہتے ہیں کہ انہیں پھانسی ہونے والی ہے۔

عالم کے ساتھ کیے گئے اس سلوک نے سوشل میڈیا پر غم و غصے کو جنم دیا، مبصرین اور کارکنوں نے اسے انفرادی حقوق پر حملہ قرار دیا ہے۔

عالم کے مطابق انہوں نے متعدد فلموں میں اداکاری کی ہے اور 2018 میں بنگلہ دیش کے پارلیمانی انتخابات میں ایک آزاد امیدوار کے طور پر حصہ لے کر انہوں نے 638 ووٹ بھی حاصل کیے تھے۔

عالم کا کہنا تھا کہ مشہور ہونے کے بعد انہوں نے اپنے لیے لفظ ہیرو کا استعمال شروع کیا۔

انہوں نے کہا کہ ’مجھے ایسا لگا جیسے میں واقعی ہیرو ہوں۔ اس لیے میں نے ہیرو عالم اپنا نام رکھا۔‘

’اس وقت ایسا لگتا ہے کہ آپ بنگلہ دیش میں آزادی کے ساتھ گانا بھی نہیں گا سکتے۔‘

زیادہ پڑھی جانے والی موسیقی