کیا پاکستان کرنسی بحران کا شکار ہو چکا ہے؟

معاشی ماہرین کے مطابق بیرون ملک پاکستانیوں اور سرمایہ کاروں کو موجودہ وفاقی حکومت پر اعتماد نہیں ہے جس کی وجہ سے ترسیلاتِ زر کم ہوئی ہیں۔

پاکستان کو تقریباً 39 ارب ڈالرز کے خسارے کا سامنا ہے (اے ایف پی)

رضوان احمد کراچی کی مشہور کاروباری شخصیت ہیں۔ موجودہ معاشی حالات میں ان کا کاروبار بھی بری طرح متاثر ہوا ہے، جب سے انہوں نے پاکستانی کرنسی کے اگلے 12 مہینے میں کریش ہونے کے امکانات کی خبر سنی ہے تو وہ اپنا کاروبار بند کر کے کینیڈا منتقل ہونے کا سوچ رہے ہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ کنٹینر کلیئر نہیں ہو رہے ہیں اور مہنگی بجلی کی وجہ سے برآمدات کے آرڈرز نہیں مل رہے۔ پاکستان کا معاشی بحران مستقل ہوتا جا رہا ہے، جس کا مطلب یہ ہے کہ فوری طور پر بہتری کی گنجائش نہیں ہے۔ اس صورت حال میں اپنا مزید نقصان نہیں کرنا چاہتا۔ میں اس وقت پاکستان میں سرمایہ واپس لاؤں گا جب پاکستان کے پاس ڈالرز کی کمی نہیں ہو گی۔

کرنسی بحران اور اس کے اثرات کے حوالے سے ماہر معیشت ڈاکٹر فرخ سلیم نے انڈپینڈنٹ اردو کو بتایا کہ ’جدید دور میں کرنسی بحران کو تمام مالی مسائل کی ماں کہا جاتا ہے۔ کرنسی بحران کا مطلب یہ ہوتا ہے کہ ملک کے پاس بیرونی ادائیگیاں کرنے کے لیے انٹرنیشنل کرنسی خصوصی طور پر ڈالرز موجود نہیں ہیں۔‘

انہوں نے کہا کہ ’پاکستان پچھلے کئی سالوں سے بیلنس آف پیمنٹ خسارے کا شکار ہے، جسے پورا کرنے کے لیے پاکستان اب تک 135 ارب ڈالرز قرض لے چکا ہے۔ اسے پورا کرنے کے لیے پاکستان 23 مرتبہ آئی ایم ایف کے پاس جا چکا ہے اور آج بھی آئی ایم ایف کے سہارے کھڑا رہنے کی کوشش کر رہا ہے۔

’جاپانی ادارے نومارا کے مطابق پاکستانی کرنسی اگلے 12 مہینوں میں کریش کر سکتی ہے۔ اس کے مطابق سو سے زیادہ پوائنٹس کا مطلب یہ ہے کہ ملک کو 64 فیصد تک کرنسی بحران کا سامنا ہو سکتا ہے۔ پاکستان کے پوائنٹس 120 ہیں، جو کہ خطرناک حد تک زیادہ ہیں۔ ماضی میں امداد کی مد میں اربوں ڈالرز آنا معمول کی بات تھی لیکن اب یہ سہولتیں پاکستان کے لیے ختم ہوچکی ہے، جو کرنسی بحران پیدا ہونے کی بڑی وجہ ہے۔‘

فرخ سلیم نے مزید کہا کہ ’کرنسی کے بحران سے مہنگائی مزید بڑھ سکتی ہے۔ پیٹرولیم مصنوعات سمیت ضروریات زندگی کی اشیا کی قلت پیدا ہو سکتی ہے لیکن کرنسی کے بحران کو ڈیفالٹ سے جوڑنا مناسب نہیں ہے۔ آئی ایم ایف، ورلڈ بینک اور ایشیائی ترقیاتی بینکوں نے کبھی ملکوں کو ڈیفالٹ ڈکلیئر نہیں کیا ہے بلکہ قرض کی مدت بڑھا دی جاتی ہے۔ کمرشل بینک اور بانڈز کی ادائیگی نہ کرنے سے ملک ڈیفالٹ ہوتا ہے۔

’دسمبر میں ایک ارب ڈالر بانڈز کی ادائیگی ہو رہی ہے، اس کے بعد 2024 میں بانڈز کی ادائیگی ہونی ہے۔ لہذا اگلے 16 مہینے تک پاکستان ڈیفالٹ نہیں ہو گا، لیکن کرنسی کا بحران ختم کرنا ضروری ہے جس کے لیے سرکاری اداروں کی نجکاری بہتر حل ہے۔ ایک اندازے کے مطابق 190 سرکاری ادارے ہیں جن کی نجکاری کر کے ملک میں ڈالرز آ سکتے ہیں اور قرضوں کا 30 فیصد بوجھ کم کیا جا سکتا ہے۔‘

اس معاملے پر سابق وزیر خزانہ حفیظ پاشا صاحب نے انڈپینڈنٹ اردو کو بتایا کہ ’کرنسی کا بحران شدت اختیار کر چکا ہے، اگر فوراً قابو نہ پایا گیا تو چند مہینوں میں نہیں بلکہ چند ہفتوں میں پاکستانی کرنسی کریش کر سکتی ہے۔ صرف بانڈز کی ادائیگی کر دینا کافی نہیں۔ تقریباً دو سے اڑھائی ارب ڈالرز کم از کم ہر ماہ چاہیے ہوں گے۔ بانڈز ادائیگی کے بعد ڈالر ذخائر تقریباً سات ارب ڈالرز رہ جائیں گے جن میں سے تین ارب ڈالرز سعودی عرب کے ہیں، جنہیں استعمال نہیں کیا جا سکتا۔ آئی ایم ایف مارچ سے پہلے قرض نہیں دے گی۔ سوال یہ ہے کہ ان تین مہینوں کے لیے ڈالرز کہاں سے آئیں گے۔‘

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

اسی طرح سابق وزیرخزانہ ڈاکٹر سلیمان شاہ کہتے ہیں کہ ’پاکستان سے تقریباً 65 ارب ڈالرز درآمدات اور تقریباً 35 ارب ڈالرز قرض کی مد میں ملک سے باہر چلے جاتے ہیں۔ تقریباً 30 ارب ڈالرز کی بیرون ملک پاکستانیوں کی ترسیلات ہیں اور 31 ارب ڈالر برآمدات سے آتے ہیں، یعنی تقریباً 39 ارب ڈالرز کا خسارہ ہے جو کرنسی بحران کی بڑی وجہ ہے۔ موجودہ کرنسی بحران کے شدید ہونے کی سب سے بڑی وجہ سیاسی عدم استحکام ہے۔ فوری الیکشن کروا کر اس بحران کو کم کیا جا سکتا ہے کیونکہ بیرون ملک پاکستانیوں اور سرمایہ کاروں کو موجودہ وفاقی حکومت پر اعتماد نہیں ہے۔ سرکار نے ڈالرز کی قلت کے باعث ڈیفنس سے متعلقہ سامان کی درآمدات کی ادائیگی بھی روک دی ہے۔‘

اس معاملے پر کرنسی ایکسچینج ایسوسی ایشن آف پاکستان کے جنرل سیکرٹری ظفر پراچہ نے انڈپینڈنٹ اردو کو بتایا کہ ’انٹربینک ریٹ سے 30 روپے اوپر گرے مارکیٹ میں ڈالر مل رہا ہے۔ اس کا منفی اثر پاکستان کے ڈالر ذخائر پر پڑا ہے۔ ڈالرز بحران کی بڑی وجہ حکومت کی جانب سے کمپنیوں پر غیر ضروری دباؤ بھی ہے، جس کی وجہ سے لوگ ایکسچینج کمپنیوں کو ڈالر نہیں دے رہے اور گرے مارکیٹ میں بیچ رہے ہیں۔‘

سیالکوٹ چمبر آف کامرس کے سابق صدر میاں نعیم جاوید نے انڈپینڈنٹ اردو کو بتایا کہ ’ڈالر بحران سے کاروباری اورعام آدمی کی زندگی بھی بری طرح متاثر ہو رہی ہے۔ کرنسی بحران کا براہ راست تعلق مہنگائی سے ہوتا ہے۔ روپے کی بے قدری سے عام آدمی کی قوت خرید کم ہو رہی ہے اور کاروبار سکڑ رہا ہے۔ اگر کرنسی بحران کم کرنے کے لیے انٹربینک میں ڈالر 260 روپے تک بڑھا دیا گیا تو بزنس کمیونٹی کے مسائل مزید بڑھ جائیں گے۔‘

ماہرین اور سٹیک ہولڈرز کی رائے کے پیش نظر یہ کہنا زیادہ مناسب ہو گا کہ پاکستان ابھی تک مکمل طور پر کرنسی بحران کا شکار نہیں ہوا ہے۔ اگر آئی ایم ایف اور دیگر مالیاتی ادارے بیرونی ادائیگیاں کرنے کے لیے بروقت قرض دیتے رہیں تو صورت حال قابو میں رہ سکتی ہے، لیکن حالات کے پیش نظر یہ کہنا زیادہ مناسب ہو گا کہ کرنسی کا مکمل بحران آنے میں شاید زیادہ وقت نہیں ہے۔

زیادہ پڑھی جانے والی بلاگ