سپر کپ 2019: ایڈرین کا پنالٹی کا دفاع، لیورپول کی جیت

لیورپول کے مینیجر یورگن کلوپ کے لیے ٹرافیوں کی تعداد بھی بڑھتی جا رہی ہے۔

سپر کپ 2019 کی فاتح ٹیم لیورپول (اے ایف پی)

جیسے جیسے ان کے کھلاڑیوں کے فٹ بال کھیلتے منٹس بڑھتے جا رہے ہیں ویسے ہی لیورپول کے مینیجر یورگن کلوپ کے لیے ٹرافیوں کی تعداد بھی بڑھتی جا رہی ہے۔

یہ جرمن ان میں موخر الذکر کے بارے میں شاید ہمیشہ کے لیے فکر مند رہے گا۔ لیکن وہ ابھی تک اس فتح کے لمحات کو محسوس کر رہے ہیں جو سپر کپ 2019 کی صورت میں جمعرات کو استنبول میں حاصل ہوئی۔ اپنا پہلا میچ کھیلنے والے ایڈرین نے اپنے لیورپول کرئیر کا بہترین آغاز ہی اہم ترین پنالٹی پر گول روک کر کیا۔

وہ چیلیسی کے نوجوان ترین کھلاڑی ٹامی ابراہم تھے جنہوں نے یہ پنالٹی مس کر کے چیلسی کے مینیجر فرینک لیمپارڈ کی مشکلات میں اضافہ کر دیا لیکن وہ انہیں اپنی کارکردگی بہتر بنا کے آسانی سے تسلی دے سکتے ہیں۔ نہ صرف انہیں بلکہ متبادل کھلاڑی اور اپنی ٹیم دونوں کو۔

فرینک لیمپارڈ ایسے شخص نہیں ہیں کہ وہ سپر کپ کی ٹرافی کو کوئی خاص اہمیت دیں لیکن وہ اس کو اس میچ کے کچھ حصوں کو اہم طور پر ضرور دیکھیں گے۔

سب سے خاص بات یہ کہ چیلیسی کس طرح یورپی چیمپین کے طور پر رہی ہے اور پھر این گولو کنتے کا اپنے ساتھی کھلاڑیوں پر کیا اثر پڑا ہے۔ کرسچین پولیسک کا پہلا تاثر بھی کچھ ایسا ہی تھا۔

دوسری جانب غیر ضروری مسائل تھے جیسے کھلاڑی فابینو کا انتہائی سخت شیڈول میں کریمپس کا شکار ہونا، گول کیپر کا بھرپور مظاہرہ اور رابرٹ فرمینو اور سیڈیو مین کے درمیان موجود تعلقات۔

 انہیں پھر بھی مزید انتظار کرنا پڑا جب تک کہ پولیسیک چیلیسی کے لیے کھیلنے نہیں پہنچے۔

یہ کھیل کے چھتیسویں منٹ میں ہوا جب وہ پہلے تھوڑے بہت ہی کارآمد لگ رہے تھے لیکن پھر اچانک وہ کام کر گئے۔ لیورپول کے ہاف سے بال لے کر انہوں نے چار دفاع کھلاڑیوں کو پل بھر میں پیچھے چھوڑ دیا۔ ایک بہت بڑی جگہ موجود تھی خاص طور پر جوئل میٹپ کے ٹانگوں کے درمیان۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

پولیسیک نے انہی کے درمیان سے جگہ ڈھونڈی اور پھر اولیور گروڈ نے ایڈرین کے ساتھ یہی کیا۔ جس کے بعد پیڈرو نے پولیسک کے ایک اچھے شوٹ کو آف سائڈ قرار دے دیا۔ اس وقت تک چیلیسی کھیل کی اس رفتار سے مطمئن دکھائی دے رہا تھا۔

لیکن جب کھیل کی رفتار بدلی تو لیمپارڈ کی ٹیم کو اس تبدیلی کو سمجھنے میں تھوڑا وقت لگا۔

فرمینو کی شمولیت نے لیورپول کے مساویانہ گول کے لیے مشکلات کھڑی کر دیں۔ فرمینو کے پچ پر گزارے وقت کے دوران دفاعی کھلاڑیوں کو کچھ سمجھ نہیں آرہی تھی کہ وہ کیا کریں اور کس طرف جائیں اور ان سے بال کیسے لیں۔ اس کا یہی مطلب تھا کہ فرمینو کو آزادی تھی کہ وہ سیڈیو مین کا گول برابر کر دیں گے گو کہ انہوں نے یہ کافی آسانی سے کر لیا تھا۔

ایک ایسا موقع بھی آیا جب لگا کہ لیورپول بہت آسانی سے چیلیسی کو شکست دے دے گا اس لیے وہ اکثر کرٹ زوما اور انڈریس کرسٹینسین کے پیچھے ہی بھاگتے رہے۔ کیپا بھی کچھ خاص نہیں کر پا رہے تھے لیکن پچھترویں منٹ میں انہوں نے وین ڈیجک کی ایک قریبی پاس کو گول پوسٹ میں پہنچا دیا۔

ایکسٹر ٹائم میں تھکی ہوئی ٹانگوں کے باعث کھیل کے کھینچے جانے کا الزام کسی کو نہیں دیا جا سکتا۔ لیکن لیمپارڈ کی بیک لائن ایک تھیم ہی محسوس ہو رہی تھی اور پھر ایسا ہی کچھ فرمینو اور مین کے درمیان بھی تھا۔ یہاں کوئی حقیقی سمجھ بوجھ ہی محسوس ہوتی ہے۔ مین کے کچھ لمحات لیور پول کے شاندار جارحانہ کھیل کے بدولت تھے اور اسی دوران فرمینو نے بال واپس لے کر فارورڈ کو دیا جس نے اسے طوفانی انداز میں بار کے پار کر دیا۔

لیورپول کو یہ بات واضع نہیں تھی کیوں کہ پنالٹی بالکل صاف نہیں تھی۔ اس نے ایڈرین کے ڈیبو کو کچھ اور دھندلا دیا۔ اس گول کیپر کو ابراہم کے زوال کا باعث سمجھا جا رہا ہے۔ اور جورگینو نے ان کے سامنے سے بال باہر پھینک دیا۔

چیلیسی کا کوئی بھی کھلاڑی یہی کرتا سوائے ابراہم کے۔ ایڈرین فاتح کی طرح کھڑے تھے۔ لیورپول جیت چکا تھا۔

ایک اور ٹرافی لیکن ایک اور طویل رات بھی۔

© The Independent

زیادہ پڑھی جانے والی فٹ بال