اردو کے عظیم افسانہ نگار منٹو کی اکلوتی پنجابی تحریر

بہت کم لوگوں کو معلوم ہو گا کہ سعادت حسن منٹو نے پنجابی میں بھی ایک تحریر لکھی تھی جو حال ہی میں سامنے آئی ہے۔

سعادت حسن منٹو اپنی بیوی صفیہ کے ہمراہ (پبلک ڈومین)

’مینوں اینویں لگ دا اے جیویں میں وی اک کڑی آں جو اپنیاں ہانیاں نال بیٹھی چرخہ کت رئی اے ۔۔۔ اینہوں تسیں پنجابی پنڈاں دی فضا دا جادو کہہ لئو یا اینہوں کوئی ہور ناں دے دیو۔‘

’مجھے ایسے محسوس ہوتا ہے جیسے میں بھی ایک لڑکی ہوں جو اپنی ہم جولیوں کے سنگ بیٹھی چرخہ کات رہی ہے، اسے آپ پنجاب کے دیہاتوں کی پرکیف فضا کا جادو کہہ لیں یا پھر کوئی بھی نام دے دیں۔‘

یہ بات کم لوگوں کے علم میں ہو گی کہ اردو افسانے کی دنیا میں اور اپنی بے باک نگاری سے سماج میں بھونچال پیدا کر دینے والے منٹو نے پنجابی میں بھی لکھا تھا۔

آغاز میں درج الفاظ اردو زبان کے لیجنڈ منفرد افسانہ نگار سعادت حسن منٹو کی اکلوتی پنجابی تحریر سے لیے گئے ہیں، جسے وہ 50 کی دہائی میں اپنے جگری دوست، پنجابی کے نامور شاعر احمد راہی کا پہلا شعری مجموعہ ’ترنجن‘ شائع ہونے پر بطور خاص اس کے لیے وجود میں لائے تھے۔

اردو ادب کے اس عظیم کہانی نویس نے نہ اس سے پہلے پنجابی میں کچھ لکھا نہ تاریخ میں اس کے بعد پنجابی میں ان کی کوئی تحریر دریافت ہوئی۔ 108 برس قبل جنم لینے والے اردو کے اس عظیم فکشن رائٹر کی واحد پنجابی تحریر کا مکمل متن درج ذیل ہے۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

ترنجن دا ناں سن دیاں ای میرے دماغ وچ اک ایہو جہئی جگہ دا تصور ابھر آندا اے جہیڑی میں اج تیکر نئیں ویکھی، پر جدوں وی کوئی ترنجن دا ذکر کرے تے میں اک عجیب جہئی مسرت محسوس کرنا آں۔۔ مینوں اینویں لگ دا اے جیویں میں وی اک کڑی آں جو آپنیاں ہانیاں نال بیٹھی چرخہ کت رئی اے ۔۔۔ اینہوں تسیں پنجابی پنڈاں دی فضاء دا جادو کہہ لئو یا اینہوں کوئی ہور ناں دے دیو۔

میرے یار احمد راہی نے ایہہ کتاب چھپوائی اے جیدا ناں اوس نے ترنجن رکھیا اے۔ پنجابی شاعری دے مجموعے دا ایس توں ودیا ناں ہور کی ہو سکدا سی۔ ایس مجموعے وچ دمڑی دے سک توں لے کے لکھاں دے کاروبار دا ذکر اے۔ لونگ دے لشکارے توں لے کے اونہاں بجلیاں دی کہانیاں بیان کیتی گیاں نیں جیہڑیاں ہل واہندے جٹاں نوں ہل ڈک لین دی بجائے ہور زیادہ محنت کرنے تے اکساندیاں نیں۔

احمر راہی نے شاعر دی ہک وچ جنگلی کبوتراں دے آلہنے نئیں پائے اوس نیں اونہاں آلہنیاں دا ذکر کیتا اے، جینہاں وچ غریب وسدے نیں، ایہہ آلہنے خوبصورت تے گول مٹول، تے پھڑکن والے نئیں پر ایمان دی گل ایہہ کہ احمد راہی دی زبانوں اینہاں دا ذکر سن کے اک واری تے کالجہ ہل جاندا اے۔

 سعادت حسن منٹو

یہ بھی شاید ہی کسی کو معلوم ہو کہ منٹو کے علاوہ اردو کے ایک اور نامور افسانہ نگار کرشن چندر کی بھی پہلی اور آخری پنجابی تحریر احمد راہی مرحوم کے اسی پہلے شعری مجموعے کی مرہون منت ہے جو کرشن چندر ترنجن کی اشاعت پر اپنے اس عظیم دوست پنجابی شاعر کی سخنوری بارے اپنے محسوسات بیان کرنے کے لیے وجود میں لائے تھے، ان کے پنجابی تاثرات اس موقع پر روزنامہ ’امروز‘ میں بھی شائع ہوئے تھے۔

جنگ پبلشرز کے ایک سابق کارکن احسان بزمی نے خاصی محنت کرکے نہ صرف کتاب پر منٹو کی واحد پنجابی تحریر دریافت کی بلکہ ’امروز‘ کا وہ شمارہ بھی ڈھونڈ نکالا جس میں کرشن چندر کی یہ نادر اکلوتی پنجابی تحریر شائع ہوئی تھی۔

احسان بزمی بتاتے ہیں کہ احمد راہی اپنے عظیم افسانہ نگار دوست کی زندگی اور بعد میں بھی انہیں ’منٹو صاحب‘ کہہ کے یاد کرتے رہے۔

کرشن چندر اور ظہیر کاشمیری جیسے اپنے دوستوں سے احمد راہی کے عشق کا یہ عالم تھا کہ 90 کی دہائی میں سردیوں کی ایک صبح اخبارات میں میڈم نور جہاں کا منٹو کے خلاف ایک بیان چھپا دیکھا تو بستر سے اٹھ کر چادر اوڑھے سیدھے احسان بزمی کے پاس ان کے دفتر پہنچ گئے چائے منگوانے کا کہہ کے سگریٹ سلگایا اور ملکہ ترنم کو پنجابی میں ایک موٹی سی گالی دیتے ہوئے کہا، ’ویکھیا ای، اوس ٭٭٭ نے میرے یار دے خلاف بیان دتا ای؟‘

منٹو امرتسر میں پیدا ہوئے تھے اور اس اعتبار سے پنجابی ان کی پہلی زبان تھی۔ وہ لاہور میں اپنے ملنے والوں سے اسی زبان میں گفتگو کرتے تھے۔

زیادہ پڑھی جانے والی ادب