کیا طالبان اندرونی ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہیں؟

سابق افغان حکومت میں فریاب کے گورنر نقیب اللہ فائق کے مطابق: ’طالبان کے درمیان نسلی کشیدگی کی وجہ سے، گروپ کی قیادت ازبک کمانڈروں کی اپنی صفوں کو ختم کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔ ‘

تین دسمبر 2021 کی اس تصویر میں افغان طالبان کا ایک رکن کابل کی سڑک پر موجود ہے (فائل فوٹو: اے ایف پی)

14 جنوری کو دوپہر میں حقانی نیٹ ورک کے خودکش بمباروں پر مشتمل بدری فورسز نے صوبہ فاریاب کے علاقے میمنہ میں طالبان کے سینیئر کمانڈر مخدوم عالم ربانی کو گرفتار کر لیا۔

مخدوم عالم نے گذشتہ 20 سال سے فریاب میں سابق افغان حکومت اور غیر ملکی افواج کے خلاف جنگ میں اہم کردار ادا کیا ہے اور سابق افغان حکومت کے خاتمے کے بعد وہ سرپل کے نائب گورنر بن گئے۔

وہ کئی سالوں تک فاریاب میں طالبان کمانڈر ان چیف رہے اور گروپ کی شمالی شہروں خصوصاً فاریاب، جوزجان اور سر پل تک پیش قدمی میں اہم کردار ادا کیا۔

فریاب میں باخبر ذرائع نے انڈپینڈنٹ فارسی کو بتایا کہ مخدوم عالم کو پشتون طالبان کمانڈروں کے ساتھ کشیدگی کی وجہ سے حراست میں لیا گیا ہے۔ انہیں تقریباً ایک ماہ قبل صوبہ سرپل کے ڈپٹی گورنر کے عہدے سے ہٹا دیا گیا تھا اور اس دوران وہ میمنہ میں مقیم تھے۔

ذرائع کے مطابق، مخدوم عالم ربانی کی گرفتاری کے بعد، متعدد ازبک اور تاجک طالبان کمانڈر میمنہ شہر کے مرکز سے فرار ہوگئے اور ان کے زیر کمان جنگجوؤں کے ساتھ دیہات میں پناہ لی۔

سابق افغان حکومت میں فریاب کے گورنر نقیب اللہ فائق کے مطابق: ’طالبان کے درمیان نسلی کشیدگی کی وجہ سے، گروپ کی قیادت ازبک کمانڈروں کی اپنی صفوں کو ختم کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔‘

فریاب کے سابق گورنر کے مطابق مخدوم عالم ربانی کو طالبان کے نائب وزیر دفاع ملا فضل کے حکم پر گرفتار کیا گیا ہے۔ ڈاکٹر فائق نے مزید کہا کہ طالبان حکام نے مولوی صلاح الدین سمیت کئی دیگر غیر پشتون کمانڈروں کی گرفتاری کا حکم بھی دیا تھا۔

گذشتہ ایک ہفتے کے دوران، افغانستان کے مختلف شہروں میں کئی بم دھماکوں، اغوا اور قتل کے علاوہ، فاریاب، بامیان، بدخشاں، بلخ اور پنجشیر صوبوں میں چار گروپوں میں آپس میں جھڑپوں کی اطلاع ملی ہے، جو طالبان کے بڑھتے ہوئے اندرونی تناؤ کی نشاندہی کرتی ہے۔

اتوار 10 جنوری کو دو طالبان کمانڈروں، قاری انس اور مولوی بلال کے درمیان شمالی افغان صوبے فاریاب کے شہر بلچراغ میں جھڑپ ہوئی۔ جھڑپ کی وجہ فوری طور پر واضح نہیں ہوسکی تاہم مقامی ذرائع نے بتایا کہ جھڑپ کے نتیجے میں قاری انس اور چار طالبان جنگجو مارے گئے اور عام شہریوں سمیت 10 افراد زخمی ہوئے۔

جمعرات سات جنوری کو دو سینیئر طالبان کمانڈروں، صفا الدین اور صلاح الدین کے درمیان بدخشاں کے شہر میمی میں جھڑپ ہوئی، جس میں تین افراد ہلاک اور چار زخمی ہوئے۔ یہ جھڑپ اس وقت ہوئی جب طالبان کو ختم کرنے والے کمیشن نے صفا الدین کو گروپ چھوڑنے کا حکم دیا۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

منگل 12 جنوری کو صوبہ بلخ کے ضلع شولگرہ میں طالبان کے پولیس سربراہ ملا فتح اور کئی دیگر مقامی کمانڈروں کے درمیان جھڑپ میں دو افراد ہلاک اور تقریباً 10 دیگر زخمی ہوئے۔ جھڑپیں اس وقت شروع ہوئیں جب پشتون تبار کمانڈر ملا فتح نے ازبک علاقے پر قبضہ کرنے کی کوشش کی اور ازبک طالبان کمانڈروں نے اس کے خلاف ازبکوں کا دفاع کیا۔

13 جنوری بروز بدھ صوبہ بامیان کے قصبے سیغان سے اطلاع ملی کہ پولیس چیف مولوی اختر منصور اور ان کے نائب مولوی منصوری کی طالبان انٹیلی جنس فورسز کے ساتھ جھڑپ ہوئی۔

مقامی افغان میڈیا کے مطابق جھڑپ میں مولوی منصوری مارا گیا اور مولوی اختر منصور کو گرفتار کر لیا گیا۔ جھڑپ کی وجہ ابھی تک واضح نہیں ہے، لیکن مقامی رہائشیوں کے مطابق، مولوی اختر منصور اور مولوی منصوری پر ’زنا‘ کا الزام تھا۔ وہ ایک میٹنگ کے لیے پیدل جا رہے تھے کہ طالبان فورسز نے گھات لگا کر حملہ کیا۔

طالبان نے بم دھماکوں، دہشت گردانہ حملوں، اغوا یا خاص طور پر شورش کے بارے میں کوئی تفصیلات بتانے سے انکار کیا۔

ان جھڑپوں کے شروع ہونے سے معلوم ہوتا ہے کہ طالبان کی اندرونی کشیدگی اور خاص طور پر اس گروپ کے کمانڈروں کے درمیان نسلی کشیدگی کسی بھی دوسرے چیلنج سے زیادہ نمایاں ہے۔ تنازعہ کے فریقین عام طور پر دو مختلف نسلی گروہوں سے ہوتے ہیں، یا تو وہ محلوں میں اقتدار کی تقسیم پر لڑتے ہیں یا پھر افغان حکومت کے سابق اہلکاروں سے بچ جانے والی زمین اور رقم کی تقسیم جیسے معاملات پر۔

طالبان کے خلاف کمیشن کی ترجیح، جسے گروپ کا ایک پشتون رکن چلاتا ہے، بظاہر اس گروپ کو غیر پشتون عناصر، خاص طور پر ازبک کمانڈروں سے نجات دلانا ہے، جو شورش اور نافرمانی کے بارے میں فکر مند ہیں۔

طالبان کے خلاف امریکی اور اقوام متحدہ کی پابندیوں کے علاوہ، پچھلے پانچ مہینوں کے دوران گروپ کی کارروائیوں سے وسیع پیمانے پر عوامی بے چینی اور دوسرے ممالک کی جانب سے گروپ کی حکومت کو تسلیم نہ کرنا، گروپوں کے درمیان تناؤ طالبان کی حکومت کے جلد خاتمے کا باعث بن سکتا ہے۔

اب جبکہ کچھ طالبان رہنما علامتی حکومتی ڈھانچے میں ازبکوں کی موجودگی کو اپنی حکومت میں نسلی تنوع کی علامت کے طور پر دیکھتے ہیں، ازبک طالبان حکومت میں نظر انداز کیے جانے سے مطمئن نہیں ہیں اور طالبان کے تحت گذشتہ 20 سالوں میں دی گئی قربانیوں پر افسوس کا اظہار کرتے ہیں۔

طالبان ایک بااثر ازبک کمانڈر قاری صلاح الدین ایوبی کو گرفتار کرنے کی کوشش کر رہے ہیں، جنہوں نے ابھی تک کوئی عہدہ نہیں رکھا۔

قاری صلاح الدین بھی مطلوب ہے۔ وہ ان کمانڈروں میں سے ایک تھے جنہوں نے 15 اگست کو صدارتی محل پر قبضہ کیا اور افغانستان کے مفرور صدر کا تخت سنبھالا۔

طالبان کے یہ اقدامات افغانستان میں نسلی جنگ کی گرمی کو ہوا دے رہے ہیں اور اگلے موسم بہار تک افغانستان میں ایک اور تباہ کن جنگ کے امکانات کو بڑھا رہے ہیں، جو طالبان کی حکومت کے اندرونی خاتمے کا باعث بن سکتی ہے۔

© The Independent

زیادہ پڑھی جانے والی زاویہ