اوپن ہائیمر کی ہدایت کاری پر کرسٹوفر نولن کا پہلا گولڈن گلوبز ایوارڈ

اوپن ہائیمر کے کرسٹوفر نولن نے بہترین ہدایت کار کا اپنا پہلا گولڈن گلوب ایوارڈ جیتا۔ سٹیج پر انعام قبول کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ آخری بار وہ اس جگہ پر آنجہانی ہیتھ لیجر کے لیے تھے۔

سات جنوری 2024 کو کیلیفورنیا کے بیورلی ہلٹن ہوٹل میں 81 ویں سالانہ گولڈن گلوبز ایوارڈز کے دوران برطانوی ہدایت کار کرسٹوفر نولن اور ان کی اہلیہ برطانوی فلم پروڈیوسر ایما تھامس (روبن بیک/ اے ایف پی)

ہالی وڈ واپس آ گیا!‘ شاید یہ واحد الفاظ تھے جو بدقسمت گولڈن گلوبز کے میزبان جو کوئے نے کہے جنہیں ان کے سامعین نے واقعی سراہا۔ کیونکہ اگر اس سال کے ایوارڈز کی تقریب میں کچھ بھی ہوتا تو ٹینسل ٹاؤن(ہالی ووڈ) ایک بار پھر پوری طرح زوروں پر ہوتا۔

ایک مشکل آغاز کے بعد، گولڈن گلوبز وہاں موجود کرشماتی ستاروں کی بدولت ایک پرجوش، اچھا لگنے والا ایونٹ بننے میں کامیاب رہا۔

کیرن کلکن، علی وونگ، ایما سٹون، ایو ایڈبیری، بلی ایلش اور سیلین مرفی سمیت ایوارڈز جیتنے والوں نے آخری لمحات تک جو کوئے کے عجیب و غریب انداز میزبانی پر خاموش ردعمل کے بعد جوش و خروش سے تقاریر کیں۔

کچھ سمارٹ میچ میکنگ نے بھی پیش کی جانے والی جوڑی کا زیادہ سے زیادہ فائدہ اٹھایا، جن میں ڈوا لیپا اور الزبتھ بینکس، کیری رسل اور رے رومانو ، اینڈرا ڈے اور جون بیٹسٹ شامل ہیں ، اور باربی سٹار امریکہ فیریرا کے ساتھ کیون کوسٹنر کی نایاب اداکاری شامل ہے۔

ایوارڈز کی کئی تقریروں میں لیونارڈو ڈی کیپریو، مارٹن سکورسیسی، میٹ ڈیمن، بین ایفلک، ہیلن میرن، میریل سٹریپ، اوپرا، جینیفر لارنس، ریان گوسلنگ اور ہیریسن فورڈ جیسے ہیوی ویٹ اداکاروں نے وہاں میں موجود ’خوفناک‘ سٹار پاور کا حوالہ دیا۔

ٹوائلٹ جاتے ہوئے باہر میگا پروڈیوسر شان لیوی کو اپنے فون پر ٹیپ کرتے ہوئے دیکھا گیا۔ بہترین فلم میوزیکل یا کامیڈی کا ایوارڈ قبول کرتے ہوئے فلم ’پور تھنگز‘ کے ڈائریکٹر جرگوس لانتھیموس بروس سپرنگ سٹین کی پہلی لائن میں موجودگی سے حیران رہ گئے۔

صرف دو سال قبل تقریب کا بائیکاٹ کیا گیا تھا اور گولڈن گلوبز کی سرپرست تنظیم ہالی ووڈ فارن پریس ایسوسی ایشن سے متعلق اخلاقیات کے سکینڈل کی وجہ سے ٹی وی نشریات بند کردی گئی تھیں۔

تقریب کے انعقاد سے صرف دو ہفتے قبل میزبانی کا اعزاز حاصل کرنے والے کوئے سٹیج پر آتے ہی ان مشہور چہروں سے بے حد متاثر نظر آ رہے تھے، جو ان کی طرف دیکھ رہے تھے۔

انہوں نے سب سے بڑے ناموں پر ہکلاتے ہوئے ایک کمزور آغاز کیا اور تنازعات کے کسی بھی اشارے سے گریز کیا۔

وہ یقینی طور پر گلوبز کے سب سے بدنام میزبان، کامیڈین رکی گرویس کی طرح نہیں تھے، جنہوں نے آخری بار 2020 میں پانچویں مرتبہ تقریب کی میزبانی کی تھی۔

گھبراہٹ کا شکار نظر آنے والے کوئے نے یہ مزاحیہ بات بھی نہ لکھی کہ ایملڈا اسٹنٹن ملکہ الزبتھ دوم کے طور پر قدرے قائل تھیں کہ شہزادہ ہیری نے ان سے پیسے مانگے۔ انہیں پاپ آرٹسٹ ٹیلر سوئفٹ سے اس وقت توجہ ملی جب انہوں نے ان کے بوائے فرینڈ کنساس سٹی چیفس ٹریوس کیلس کے بارے میں ہلکا سا مذاق کیا۔

رابرٹ ڈاونی جونیئر نے اوپن ہائیمر کو بہترین مرد معاون اداکار موشن پکچر کا ایوارڈ دلوایا۔ انہوں نے ’فادر آف ایٹم بم‘ کے بارے میں ایک فلم کے ’شاہکار‘ کو خراج تحسین پیش کیا، سیلین مرفی اور ایملی بلنٹ سمیت ساتھی اداکاروں کی تعریف کی، اور گولڈن گلوب ووٹنگ اکیڈمی کی بحالی کا بھی مضحکہ خیز حوالہ دیا۔

اوپن ہائیمر کے کرسٹوفر نولن نے بہترین ہدایت کار کا اپنا پہلا گولڈن گلوب ایوارڈ جیتا۔ سٹیج پر انعام قبول کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ آخری بار وہ اس جگہ پر آنجہانی ہیتھ لیجر کے لیے تھے، جنہوں نے بیٹ مین کی فلم دی ڈارک نائٹ میں اپنی اداکاری کے لیے بہترین اداکار کا ایوارڈ جیتا تھا۔

نولن نے اپنی کاسٹ اور عملے کا نام چیک کرتے ہوئے کہا، ’ شکریہ ادا کرنے کے لیے بہت سارے لوگ ہیں۔ میں اسے صرف لوگوں کی طرف سے قبول کر سکتا ہوں۔ ہدایت کار کے طور پر ہم لوگوں کو اکٹھا کرتے ہیں اور ہم ان کے سامنے اپنی بہترین کارکردگی دکھانے کی کوشش کرتے ہیں۔‘

اس کے بعد آئرش اداکار کیلیان مرفی کی باری تھی، انہوں نے موشن پکچر ڈرامہ میں بہترین مرد اداکار کا ایوارڈ قبول کیا۔ اپنی اہلیہ آئرش آرٹسٹ یوون میک گنیز سے بوسہ لینے کے بعد اپنی ناک پر لگی لپ سٹک کا مذاق اڑاتے ہوئے مرفی نے اپنے ساتھی آئرش اداکاروں کی کامیابی کا اعتراف کیا۔

بہترین اداکار کے زمرے میں نامزد چھ میں سے تین آئرش تھے ، سالٹ برن سٹار بیری کیوغان اور آل آف اس آر سٹرینجر کے اداکار اینڈریو سکاٹ مرفی بھی شامل تھے۔

مرفی کا کہنا تھا، ’اگر آپ آئرش ہیں یا نہیں، آپ سب لیجنڈز ہیں، حیرت انگیز کام، میں آپ کو سلام کرتا ہوں۔‘

دی بیئر سٹار جیریمی ایلن وائٹ کی ساتھ کچھ ہمدردی بنتی تھی، جن کے میوزیکل یا کامیڈی سیریز میں بہترین اداکار کے ایوارڈ کو کیلون کلائن انڈرویئر کے لیے ان کی تشہیر نے گہنا دیا تھا۔

پریس روم میں صحافیوں نے ایک دوسرے سے اس بات پر جھگڑا کیا کہ وائٹ سے تفصیلی سوال کون پوچھے گا۔

کلکن نے مزید افراتفری پھیلانے کا موقع محسوس کرتے ہوئے بعد میں صحافیوں کی توجہ کا مرکز بن کر اپنے جانشینی کے ساتھی اداکار میتھیو میک فیڈن سے پوچھا، جو سب سے لمبے قد کے کاسٹ ممبر تھے۔

ایک بات واضح تھی کہ سخت مقابلے کے باوجود کوئی ہارنے والا نہیں تھا۔ جینیفر لارنس اور مارگوٹ روبی اس وقت بہت خوش نظر آئے جب ایما سٹون نے میوزیکل یا کامیڈی موشن پکچر میں بہترین اداکارہ کا ایوارڈ جیتا۔

روبی نے اس وقت بھی خوشی کا اظہار کیا جب سٹون کی فلم ’پور تھنگز‘ بہترین فلم میوزیکل یا کامیڈی کی سرپرائز فاتح بنی اور اس نے اپنی ہی بلاک بسٹر ہٹ فلم باربی: دی مووی کو پیچھے چھوڑ دیا۔ سٹون کو بتایا گیا کہ انہیں ایوارڈ ملنے پر ان کی دوست ٹیلر سوئفٹ نے بھی تعریف کی ہے۔

دریں اثنا جب لیلے گلیڈ سٹون نے سکورسیسیز کی فلم ’کلرز آف دی فلاور مون‘ میں اپنی اداکاری کے لیے موشن پکچر ڈراما میں بہترین خاتون اداکارہ کا پہلا گولڈن گلوب ایوارڈ جیتا تو وہاں موجود لوگوں نے اپنی نشستوں سے کھڑے ہو کر انہیں داد دی۔

انہوں نے اسے ’ تاریخی جیت‘ قرار دیا۔ گلیڈسٹون نے اپنی تقریر کا آغاز بلیک فٹ لیگویج میں کیا اور پھر انگریزی میں بولنا شروع کر دیا۔

اپنے قابل فخر ساتھی اداکار ڈی کیپریو کی موجودگی میں اس 37 سالہ اداکارہ نے کہا، ’یہ ہر چھوٹے شہری بچے کے لیے ہے، ہر چھوٹے مقامی بچے کے لیے ہے جس کا خواب ہوتا ہے، جو اپنی نمائندگی دیکھ رہے ہیں اور ہماری کہانیاں زبردست اتحادیوں اور زبردست بھروسے کے ساتھ ہمارے اپنے الفاظ میں ہم نے خود بتائیں۔‘

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

اپنی کاسٹ اور پروڈیوسر / اہلیہ ایما تھامس کے ساتھ، نولن نے اس رات کے سب سے بڑے انعامات میں سے ایک، بہترین فلم ، ڈرامہ کے لیے گولڈن گلوب جیتا۔

تھامس نے اپنی تقریر میں کہا، ’اس فلم کو بنانا ایک ناقابل یقین تجربہ تھا۔ مجھے یہاں بیٹھ کر ہر کسی کو اپنے کام کے بارے میں بات کرتے ہوئے سننا اچھا لگا اور جو بات واضح ہے وہ یہ ہے کہ ہم یہاں جو کچھ کرتے ہیں وہ ہے تعاون۔

’میں بہت خوش ہوں کہ کرس کو سراہا گیا ہے کیونکہ وہ جو کچھ کرتا ہے وہ کسی اور کے کام سے مختلف ہے۔‘

انہوں نے ’اس تمام ٹیلنٹ اور ان حیرت انگیز اداکاروں کے ساتھ ساتھ ہمارے تمام ایچ او ڈیز کو بھی سراہا۔‘

انہوں نے مزید کہا: کرس خود سب سے بہترین بن کر دوسروں کو بہترین بناتے ہیں۔‘

درحقیقت، 2024 کے گولڈن گلوبز (تقریبا) ہر ایک میں بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کرتے نظر آئے، جس کا اختتام شاندار انداز میں ہوا اور ایوارڈز کے سیزن کا آغاز دھوم دھام سے ہوا۔

© The Independent

زیادہ پڑھی جانے والی فلم