ایران سے تربیت یافتہ مشتبہ حملہ آور گرفتار: سعودی عرب

سعودی سکیورٹی فورسز نے ایک مکان اور ایک فارم میں چھپایا گیا بھاری تعداد میں اسلحہ اور گولہ بارود بھی برآمد کیا ہے۔

سعودی حکام کی جانب سے برآمد اسلحے کی تصاویر ھی جاری کی گئی ہیں (ایس پی اے)

سعودی عرب میں حکام کا کہنا ہے کہ انہوں نے مشتبہ شدت پسندوں پر مشتمل ایک سیل کو پکڑ لیا ہے جس کے ارکان نے ایران میں سپاہ پاسداران انقلاب سے عسکری تربیت حاصل کی تھی۔

سعودی عرب کی پریزیڈینسی برائے اسٹیٹ سکیورٹی نے سوموار کو اس سیل کے دس مشتبہ افراد کی گرفتاری کی اطلاع دی اور بتایا کہ ان سے اسلحہ اور گولہ بارود بھی برآمد ہوا ہے۔

سرکاری خبررساں ایجنسی (ایس پی اے) نے اسٹیٹ سکیورٹی ایجنسی کے حوالے سے بتایا ہے کہ ’دہشت گردوں کے اس سیل سے وابستہ تین افراد نے ایران میں عسکری تربیت حاصل کی تھی۔ انہوں نے دھماکہ خیز مواد تیار کرنے کے مختلف طریقے بھی سیکھے تھے جبکہ باقی مشتبہ افراد اس سیل سے مختلف کرداروں کی حیثیت سے وابستہ تھے۔‘

حکام گرفتار کیے گئے ان تمام دس افراد سے تحقیقات کر رہے ہیں تاہم ابھی ان کی شناخت ظاہر نہیں کی ہے۔

اس الزام کے بارے میں ابھی ایرانی حکام کا کوئی ردعمل سامنے نہیں آیا ہے۔

سکیورٹی ادارے کی تحقیقات سے سیل کے ارکان کی شناخت اور دو مقامات کا انکشاف ہو ہے جنہیں ہتھیار اور دھماکہ خیز مواد ذخیرہ کرنے کے لیے استعمال کیا جاتا تھا۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

سیکیورٹی ادارے کی کارروائی میں جن 10 ارکان کو گرفتار کیا گیا ان میں تین نے مبینہ طور پر ایران میں تربیت حاصل کی جب کہ باقی لوگ سیل کے مختلف کام کرتے تھے۔ 

قبضےمیں لیے گئے سامان میں نو دیسی ساختہ بم، 67 فیوز، 51 دھماکہ خیز سٹن گنیں، کپیسیٹرز، الیکٹرک ٹرانسفارمر، الیکٹرانک ٹرانزسٹرز کی بڑی تعداد  شامل ہے جو بم بنانے میں استعمال ہوتے ہیں۔

اس کے علاوہ  پانچ  کلو گرام سے زیادہ بارود، کیمیکلز کے 17 کین، 13 الیکٹریکل ٹرانسمیٹرز اور ریسیور، دو سرکٹ سوئچ، خفیہ طور پر آواز سننے کے چار جدید آلات، ایک ویلڈنگ مشین،  چار کلاشنکوف رائفلیں، ایک جی تھری رائفل، ایک سنائپر رائفل، دو پستول، ایک شکاری رائفل، 4620 لائیوایمونیشن، مشین گنوں اور پستول کے 18 میگزین، ہتھیاروں کے لیے گھر میں تیارکئے گئے چھ انچ کے  پلاسٹک کے ڈبے، ہتھیار صاف کرنے کا  سامان رکھنے کا بیگ، 14 چاقو، فوجی وردی، رات میں دیکھنے کے لیے استعمال ہونے والی دور بین، سنائپر رائفل پر لگنے والی دوربین، تین وائرلیس سیٹ، ایک لیپ ٹاپ، مقامات تک رہنمائی کے لیے استعمال ہونےوالے دو آلات، کیمرے سے آراستہ دھوپ کی عینک،میموری کارڈ اور ایک بیٹری، 11 موبائل فون، دو ٹیبلٹس، پانچ ایکسٹرنل میموری کارڈز اور چھ انٹرنل میموری کارڈز بھی  برآمد کئے گئے۔

حکام ان افراد سے تحقیقات کر رہے تاکہ سعودی عرب اور بیرون ملک ان کی سرگرمیوں اور ان سے وابستہ افراد کے بارے میں مزید معلومات حاصل کی جا سکیں۔

سعودی سرکاری ٹیلی ویژن الاخبریا اور بحرین کے اخبار اخبار الخلیج نے اتوار کو اطلاع دی تھی کہ وزارت داخلہ کی تحقیقات سے معلوم ہوا ہے کہ ’قاسم سلیمانی بریگیڈ‘ کے نام سے ایک نئے گروپ نے بحرین میں متعدد سرکاری اور حفاظتی ڈھانچے پر حملہ کرنے کا منصوبہ بنایا تھا۔

ان اطلاعات میں کوئی ٹائم فریم نہیں دیا گیا تھا۔

زیادہ پڑھی جانے والی دنیا