’میرے لیے مصورہ ہونا زیادہ اہم ہے ایرانی خاتون نہیں‘

سارہ اشرفی کا کہنا ہے کہ انہیں کیوں ہمیشہ ایک ایسی ’نوجوان ایرانی خاتون‘ کے طور پر متعارف کرایا جاتا ہے جو پینٹ بھی کرتی ہیں۔ انہیں کبھی صرف بطور پینٹر کیوں نہیں متعارف کروایا جاتا؟

ہارورڈ گالا میں  الزائمر پر  سارہ اشرفی  کے کام کی تعریف کی گئی۔

جب گالا آرٹ ہارورڈ میں پچھلے سال ایک فری لانس پینٹر سارہ اشرفی کو خصوصی طور پر منتخب کیا گیا تو وہ ایک مصروف سال کی توقع کر رہی تھیں۔ لیکن کچھ ہی ماہ بعد کرونا (کورونا) کی عالمی وبا کی وجہ سے تمام نمائشیں اور سفر منسوخ کر دیئے گئے۔

اشرفی کے لیے پیدا کردہ اس صورت حال نے اس کے لیے وسطی صوبے کے ایک گاؤں میں انہیں صرف پینٹنگ کرنے پر مجبور ہیں۔

ایموری یونیورسٹی اور ہارورڈ کے ساتھ ان کے پچھلے اشتراک عمل کا نتیجہ ایموری یونیورسٹی کے نفسیاتی امراض سے متعلق ایک نصابی کتاب کی مثال تھا۔ یونیورسٹی کے ساتھ ان کا دوسرا تعاون الزائیمر کے بارے میں مصوری تھی، جسے ہارورڈ یونیورسٹی اور امریکہ کے میساچوسٹس ہسپتال کے ذریعہ سالانہ گالا آرٹ تقریب میں سال کے بہترین کام کے طور پر منتخب کیا گیا تھا۔

مجھے گذشتہ دنوں سارہ اشرفی کے ساتھ گفتگو کرنے کا موقع ملا۔

جب میں آپ کی نمائشوں اور فنون لطیفہ کے بارے میں کوریج کو دیکھتی ہوں تو مجھے ایسا لگتا ہے کہ کہیں خلا ہے۔ مجھے آپ کے کام کے بارے میں تنقیدی اور ماہر نظریہ کی عدم موجودگی محسوس ہوئی۔ یہ ایسے ہی ہے جیسے ہر کوئی پینٹر کی بات کر رہا ہو، پینٹنگ کی نہیں؟

میرے لیے ہمیشہ یہ سوال رہا ہے کہ مجھے کیوں ایک ’نوجوان ایرانی خاتون‘ کے طور پر متعارف کرایا گیا ہے جو ’پینٹ‘ بھی کرتی ہے۔ مجھے کبھی بھی بطور پینٹر متعارف نہیں کرایا جاتا ہے۔ ایسا لگتا ہے کہ ایک ’نوجوان ایرانی عورت‘ ہونا مصوری سے زیادہ اہم ہو گئی ہے۔

میں ایک پینٹر ہوں۔ میں یہ نہیں کہہ رہی کہ میں ایک بہت ہی اچھی پینٹر ہوں لیکن مجھے لگتا ہے کہ ایک واحد صورت ہے جس میں پوری طرح فٹ ہو سکتی ہوں اور وہ پینٹنگ ہے۔

میں ایک عورت اور ماں ہوں، لیکن قومیت اور صنف کے علاوہ میں ایک پینٹر بھی ہوں۔ ایک پینٹر جو دن میں بارہ گھنٹے کام کرتی ہے!

میں پینٹ کرتی ہوں کیونکہ مجھے یہ پسند ہے۔ اگر میں پینٹ نہیں کرتی تو میں ٹھیک نہیں محسوس کرتی ہوں اور کہ کسی بھی صورت حال نے میرے کام کو محدود نہیں کیا ہے۔ میں کہیں بھی کام کرسکتی ہوں؛ یہاں تک کہ بدترین حالات میں یہاں تک کہ صحرا کے وسط میں بھی۔ میں پینٹنگ کو جغرافیائی یا جغرافیائی حالات یا سٹوڈیو کے ماحول تک محدود نہیں کرتی ہوں۔

صرف کام کرنا میرے لیے اہم ہے۔ اسی لیے میں یہ کہتی ہوں کہ مجھے ’پینٹر‘ بننے میں لطف آتا ہے۔ ٹھیک ہے، میں دوسرے کرداروں کے بارے میں یقین سے نہیں کہہ سکتی، جیسے بچہ، شریک حیات یا ماں۔ لیکن پینٹر ہونے کا معاملہ ایسا نہیں ہے۔

یہ پینٹنگ کیسے ہوتی ہے؟

میں اپنے زیادہ تر جاگنے کے اوقات میں پینٹ کرتی ہوں۔ میرا کینوس میرے رہنے والے ماحول کے اندر ہے۔ میں جس گھر میں رہتی ہوں اس زمین پر میں کھاتی ہوں اور فلمیں دیکھتی ہوں۔ میری روزمرہ زندگی میں سب کچھ عروج پر ہوتا ہے۔

میرے پاس مواصلات محدود ہیں۔ میں اپنی زندگی کے کچھ لوگوں کو جانتی ہوں۔ میں ہر وقت سفر کرتی ہوں لیکن جب تک مجھے کھانا خریدنے کی ضرورت نہ ہو پینٹنگ پینٹ نہیں کرتی۔ کبھی کبھی جب میں لوگوں کو غیرملکی زبان میں بات کرتے سنتی ہوں تو مجھے احساس ہوتا ہے کہ اب میں کسی اور ملک میں پینٹنگ کر رہی ہوں۔ مثال کے طور پر اب میں صحرا میں ہوں۔ لیکن جب میں کام کرتا ہوں تو میں اس طرف توجہ نہیں دیتی ہوں جو میرے آس پاس کی دنیا میں ہو رہا ہے۔ مجھے ایسا لگتا ہے جیسے میں اپنی ہی کیپسول میں ہوں۔

آپ کی پینٹنگز کے ایک مضمون نے میری توجہ مبذول حاصل کرلی۔ آپ کا رنگ پیلیٹ کچھ جگہوں پر ایرانی ہوجاتا ہے۔ رنگ جیسے انڈگو اور شیر اور فیروزی کبھی کبھی پینٹنگ میں غالب رنگ ہوتے ہیں۔ کیا آپ کی پینٹنگ میں ان ایرانی رنگوں کی آمد شعوری طور پر یورپی اور پریوں سے مشابہت رکھتی ہے؟

میرے خیال میں مختلف جغرافیائی خالی جگہوں میں یہ میری اعلی نقل و حرکت سے ہے۔ جب میں ایران میں پینٹ کرتی ہوں تو میری مستشرقیت کا احساس بڑھ جاتا ہے۔ میں نے ہمیشہ کہا ہے کہ میرے ذہن میں ایک امتزاج مشین ہے۔ کچھ مکسر کی طرح۔ بہت آسان واقعات اس میں داخل ہوتے ہیں۔ ایسی کوئی چیز جو میرے لیے دلچسپ ہوسکتی ہے اور میرا دماغ اس کا تجزیہ کرنے لگتا ہے۔ تب یہ خیال اس ماحول کے ساتھ گھل مل جاتا ہے جس میں میں ہوں۔ کبھی ذاتی احساس، کبھی ثقافتی علامت اور کبھی یورپ میں لوگوں کے تعلقات۔ مثال کے طور پر ریس میرے لیے یورپ کی ایک کشش ہے۔ ایسی چیز جس کا میں نے ایران میں سامنا نہیں کیا تھا۔ لیکن عام طور پر مجھے یہ کہنا پڑتا ہے کہ میرے پاس بہت سارے کاموں کا جواب نہیں ہے۔ مجھے نہیں معلوم کہ میرے کام میں یہ جگہیں اور رنگ کیوں دکھائے جاتے ہیں۔

آپ جوان پینٹر ہیں۔ میں نے آپ کے کام میں یہ بھی دیکھا ہے کہ آپ مصوری میں نئے مواد اور اوزار استعمال کرنے میں دلچسپی رکھتی ہیں۔ آپ کے کام کا حجم آپ کے لیے اہم ہے۔ آپ نے بڑی پینٹنگز پینٹ کیں۔ کیا آپ کو لگتا ہے کہ مستقبل میں آپ کو اپنے نظریات یا مصوری کی تکنیک سے ذہنی اور کام کا چیلنج درپیش ہوگا؟ کون سا آپ کو اپنی طرف اپنی طرف متوجہ کرتا ہے؟

زندگی میں میرا کوئی مقصد نہیں ہے۔ میں مستقبل کے بارے میں بھی نہیں سوچتی۔ میں صرف پینٹ کرتی ہوں۔ میں ہمیشہ اپنی ذاتی جگہ میں پینٹ کرتی ہوں۔ میں گیلری میں بھی نہیں جاتی ہوں۔ میں صرف زیادہ سالوں کے لیے پینٹ کرنا چاہتی ہوں۔ جتنا میں کرسکتا ہوں میں اپنی تصویر پینٹ کرسکتی ہوں۔ ہوسکتا ہے کہ میں اپنے ذہن میں سے کچھ کینوس پر رکھوں۔

اگر اسے ایک مقصد کہا جاسکتا ہے تو مجھے یہ کہنا ضروری ہے کہ میرا مقصد سخت محنت کرنا ہے، اب جہاں چاہیں جائیں۔

آپ نے بتایا کہ پینٹنگ آپ کے لیے ایک کل وقتی کام ہے۔ یہ کہاں سے شروع ہوا؟

میں نے بچپن میں یہ شروع کیا اور ایک نوعمر کی حیثیت سے ایک پیشہ ور کی حیثیت سے معاش حاصل کیا۔ اٹھارہ سال کی عمر میں میں ابرار اخبار کا آرٹسٹک ڈائریکٹر بن گئی۔ اسی طرح میں ورک سپیس سے واقف ہوگی۔ میری ذاتی عادات ہیں جیسے محنت اور وقت کی پابندی جو کام میں میرے لیے اہم ہوتی ہے۔ میرے کیریئر کا راستہ پینٹنگ سے پینٹنگ میں تبدیل ہونے کے بعد بھی ان سبھی چیزوں سے مجھے اپنی آمدنی کے بارے میں اچھا لگتا ہے۔

ایران میں بصری فنون پر ہمیشہ مختلف سیاسی، مذہبی یا معاشرتی عوامل کا دباؤ رہا ہے۔ کیا آپ ایران میں بصری فنون کا روشن مستقبل دیکھ رہی ہیں؟ کیا آپ کو لگتا ہے کہ ایران میں مصوری اچھے سرمایے کی حیثیت سے مارکیٹ میں آسکتی ہے اور پینٹنگ کی تعلیم پر زیادہ توجہ مرکوز کر سکتی ہے؟

عام طور پر جہاں بھی ہم دنیا میں ہیں، آرٹ کے ذریعے معاش کئی فنکاروں کے لیے ممکن نہیں ہے۔ ایران میں اچھے حالات پیدا ہوچکے تھے اور یہاں تک کہ اصل فن پاروں کی خریداری بھی دولت مندوں کی اجارہ داری سے باہر ہوچکی تھی اور متوسط ​​طبقے نے اس بازار سے خریدنا شروع کر دیا تھا۔ بدقسمتی سے پابندیوں اور ایران کی تنہائی کے ساتھ یہ موقع ختم ہوگیا۔

بدقسمتی سے ایرانی فنکاروں کی آمدنی کی خراب صورت حال ہے اور انہوں نے لامحالہ اپنے کام کی قیمت کم کر دی ہے۔ ہمارے کام کے بہت سے خام مال اب ایران میں دستیاب نہیں ہیں۔ ہمارے پاس پینٹنگ کے لیے صحیح رنگ نہیں ہے۔ ایک ہی وقت میں بہت سارے فنکار جنہوں نے ان ساری شرائط میں رنگ برنگے رہنا جاری رکھے ہوئے ہیں، وہ اپنی انوکھی چیزوں کو غیر منصفانہ اور کم قیمت پر آرٹ ڈیلروں پر فروخت کرنے پر مجبور ہیں، جنہیں ناصرف پابندیوں سے نقصان پہنچا ہے بلکہ جنہوں نے زیادہ منافع بھی کمایا ہے۔ بدقسمتی سے مجھے اس وقت مثبت نقطہ نظر نظر نہیں آتا ہے۔

میں پینٹ کرتی ہوں اور مجھے اپنا کام دیکھنا پسند ہے۔ میرے لیے کام کا سب سے اہم حصہ وہ لمحہ ہے جب دیکھنے والے بورڈ کے سامنے کھڑے ہو کر اسے دیکھتے ہیں۔ لیکن ایران میں یہ امکان میرے لیے نہیں ہے۔ میری بہت سی پینٹنگز کو ایران میں گیلری یا نمائش کی دیوار پر جانے کا موقع نہیں ہے۔ مجھے دوسرے ممالک میں اپنا کام دکھانا ہے۔ مثال کے طور پر ایران میں میری پینٹنگز میں خواتین کے لباس کی قسم کی وجہ سے بصری آرٹس آرگنائزیشن نے مجھے بطور آرٹسٹ تصدیق نہیں کیا۔

اب میرے پاس ایک بہت بڑا سوٹ کیس ہے اور میں اپنے کام کو دنیا کے مختلف حصوں میں لے جاتی ہوں۔

زیادہ پڑھی جانے والی آرٹ