رضوان کی پانچ روز میں دوسری سنچری، پاکستان کا فاتحانہ آغاز

ٹی ٹوئنٹی سیریز کے پہلے میچ میں پاکستان نے ایک دلچسپ مقابلے کے بعد تین رنز سے جنوبی افریقہ کو شکست دے دی جس میں رضوان کے 64 گیندوں پر 104 رنز کا اہم کردار رہا۔ 

محمد رضوان  نے چھ چوکوں اور سات چھکوں کی مدد سے اننگز کے آخری اوور میں اپنی سنچری مکمل کی (اے ایف پی)

وکٹ کیپر بلے باز محمد رضوان کی شاندار سنچری نے پاکستان کو جنوبی افریقہ کے خلاف قذافی سٹیدیم لاہور میں کھیلے جانے والے پہلے ٹی ٹوئنٹی میں کامیابی دلا دی۔

پاکستان نے ایک دلچسپ مقابلے کے بعد تین رنز سے جنوبی افریقہ کو شکست دے دی جس میں رضوان کے 64 گیندوں پر 104 رنز کا اہم کردار رہا۔ 

یہ کسی بھی پاکستانی بلے باز کی ٹی ٹوئنٹی فارمیٹ میں دوسری سنچری ہے۔ اس سے قبل احمد شہزاد سنچری سکور کرچکے ہیں۔ 

محمد رضوان احمد شہزاد کے بعد دوسرے پاکستانی کھلاڑی ہیں جنہوں نے تینوں فارمیٹ میں سنچری سکور کی ہے۔ 

رضوان کی پانچ روز میں یہ دوسری سنچری ہے، اس سے قبل وہ راولپنڈی ٹیسٹ میں سنچری بنا چکے ہیں۔

ان کی موجودہ فارم اس وقت دنیا کے کسی بھی بڑے بلے باز سے کم نہیں اور بیٹنگ کے ساتھ ساتھ وہ وکٹ کیپنگ میں بھی زبردست کارکردگی دکھا رہے ہیں۔ 

میچ میں جنوبی افریقہ نے ٹاس جیت کر پہلے فیلڈنگ کرنے کا فیصلہ کیا۔ 

پاکستان کی طرف سے کپتان بابر اعظم اور محمد رضوان نے اننگز کا آغاز کیا تاہم بابر پہلے ہی اوور میں بغیر کوئی صفر پر رن آؤٹ ہوگئے۔  

نوجوان حیدر علی نے رضوان کے ساتھ 37 رنز کی رفاقت کی مگر وہ بھی 21 رنز بناکر آؤٹ ہوگئے۔  

پاکستان کی وکٹیں وقفے وقفے سے گرتی رہیں لیکن ایک طرف سے محمد رضوان دلکش بیٹنگ کرتے رہے اور سکور کو بڑھاتے رہے۔ 

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

انہوں نے چھ چوکوں اور سات چھکوں کی مدد سے اننگز کے آخری اوور میں اپنی سنچری مکمل کی۔ 

ان کے علاوہ پاکستان کی طرف سے کوئی اور بلے باز بڑی اننگز نہ کھیل سکا۔ پاکستان نے مقررہ 20 اوورز میں 169 رنز بنائے۔

جنوبی افریقہ کا آغاز نسبتاً بہتر رہا اور پہلے چھ اوورز کے پاور پلے میں 51 رنز بنائے۔ 

پاکستان کو پہلی کامیابی اس وقت ملی جب عثمان قادر نے جینیمن ملن کو بولڈ کردیا۔  

عثمان قادر نے بہت اچھا سپیل کیا اور چار اوورز میں صرف 21 رنز کے عوض دو کھلاڑی آؤٹ کیے۔

جنوبی افریقہ کی طرف سے دوسرے اوپنر ہینڈرکس نے اچھی اننگز کھیلی اور وہ 54 رنز بناکر رنز آؤٹ ہوئے۔ جنوبی افریقہ کی وکٹیں وقفے وقفے سے گرتی رہیں جس سے رنز کی رفتار میں اتار چڑھاؤآتا رہا۔

 آخری اوور میں جنوبی افریقہ کو جیت کے لیے 19 رنز کی ضرورت تھی جبکہ اس کی چھ وکٹیں گر چکی تھیں۔ اس موقع پر فرٹوین اور پریٹوریس نے پانچ گیندوں پر 13 رنز بنا کر میچ دلچسپ کر دیا۔ 

لیکن آخری گیند پر جب چھ رنز چاہیے تھے صرف دو ہی بن سکے اور اس طرح پاکستان تین رنز سے میچ جیت گیا۔ 

پاکستان کی طرف سے عثمان قادر اور محمد نواز نے نپی تلی بولنگ کرکے جنوبی افریقہ کی رنز بنانے کی رفتار کو کم کیے رکھا۔ 

عثمان قادر کا گیند گیلی ہونے کے باجود اپنی بولنگ پر کنٹرول اور سپن قابل دید تھا۔  محمد رضوان کو ان کی شاندار سنچری پر میچ کے بہترین کھلاڑی کا اعزاز دیا گیا۔ 

موجودہ سیریز کا دوسرا میچ 13 فروری کو لاہور میں ہی کھیلا جائے گا۔ 

زیادہ پڑھی جانے والی کرکٹ