افغانوں کو موسم سرما کی آمد پر مشکلات کا سامنا

طالبان کی حکومت کی آمد کے بعد سے ملک بھر میں فاقہ کشی پھیل رہی ہے اور بین الاقوامی امداد کی ضرورت بڑھتی جا رہی ہے۔

ورلڈ فوڈ پروگرام کے مطابق افغانستان میں قحط کے قریب حالات میں رہنے والے افراد کی تعداد 87 لاکھ تک پہنچ گئی ہے(ایسوسی ایٹڈ پریس)

 

کمرے کو کونے میں جلائے گئے ایک چھوٹے سے تیل کے چراغ سے روشن کیا گیا تھا۔ مجھے کھڑکی سے مغرب کی اذان کی آواز سنائی دے رہی تھی۔ وہ میرے سامنے اپنے چھوٹے سے چیتا ڈیزائن کے کمبل پر آلتی پالتی مار کر، ایک ہاتھ میں تلے ہوئے انڈے کا برتن اور دوسرے ہاتھ میں ایک چائے کا چمچ تھامے بیٹھا تھا۔

میں اسے اپنا منہ کھولنے پر آمادہ کرنے کی کوشش کر رہا تھا۔ اس نے مزاحمت کی، وہ آرام سے بیٹھنے کی کوشش کر رہا تھا۔ اس کی آنکھیں بجھی ہوئی تھیں اور ان میں روشنی نہیں تھی۔ اس کا پیٹ پھولا ہوا لگ رہا تھا۔ کراہتے ہوئے اس نے اپنا منہ بند رکھا۔

چند کوششوں اور بہت حوصلہ افزائی کے بعد، اس نے چند لمحوں کے لیے پر اپنا منہ کھولا اور میں نے چمچ کو اندر دھکیل دیا، صرف اس لیے کہ وہ اسے بند کر لے اور چمچ پر اپنی گرفت مضبوط کر لے۔ بےچینی سے کراہتے ہوئے، چمچ پر اس کی گرفت اب سخت ہو گئی تھی، اس سے پہلے کہ وہ اسے جانے چھوڑ دیتا۔

ناکامی قبول کرتے ہوئے، میں نے اسے اٹھایا، اور اسے اس کے کمبل پر ایک کونے پر لٹا دیا اور دوسرے سے ڈھانپ دیا۔ ایک گھنٹہ یا اس کے بعد، وہ بے جان تھا۔ میرا بچہ بھائی محمد بھوکا مر گیا تھا۔ صبح کے وقت اسے گاؤں کے قبرستان میں دفن کر دیا گیا۔

یہ 1997 کی بات ہے، اور میرے لیے ایک نو سالہ ہزارہ بچے، ننھے محمد کی موت کوئی غیر معمولی بات نہیں تھی۔ ہمارے وطن ہزاراجات میں ہمارے لوگ طالبان کی ناکہ بندی کی وجہ سے بھوکے مر رہے تھے۔ بھوک ہر جگہ تھی۔ صرف خوش قسمت کے پاس کھانے کے لیے کافی روٹی تھی۔ اس سے زیادہ کچھ بھی ایک غیردنیاوی عیش و آرام تھا۔

فاقہ کشی موت کی واحد وجہ نہیں تھی - دوا کی کمی ایک اور وجہ تھی۔ بے ہوشی کے بغیر دانت نکالنے کی یاد سے اب بھی میں کانپ جاتا ہوں۔ اور نہ ہی میں اس نوجوان عورت کی چیخوں کو کبھی بھولوں گا جو بچے کی پیدائش کی پیچیدگیوں کا شکار تھی، اور جسے مردوں کے ایک گروپ کے کندھوں پر موٹی برف کی تہہ کے درمیان سے قریبی ہسپتال کی طرف لے جایا جا رہا تھا، جو عام موسم میں بھی ایک دن کی دوری پر تھا۔ ہم چھت سے اسے دیکھ رہے تھے تو اس دوران اس کی چیخیں بند ہو گئیں۔ اسے اٹھانے والے مرد اسے مسجد لے جانے کے لیے واپس مڑ گئے تاکہ اس کی تدفین کی تیاری کی جا سکے۔

یہ ناکہ بندی تقریبا دو سال تک جاری رہی اور طالبان نے اقوام متحدہ کی جانب سے خطے میں امداد پہنچانے کی درخواستوں پر بار بار انکار کیا۔ پہاڑی علاقہ اور سخت سردیوں میں معاف نہ کرنے والے ہزاراجات کے پاس بہت کم قابل کاشت زمین ہے۔ وہاں کئی ہزار افراد ہلاک ہو گئے۔

دوبارہ اقتدار میں آنے والے طالبان اب پورے ملک کو فاقہ کشی پر مجبور کر رہے ہیں۔ جیسا کہ ورلڈ فوڈ پروگرام کے ڈائریکٹر نے کہا ہے کہ افغانستان ’زمین پر بدترین انسانی بحران‘ بنتا جا رہا ہے۔ موسم سرما قریب آتے ہی افغانستان کے عوام جہنم کا سامنا کر رہے ہیں۔ وہ بے دردی سے ظلم کا شکار ہیں اور لاکھوں کو فاقہ کشی کا خطرہ ہے۔

افغانستان کا المیہ انسان کا بنایا ہوا ہے جس سے انسانیت کو شرمندگی ہونی چاہیے۔ اس سے بچا جاسکتا تھا۔ اس سے بچایا جانا چاہیے تھا۔ ہم جانتے تھے اور ہم میں سے بہت سے لوگوں نے خبردار کیا تھا کہ یہ ہونے جا رہا ہے۔ لیکن ہمیں یہ نہیں بھولنا چاہیے کہ اس کے اصل مجرم طالبان ہیں۔ اب انہوں نے لاکھوں افغانوں کو یرغمال بنا رکھا ہے۔

دنیا کو اخلاقی مخمصے کا سامنا ہے۔ اسے طالبان حکومت کی مدد کیے بغیر ملک میں امداد فراہم کرنے کا راستہ تلاش کرنا ہوگا۔ یہ گروپ امداد کو اپنی حکمرانی کو قانونی شکل دینے کے لیے ہر طرح کی کوشش کر رہا ہے۔ یہ پہلے ہی امداد کی ترسیل کو تصویریں بنانے کے مواقع کے طور پر استعمال کر رہا ہے۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

امداد کی ضرورت فوری ہے اور طالبان اس فوری ضرورت کا فائدہ اٹھانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ ہمیں طالبان کو اور ان کے ذریعے امداد فراہم کرنے سے گریز کرنا چاہیے۔ ایسا کرنے کے نتائج افغانستان کے عوام پر آنے والی مصیبتوں کو مزید طول دیں گے۔ عالمی برادری اور امدادی اداروں کو فوری طور پر امداد کی فراہمی کا واضح فریم ورک تشکیل دینا ہوگا جس سے طالبان کو روکنا ہوگا۔

طالبان سے افغان عوام کو جو تکلیف پہنچ رہی ہے اس کی قیمت انہیں ادا کرنی چاہیے۔ یہ گروہ اس سانحے کی وجہ ہے نہ کہ اس کا حل یا حل کا حصہ۔

ہر روز ہمیں افغانستان بھر میں طالبان کی جانب سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے نئے شواہد ملتے ہیں۔ افغانستان کے عوام کو کھانا کھلانے کی ضرورت نہیں ہے۔ انہیں اپنے آپ کو ان پر لگنے والی برائی سے نجات دلانے کے لیے یکجہتی اور حمایت کی ضرورت ہے۔ گذشتہ چند ماہ، ملک کی پیچیدہ تاریخ اور عوام اس بات کا ثبوت ہیں کہ اس گروپ کی حکومت قائم نہیں رہے گی۔ ہماری اخلاقی ذمہ داری ہے کہ ہم اس بات کو یقینی بنائیں کہ یہ زیادہ دیر تک نہ رہے۔

میرے تجربات کا موازنہ اس وقت افغانستان میں لاکھوں مردوں، عورتوں اور بچوں سے نہیں ہوتا۔ چیزوں کو اس طرح ہونے کی ضرورت نہیں ہے۔

روح یعقوبی ایک سابق پناہ گزین، تبصرہ نگار اور ہیومن سکیورٹی سینٹر میں ایسوسی ایٹ فیلو ہیں جو خارجہ پالیسی کا ایک غیر جانبدار تھنک ٹینک ہے۔

نوٹ: یہ تحریر مصنف کی ذاتی رائے پر مبنی ہے، ادارے کا اس سے متفق ہونا صروری نہیں۔

© The Independent

زیادہ پڑھی جانے والی زاویہ