جج کی سالگرہ کا سرکلر: ’باہر دنیا رو رہی ہے آپ کو سالگرہ کی پڑی ہے‘

لاہور ہائی کورٹ میں ججوں کے لیے چائے کے وقفے کے دوران سالگرہ منانے کے سرکلر پر ملی جلی آرا سامنے آ رہی ہیں۔

لاہور ہائی کورٹ کی عمارت (تصویر لاہور ہائی کورٹ ویب سائٹ)

لاہور ہائی کورٹ کے ججوں کے لیے چند روز پہلے جاری ایک سرکلر میں چیف جسٹس محمد امیر بھٹی نے تمام حاضر سروس جج صاحبان کو ججز کامن روم میں چائے کے وقفے کے دوران کیک کاٹ کراپنی سالگرہ منانے کا بتایا۔

22 جنوری کو جاری ہونے والے سرکلر پر ہائی کورٹ ایڈیشنل رجسٹرار کے دستخط تھے۔ یہ سرکلر وائرل ہوا تو سوشل میڈیا پر مختلف آرا سامنے آنے لگیں۔

ایک طرف کہا گیا کہ یہ ججوں کا ذاتی معاملہ ہے، اس پر تنقید نہیں ہونی چاہیے تو دوسری جانب بعض لوگوں کو اعتراض ہے کہ عام آدمی سمجھتا ہے کہ ملک میں انصاف کے حصول میں دشواریاں پیش آ رہی ہیں وہاں سرکاری طور پر سالگرہ منانے کا اعلان مناسب نہیں۔

اس حوالے سے انڈپینڈنٹ اردو نے مختلف قانون دانوں سے رابطہ کیا اور پوچھا کہ وہ ججوں کی یوں سالگرہ منانے کو کس طرح دیکھتے ہیں اور سالگرہ منانے کے موقعے پر تحائف دے کر ممنون کیے جانے کا کس حد تک امکان ہو سکتا ہے؟

ایڈوکیٹ اشتیاق چوہدری کا کہنا تھا، ’میں نوٹفیکیشن اور آپ کے سوال پر صرف مسکرا سکتا ہوں۔ اس سے زیادہ اس پر کوئی رائے نہیں دے سکتا۔

’ہمیں دیکھنا پڑے گا کہ دنیا بھر میں کیا روایت ہے؟ جب تک ہم اس پر کوئی تحقیق نہ کر لیں، بات کرنا مناسب نہیں۔‘

ماہر قانون دان اور ناول نگار ڈاکٹر اسامہ صدیق نے اس سرکلر کو اپنے فیس بک پیج پر شیئر کیا اور لکھا، ’یہ سرکلر میرے نئے ناول کے پہلے باب کے لیے بہت متاثر کن ہے۔

’امید ہے کہ یہ ناول 2022 میں مکمل ہو جائے گا لیکن اس (سرکلر) نے کیا شاندار ابتدائیہ فراہم کیا ہے۔‘

انڈپینڈنٹ اردو نے ڈاکٹراسامہ صدیق سے رابطہ کیا اور پوچھا کہ کیا واقعی وہ اپنے نئے ناول کی ابتدا اس سرکلر کے ذکر سے کریں گے؟ نیز وہ ججوں کی سالگرہ ہائی کورٹ کے احاطے میں منانے کو کس طرح سے دیکھتے ہیں؟  

ڈاکٹر اسامہ صدیق، جو امریکہ کی ہارورڈ یونیورسٹی میں قانون پڑھاتے رہے ہیں، کہا: ’میں نے اسے  مزاح کے طور پر اس لیے لیا کہ جب ایک سنجیدہ ادارہ اس طرح کی حرکت کرتا ہے تو ۔۔۔ وہ مزاح کا سبب بن جاتا ہے جو اسے نہیں کرنا چاہیے۔‘

ان کا کہنا تھا کہ ان کی پوسٹ میں جو طنز تھا وہ اس لیے تھا کہ وہ عرصہ دراز سے عدلیہ اور قانونی نظام پر کام کر رہے ہیں اور وہ اسے بہت سنجیدگی سے لیتے ہیں۔

’عام حالات میں یہ کوئی اتنی بڑی بات نہیں، لوگ کورٹ کے اندر آپس میں ملتے ہیں لیکن ہمارے پیرائے میں یہ بات دو تین وجوہات سے مضحکہ خیز لگتی ہے۔

’ایک تو اس لیے کہ جہاں عدلیہ کے نظام میں اتنے مسائل ہیں، لوگ بیتاب ہیں کہ کوئی اصلاحات لائی جائیں، ایک چیف جسٹس کے بعد دوسرا اور پھر تیسرا چیف جسٹس چلا جاتا ہے اور بنیادی نظام میں کوئی تبدیلی نہیں آتی تو ظاہر ہے کہ پھر اس طرح کی چیز کو لوگ تمسخر کا نشانہ بناتے ہیں کہ دنیا رو رہی ہے باہر اور آپ کو اپنی سالگرہ کی پڑی ہے۔‘

ڈاکٹر اسامہ صدیق کا کہنا تھا کہ کہ دوسرا مزاح کا پہلو یہ کہ آپ اس کا اعلان سرکاری سطح پر کیوں کر رہے ہیں؟

’آپ نے چائے پینی ہے، پییں، بسکٹ کھانے ہیں، کھائیں۔ لیکن ایک سرکلر نکل رہا ہے جس پر رجسٹرار کے دستخط ہیں۔ اور یہ کہ آپ سالگرہ کو اتنی سنجیدگی سے لے رہے ہیں کہ کیک کاٹنا ہے یا سالگرہ منانی ہے؟‘

ان کا کہنا تھا کہ یہ بالکل غیر رسمی چیز ہونی چاہیے کہ جب کسی کی سالگرہ ہو تو سب اکٹھے ہو جائیں۔

’قانون کا دنیا بھر کے ادب میں مزاح سے بھی تعلق ہے۔ چونکہ ایک بہت سنجیدہ خیالی دنیا بنائی جاتی ہے اور وہ ایک لحاظ سے ضروری ہے کیونکہ اس طرح آپ قانون کا ایک دبدبہ پیدا کرتے ہیں۔

’لیکن اگر آُپ اس میں یہ چیزیں کرتے ہیں تو آپ اپنا مذاق بنوا رہے ہیں۔ اصل دبدبہ یہ کہنے سے نہیں ہوتا کہ ہماری عزت کرو بلکہ وہ آپ کے کام سے ہوتا ہے۔‘

ان کا کہنا تھا کہ ’اگر آپ مظلوم لوگوں کے لیے کچھ کر رہے ہیں تو ٹھیک ہے۔ لیکن (انصاف کے حصول کے بارے میں) بین الاقوامی انڈیکس پر ہماری کارکردگی اتنی بری ہے۔

’دوسرا اتنے برسوں میں اربوں روپے خرچ کر کے سسٹم کارکردگی نہیں دکھا رہا اور عوام کو یہ تاثر ہے کہ ہمارے ادارے اپنی فلاح و بہبود کے علاوہ عام لوگوں کے لیے کچھ نہیں کر رہے۔

’اس طرح کے ماحول میں جب اس طرح کی چیز آتی ہے تو آپ کو غصہ بھی آتا ہے اور اس غصے کو نکالنے کا بہترین طریقہ طنز ہے۔‘

’سالگرہ منانا ذاتی معاملہ ہے، اس پر اعتراض نہیں بنتا‘

ایڈووکیٹ رانا انتظار نے اس سرکلر کے بارے میں انڈپینڈنٹ اردو سے بات کرتے ہوئے کہا ’پہلی بات تو یہ کہ ایسا کوئی سرکلر ہمارے پاس نہیں پہنچا۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

’دوسری بات یہ کہ اگر ایسا کوئی سرکلر جاری بھی ہوا تو ججز کمیٹی روم کے اندر اپنی سالگرہ منائیں گے۔ کمیٹی روم میں وکلا شرکت نہیں کرتے وہاں صرف جج صاحبان ہوتے ہیں۔‘

ان کا کہنا تھا کہ ’سالگرہ منانا کسی کا ذاتی معاملہ ہے اس سے ہمارا کوئی سروکار نہیں۔ اگر جج صاحبان اپنی سالگرہ مناتے ہیں تو یہ ان کا حق ہے کہ جس طرح وکلا، میڈیا والے اور دیگر لوگ پنی سالگرہ مناتے ہیں جج بھی منا سکتے ہیں۔‘

انہوں نے یہ بھی بتایا کہ ’روزانہ کئی وکلا کی سالگرہ بار روم میں منائی جاتی ہے اور ہائی کورٹ کے احاطے میں ہو رہی ہوتی ہے اس میں اعتراض کرنے کی ضرورت کیا ہے؟

’ہر شخص اپنی خوشی سے منا رہا ہوتا ہے اور خوشیوں میں شریک ہونا سب کا کام ہے اس پر اعتراض کرنا بنتا ہی نہیں۔‘ 

زیادہ پڑھی جانے والی پاکستان