بھارت کا دورہ: بورس جانسن پر پارٹی گیٹ سے ’بھاگنے‘ کا الزام

ناقدین کا کہنا ہے کہ اس دورے کے دوران کوئی تجارتی معاہدہ متوقع نہیں، روس کی مذمت کرنے سے بھارت کے انکار پر بات گول مول کر دی جائے گی تاہم بورس جانسن ’قانون شکنی‘ پر ووٹنگ سے بچ جائیں گے۔

برطانیہ کے وزیر اعظم بورس جانسن 21 اپریل 2022 کو احمد آباد میں گاندھی آشرم کے نام سے بھی جانے جانے والے سابرمتی آشرم میں اپنے دورے کے دوران چرخہ گھما رہے ہیں (اے ایف پی)

برطانوی وزیر اعظم بورس جانسن پر بھارت کے لیے روانگی کے وقت پارٹی گیٹ کے بحران سے ’بھاگنے‘ کا الزام لگایا گیا ہے۔ اس دورے کے بارے میں ناقدین کا کہنا ہے کہ اس سے کچھ بھی اہم حاصل نہیں ہوگا۔

حزب اختلاف کی جماعتیں یہ کہتے ہوئے اس دورے پر جھپٹ پڑی ہیں کہ اس دورے کے دوران بریگزٹ کے بعد کسی تجارتی معاہدے پر اتفاق کا امکان نہیں اور وزیراعظم کے ساتھ یوکرین پر روسی حملے کی مذمت کرنے سے ہندوستان کے انکار پر تصادم سے بچنے کی کوشش کریں گے۔

(بورس جانسن مغربی گجرات پہنچے ہیں جو مودی کی آبائی ریاست ہے جہاں وہ کاروباری رہنماؤں سے ملاقات کریں گے اور تاریخی احمد آباد شہر کا ثقافتی دورہ کریں گے جو برطانیہ میں اینگلو انڈینز کی نصف آبادی کا گھر ہے۔)

دو روزہ دورے کا مطلب ہے کہ بورس جانسن اس وقت غیر حاضر ہوں گے جب وہ اپنے اراکین کو ہاؤس آف کامنز میں انکوائری کو روکنے کا حکم دیں گے کہ انہوں نے لاک ڈاؤن کی خلاف ورزی کی پارٹیوں کے بارے میں پارلیمنٹ کو گمراہ کیا۔

نمبر 10 ایک کمپنی کے لیے ایک معاہدے کا اعلان کر رہا ہے جسے ڈومینک کمنگز کی جانب سے دیوالیہ ہونے سے بچایا گیا ہے جو کہ ہندوستان سے سیٹلائٹ لانچ کرنے کے لیے برطانیہ کے ٹیکس دہندگان کی 40 کروڑ پاؤنڈز کی رقم استعمال کر رہی ہے۔

ون ویب معاہدہ جنوبی ایشیا کی بڑی معیشت کے ساتھ کئی تجارتی معاہدوں اور برآمدی سودوں میں سے ایک ہے، جس کی مالیت ڈاؤننگ سٹریٹ نے مجموعی طور پر ایک ارب پاونڈ رکھی ہے۔

لیکن لیبر کے بین الاقوامی تجارت کے شیڈو سیکریٹری نک تھامس سائمنڈز نے کہا کہ مسٹر جانسن کاروبار، ٹریڈ یونین اور شہری گروپوں کے ساتھ مل کر ایک طویل وعدہ شدہ تجارتی معاہدے کو آگے بڑھانے کی تیاری کیے بغیر جا رہے ہیں۔

کسی بھی معاہدے کو برطانیہ میں آباد ہونے اور کام کرنے کے لیے مزید ویزوں کے بھارتی مطالبات کی زبردست رکاوٹ کا سامنا کرنا پڑتا ہے اور کسی پیش رفت کی توقع نہیں ہے۔

مسٹر تھامس سائمنڈز نے کہا: ’وزیراعظم کو بھارت کے ساتھ تجارتی مذاکرات کو سنجیدگی سے لینا چاہیے تاکہ یہ یقینی بنایا جا سکے کہ وہ برطانوی عوام کے لیے مفید ثابت ہوں گے۔

’اس کے بجائے، وہ ان کا استعمال اس حقیقت سے توجہ ہٹانے کے لیے کر رہے ہیں کہ وہ اپنی قانون شکنی اور بڑھتی ہوئی قیمتوں کے بحران کو چھپانے کے لیے اپنے اراکین پارلیمنٹ پر دباؤ ڈال رہے ہیں۔‘

لبرل ڈیموکریٹ خارجہ امور کی ترجمان لیلا موران نے کہا: ’بورس جانسن کی پارلیمانی جانچ پڑتال سے بچنے کی مایوسی ان کے بھارت کے دورے سے واضح ہوگئی ہے۔

’ہمیں بتایا گیا ہے کہ وزیر اعظم اس سفر میں کچھ حاصل نہیں کریں گے - وہ تجارتی معاہدے پر دستخط نہیں کریں گے، اور وہ یوکرین پر سخت بات نہیں کریں گے۔‘

اور بیٹر ڈیموکریسی مہم گروپ بیسٹ فار برٹین کی چیف ایگزیکٹیو، ناؤمی سمتھ نے کہا: ’حقیقت یہ ہے کہ اس سفر کا مطلب ہے کہ جانسن اپنی ہی قانون شکنی پر ایک اہم بحث اور ووٹ سے محروم ہو جائیں گے۔ یہ محض ایک اتفاق نہیں ہے۔ اس کا بھاگنا ظاہر کرتا ہے کہ اس کے پاس کچھ نہیں ہے۔‘

ڈاؤننگ سٹریٹ نے کہا ہے کہ وہ ہر ملک پر زور دے رہی ہے کہ وہ یوکرین میں ’پوتن کی ناکامی‘ کو یقینی بنانے کے لیے ’وہ سب کچھ کرے جو وہ کر سکتے ہیں‘، حال ہی میں ایک طویل فون کال میں چین کے صدر سے مداخلت کرنے پر زور دیا گیا۔

لیکن اس نے کہا ہے کہ وزیر اعظم بھارتی ہم منصب نریندر مودی کو ’لیکچر‘ دینے کی کوشش نہیں کریں گے، جنہوں نے ماسکو سے فوجی اور توانائی کی خریداری کو کم کرنے سے بھی انکار کر دیا ہے۔

اس کے بجائے، دونوں وزرا اعظم روس پر بھارت کے انحصار کو کم کرنے کے لیے متبادل ذرائع کے لیے ’تعمیری‘ تجاویز پر تبادلہ خیال کریں گے۔

ڈاؤننگ سٹریٹ نے کہا ہے کہ ویزوں پر کوئی بھی معاہدہ، تجارتی معاہدے کو قابل بنانے کے لیے، برطانیہ کے برگزیٹ کے بعد کے آجر کے زیر کفالت امیگریشن سسٹم کے ساتھ مطابقت رکھتا ہے، جو کہ طلب میں مہارت رکھنے والے کارکنوں کی حمایت کرتا ہے۔

ویسٹ منسٹر میں کسی بھی کنزرویٹو رکن کو پارٹی گیٹ تنازع کو کامنز کی استحقاق کمیٹی کو بھیجنے کی تحریک کی حمایت کرنے کی صورت میں اسے پارٹی وہپ کو ہٹانے کی دھمکی دی جائے گی۔

ٹوری ایم پیز کی بیک بینچ 1922 کمیٹی کے وائس چیئرمین چارلس واکر نے کہا کہ وہ حصہ نہیں لیں گے اور پیش گوئی کی ہے کہ بورس جانسن کو پارٹی رہنما کے طور پر ’مستقبل میں‘ ہٹانے کی کوئی کوشش نہیں کی جائے گی۔

لیکن انہوں نے بی بی سی کو بتایا: ’اگر جرمانے میں اضافہ ہوتا رہتا ہے تو وزیر اعظم حمایت کے لیے اپنی پارٹی پر انحصار ایک حد تک ہی کر سکیں گے۔‘

© The Independent

زیادہ پڑھی جانے والی یورپ