ریاستی انتخابات میں بی جے پی کو 4 میں سے 3 ریاستوں میں برتری حاصل: انڈین میڈیا

برطانوی خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق انڈیا میں آئندہ چھ ماہ میں عام انتخابات ہونے والے ہیں اور ریاستی انتخابات کے اب تک کے نتائج کو وزیر اعظم نریندر مودی کے لیے ایک ’اچھا اشارہ‘ کہا جا رہا ہے۔

انڈیا میں الیکشن کا عملہ حیدرآباد دکن میں 29 نومبر 2023 کو الیکٹرانک ووٹنگ مشین کا معائنہ کر رہا ہے جس کے ذریعے انڈیا میں انتخابات میں ووٹ ڈالے جاتے ہیں (اے ایف پی)

انڈین ذرائع ابلاغ کے مطابق ملک کی حکمران قوم پرست بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) اتوار کو ہونے والے اہم ریاستی انتخابات میں چار میں سے تین ریاستوں میں برتری حاصل کر رہی ہے۔

برطانوی خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق انڈیا میں آئندہ چھ ماہ میں عام انتخابات ہونے والے ہیں اور ریاستی انتخابات کے اب تک کے نتائج کو وزیر اعظم نریندر مودی کے لیے ایک ’اچھا اشارہ‘ کہا جا رہا ہے۔

راجستھان، مدھیہ پردیش، چھتیس گڑھ اور جنوبی ریاست تلنگانہ کی مرکزی ریاستوں نے گذشتہ ماہ مئی میں ہونے والے قومی انتخابات سے قبل صوبائی انتخابات کے آخری سیٹ میں ووٹ ڈالے۔ یہ نتائج ایسے وقت میں سامنے آ رہے ہیں جب نریندر مودی تیسری مدت کے لیے انتخاب لڑنا چاہتے ہیں۔

ٹی وی چینلوں پر ووٹوں کی گنتی کے رجحانات دکھائے جانے والے تینوں مرکزی ریاستوں میں بی جے پی آگے تھی۔

بی جے پی کے صدر جگت پرکاش نددا نے روئٹرز کو بتایا کہ ’ہم نے ہمیشہ کہا کہ ہم دل کی ریاستوں کو جیتیں گے۔ نتائج ہماری بہترین سیاسی حکمت عملی اور زمین پر کام کرنے کا نتیجہ ہیں۔‘

مودی ایک دہائی کے اقتدار میں رہنے کے بعد بھی کافی مقبول ہیں اور سروے بتاتے ہیں کہ وہ اگلے سال دوبارہ جیت جائیں گے۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

تاہم، کانگریس پارٹی کی قیادت میں حزب مخالف کی 28 جماعتوں کا اتحاد بی جے پی سے مشترکہ طور پر لڑنے کے لیے اکٹھا ہوا ہے، جس نے ایک نیا چیلنج سامنے رکھا ہے۔

بی جے پی کو اس وقت بھی دھچکا لگا تھا جب اس نے رواں سال کے آغاز میں بڑی جنوبی ریاست کرناٹک میں کانگریس سے شکست کھائی تھی۔

حزب اختلاف کی جماعتوں کے اتحاد کو انڈین نیشنل ڈیولپمنٹل انکلوسیو الائنس یا انڈیا کہا جاتا ہے۔ یہ اتحاد ریاستی انتخابات میں نمایاں نہیں ہو سکا اور یہ بی جے پی اور کانگریس کے درمیان براہ راست مقابلہ ہی سمجھا جا رہا ہے۔

چار ریاستوں میں 16 کروڑ سے زیادہ ووٹرز ہیں اور 543 رکنی پارلیمنٹ میں 82 نشستیں ہیں۔

مودی اور کانگریس کے رہنما، راہل گاندھی کی قیادت میں، ریاستوں کا چکر لگا کر، انتخابی ریلیوں سے خطاب کرتے ہوئے اور ووٹروں کو راغب کرنے کے لیے نقد ادائیگی، کسانوں کے قرضوں کی معافی، سبسیڈی اور انشورنس کور سمیت دیگر مراعات کا وعدہ کیا۔

سیاست دانوں اور تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ ریاستی انتخابات ہمیشہ عام انتخابات کے نتائج کو متاثر نہیں کرتے یا قومی ووٹر کے مزاج کی درست نشاندہی نہیں کرتے۔

قومی انتخابات سے پہلے ریاستی انتخابات کے آخری دور کے نتائج ماضی میں گمراہ کن رہے ہیں۔

چھوٹی شمال مشرقی ریاست میزورم میں بھی گذشتہ ماہ ووٹ ڈالے گئے تھے اور وہاں ووٹوں کی گنتی پیر کو ہوگی۔

زیادہ پڑھی جانے والی ایشیا