پاکستان اور سعودی عرب کا سرمایہ کاری کے طریقوں پر اتفاق ہو گیا: مرتضیٰ سولنگی

گوہر اعجاز خلیج تعاون کونسل میں فری ٹریڈ ایگریمنٹ (ایف ٹی اے) کو حتمی شکل دینے کے لیے ایک وفد کی قیادت کر رہے ہیں۔

پاکستان کے نگراں وزیر تجارت و صنعت گوہر اعجاز اس وقت سعودی عرب میں ہیں جہاں وہ سعودی قیادت اور کمپنیوں سے تجارت اور سرمایہ کاری میں دوطرفہ تعاون کو مضبوط بنانے کے حوالے سے بات چیت کر رہے ہیں (ڈاکٹر گوہر اعجاز/ ایکس)

پاکستان کے نگراں وزیر اطلاعات و نشریات مرتضیٰ سولنگی نے کہا ہے کہ پاکستان اور سعودی عرب کا سرمایہ کاری کے طریقوں پر اتفاق رائے ہو چکا ہے جس سے خلیج تعاون کونسل (جی سی سی) کے ساتھ آزاد تجارتی معاہدے کی توثیق کی راہ ہموار ہو گئی ہے۔

ایکس (سابقہ ٹوئٹر) پر اتوار کو جاری ایک پوسٹ میں مرتضیٰ سولنگی نے کہا کہ یہ پیش رفت گذشتہ 19 سالوں سے زیر التوا تھی۔

وفاقی نگران وزیر نے مزید لکھا: ’اگر اسے منظور کر لیا جاتا ہے تو جی سی سی کی جانب سے گذشتہ 15 سالوں میں کسی بھی ملک کے ساتھ یہ پہلا تجارتی اور سرمایہ کاری معاہدہ ہوگا۔‘

نگراں وزیر تجارت و صنعت گوہر اعجاز اس وقت سعودی عرب میں ہیں جہاں وہ سعودی قیادت اور کمپنیوں سے تجارت اور سرمایہ کاری میں دوطرفہ تعاون کو مضبوط بنانے کے حوالے سے بات چیت کر رہے ہیں۔

گوہر اعجاز خلیج تعاون کونسل میں فری ٹریڈ ایگریمنٹ (ایف ٹی اے) کو حتمی شکل دینے کے لیے ایک وفد کی قیادت کر رہے ہیں۔

ایک بیان میں نگران وزیر تجارت نے کہا ہے کہ یہ جی سی سی کے ساتھ اقتصادی تعلقات کو مضبوط کرنے کی حکومت کی کوششوں کے حوالے سے ایک بڑا قدم ہوگا۔

انہوں نے مزید کہا کہ سرمایہ کاری معاہدے کا ایک اہم حصہ ہے اور امید ہے کہ یہ جلد طے پا جائے گا۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

’توقع ہے کہ فری ٹریڈ ایگریمنٹ سے پاکستان اور جی سی سی کے درمیان تجارت اور سرمایہ کاری کو فروغ ملے گا‘۔

اس سے دونوں خطوں میں نئی ملازمتیں اور کاروبار کے مواقع پیدا ہونے کا بھی امکان ہے۔

متفقہ سرمایہ کاری کے اس باب کو اب منظوری کے لیے جی سی سی کے وزرا کے سامنے پیش کیا جائے گا، جو پہلے ہی میٹنگ کے ایجنڈے میں شامل تھا۔

جی سی سی سیکرٹریٹ کو چھ رکنی جی سی سی ممالک کی جانب سے معاہدے پر دستخط کرنے کا اختیار حاصل ہے۔

اس سے قبل گذشتہ ماہ 29 نومبر کو پاکستان کے مرکزی بینک نے اعلان کیا تھا کہ سعودی عرب جنوبی ایشیائی ریاست پاکستان کی معیشت کی مدد کے لیے تین ارب ڈالر کے ڈپازٹ کی مدت میں مزید ایک سال کے لیے توسیع کر رہا ہے۔

دوسری جانب پاکستان اور کویت نے 29 نومبر کو ہی فوڈ سکیورٹی، زراعت، ہائیڈل پاور، پانی کی فراہمی سمیت پاکستان کے مختلف شعبوں میں اربوں ڈالر کی سرمایہ کاری کے لیے معاہدوں پر دستخط کیے ہیں۔

زیادہ پڑھی جانے والی معیشت