غزہ میں قتل عام جاری ہے: منظرنامے اور توقعات کیا ہیں؟

مصر کا مسلسل دباؤ، اس کے علاقائی وزن اور فلسطینیوں اور اسرائیلیوں کے ساتھ اس کے تعلقات، غزہ میں محصور لوگوں کی تکالیف کو کم کرنے اور فوری انسانی امداد فراہم کرنے میں معاون ہے۔

20 اکتوبر 2023 کو غزہ کی پٹی کے ساتھ رفح بارڈر کراسنگ پر ہونے والے احتجاج میں مظاہرین نے غزہ کے ساتھ اظہار یکجہتی کے لیے پلے کارڈز اٹھا رکھے ہیں (اے ایف پی/ کیرلوس صلاح)

مسلسل 13ویں روز بھی راکٹ برس رہے ہیں، بمباری کا سلسلہ جاری ہے اور غزہ میں بغیر کسی وقفے کے قتل عام ہو رہا ہے۔ اہلی بپٹسٹ ہسپتال پر بمباری مکمل جنگی جرم ہے لیکن یہ اس سال سات اکتوبر کو طوفان الاقصیٰ آپریشن کے بعد فلسطینی عوام کی نسل کشی اور غزہ میں کیے جانے والے جنگی جرائم میں سے ایک ہے۔ تاہم سب سے اہم سوال باقی ہے۔

یعنی امریکہ کی قیادت میں وسیع پیمانے پر اور ایک ایسے قتل عام جسے مغربی حمایت حاصل ہے، کو کیسے روکا جا سکتا ہے؟

مغربی میڈیا، فوج اور سینسرشپ مغربی لبرل آزادی اور انسانی حقوق کے اصولوں کے منافی ہیں۔ مثال کے طور پر ’میٹا‘ سے جڑے پلیٹ فارموں نے فلسطینیوں کے حقوق کی حمایت اور حمایت کے بارے میں لکھی گئی ہر بات اور فلسطینی عوام کے قتل عام کو روکنے یا اسرائیلی جنگی جرائم کی مذمت کرنے کی ہر اپیل کو ہٹا دیا ہے۔ مغربی ذرائع ابلاغ کے اہم اداروں میں قابض حملہ آور وہ متاثرہ فریق بن گئے جسے ’اپنا دفاع کرنے کا حق حاصل ہے۔‘

لیکن اس سانحے نے انصاف پر مبنی فلسطینی کاز کو عالمی واقعات میں سب سے آگے لا کھڑا کیا۔ دنیا روس یوکرین جنگ کو بھول گئی، سوڈان کا تباہ کن سانحہ اور جنگ بڑی خبریں نہیں رہیں۔ افریقی بغاوتوں اور جنگوں میں کمی آئی، اور نئے ڈیجیٹل میڈیا نے عالمی رائے عامہ کی سچائی کی حمایت میں رہنمائی کرنے میں مؤثر کردار ادا کیا یعنی فلسطین۔

لبنان اور شام کی سرحدوں پر شمالی محاذ ابھی تک غزہ کے عوام کی حمایت میں نہیں کھولا گیا۔ اس مضمون کی تحریر کے وقت اشارے حزب اللہ اور اسرائیل کے درمیان ہراسانی اور کنٹرول شدہ جھڑپوں کی نشاندہی کرتے ہیں۔ کچھ مبصرین کو توقع ہے کہ برطانیہ اور کینیڈا جیسے مغربی ممالک ’کنٹرولڈ جھڑپوں‘ سے زیادہ اپنے شہریوں سے لبنان چھوڑنے کا مطالبہ کریں گے۔

کئی ہفتے سے ’مزاحمت کا ہتھیار‘ اور ’مزاحمت کے محور‘ حلب اور دمشق کے ہوائی اڈوں پر وقفے وقفے سے اسرائیلی بمباری کا نشانہ بن رہے ہیں جس کی وجہ سے وہ خدمات فراہم کرنے سے قاصر ہیں۔ مبصرین کو یقین نہیں ہے کہ لبنان مزاحمت کے جس ہتھیار کو چھپا رہا ہے تاکہ وہ محفوظ رہے، وہ لڑائی میں بڑے پیمانے پر استعمال کیا جائے گا کیوں کہ یہ اسرائیلی جارحیت پہلے ہی تین ہفتے سے جاری ہے۔ مبصرین نے غزہ کے بچوں کو یہ نعرے لگاتے ہوئے دیکھا تھا کہ ’آج کے بعد کوئی دن نہیں، اے مزاحمت کے ہتھیار۔‘

مشرقی محاذ جو تقریباً 240 کلومیٹر طویل ہے وہاں جنگ  کا امکان نہیں ہے۔ اردن نے 1993 میں فلسطین کے ’اوسلو معاہدے‘ پر دستخط کرنے کے بعد 1994 میں ’اراوا معاہدے‘ پر دستخط کیے اور جب اردن اور فلسطین نے اعلان کیا کہ ’امن ایک سٹریٹیجک آپشن ہے‘ تو انہوں نے کہا کہ وہ مزاحمتی تحریک کو ہمیشہ کے لیے ختم کر دیں گے۔ اردن کا یہ ماننا نہیں ہے کہ وہ اسرائیلی فوج کا مقابلہ کرنے کی فوجی صلاحیت رکھتا ہے۔ ایسی کوئی عرب قومی جنگ کی جامع قرارداد موجود نہیں جو اردن کی حمایت میں ہو اس صورت میں اگر وہ اسرائیل کے ساتھ جنگ کا محاذ کھول دیتا ہے۔

مصر، عرب اور اسلامی جنگوں میں تاریخ اور عظمت لیے ہوئے سب سے اہم اور سب سے بڑا ملک ہے۔ مصر تمام عربوں کا مستقبل تھا اور صلیبیوں، تاتاروں اور عرب سرزمین پر شمال اور مشرق سے آنے والے تمام حملوں کو پسپا کرنے والا آخری محاذ تھا۔ لیکن مصر ممکنہ راستوں میں سے ایک ہے لیکن وہ جو بھی راستہ اختیار کرے گا، ہمیشہ ایسے لوگ ہوں گے جو اس پر تنقید، بحث اور شکایت کریں گے۔ یہ فیصلہ ہر کسی کو مطمئن نہیں کر سکتا ہے اور ایسے لوگ ہوں گے جو اس سے ناخوش ہوں گے۔

پہلی بات حالات کا اسی طرح جاری رہنا اور فلسطینیوں کے المیے اور رفح کی دیواروں کے قریب ہونے والے قتل عام کو رکوانے کے لیے مؤثر اقدامات میں ناکامی ہے۔ یہ ایک ایسا منظر نامہ ہے جسے مصر نے ہر سطح پر مسترد کر دیا ہے اور یہ زیادہ دیر تک جاری نہیں رہے گا۔ یہاں یہ ذکر کرنے کی ضرورت نہیں ہے کہ یہ حق کی حمایت اور باطل کو روکنے میں مصر کے عرب ازم، عظمت اور تاریخ کے شایان شان نہیں ہے۔

دوسرا یہ کہ مصر فلسطینیوں کے لیے رفح کراسنگ کھول کر انہیں اپنی زندگی بچانے سمیت صحرائے سینا میں تارکین وطن کی زندگیاں بچانے کا دوبارہ موقع فراہم کرے۔ اسرائیلی وزیر اعظم نتن یاہو اور انتہا پسند صہیونی غزہ کو اس کے مکینوں سے خالی کروا کے صحرائے سینا میں بے دخل کر کے ایسا ہی چاہتے ہیں۔

اس سے مصر پر یہ الزام بھی لگایا جائے گا کہ وہ فلسطینیوں کی آبادکاری کے منصوبے اور نئے نکبہ میں شریک ہے۔ اس کا مطلب ہے نئی فلسطینی پناہ گاہ اور نئے فلسطینی کیمپوں کا المیہ، جسے مصر کسی صورت قبول نہیں کرے گا۔

تیسرا یہ کہ مصر اسرائیل کے ساتھ جنگ کرے اور یہ نہ تو مصر اور نہ ہی عرب دنیا کے خیال میں ہے۔ فوجوں، طیارہ بردار بحری جہازوں اور مغربی بیڑوں کی منتقلی کا مقصد جنگ کو وسعت نہ دینا اور اس میں نئے فریقوں کو داخل نہ کرنا ہے۔ مصر کے معاشی حالات کا ذکر نہیں کیا جا رہا جو اس مرحلے پر مصر کو جنگی معیشت میں داخل ہونے کی اجازت نہیں دیتے۔

چوتھا، جو اس وقت تک عملی طور پر ممکن ہے وہ یہ کہ مصر جسے علاقے میں اہمیت حاصل ہے اور اس کے فلسطین اور اسرائیل کے ساتھ تعلقات ہیں، وہ غزہ میں محصور لوگوں کے مسائل کم کرنے کے لیے مسلسل دباؤ ڈالے اور انہیں امداد فراہم کرے۔ اسرائیلی جارحیت اور قتل عام کو رکوانے کے لیے مصر کا مسلسل سفارتی دباؤ ہے۔ مصر مسلسل ایسا ہی کر رہا ہے۔

ہفتے کو ایک بین الاقوامی کانفرنس منعقد کی جائے گی جس میں کویت اور سعودی عرب سمیت متعدد عرب ممالک، ترکی، یونان، اٹلی، روس اور اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل انتونیو گوتیریش سمیت غیر عرب ممالک شریک ہوں گے۔ ہم نے امریکی وزیر خارجہ اینٹونی بلنکن کے ساتھ مصری حکام کی ملاقاتیں اور مصری صدر عبدالفتح السیسی کی جانب سے امریکی صدر جو بائیڈن کی ملاقات منسوخ کرنے میں مصر کی ناراضی دیکھ چکے ہیں۔ جو بائیڈن نے غزہ کے خلاف جاری جارحیت کو عمان میں مسترد کر کے مصر کے موقف کو مضبوط کیا۔

جیسا کہ سب جانتے ہیں کہ ماضی میں غزہ کی تمام جنگیں قاہرہ کی طرف سے جارحیت رکوانے کے ساتھ ختم ہوئیں نہ کہ کہیں اور سے۔ ’تمام راستے قاہرہ کی طرف جاتے ہیں۔‘

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

غزہ پر روز بروز اسرائیلی جارحیت کا تسلسل انسانی حقوق کے اصولوں کے حوالے سے مغربی منافقت کو بے نقاب کرتا ہے اور ’وجود کے دفاع حق‘ کی حق کی آڑ میں قابض طاقت کے ساتھ کھڑے ہونے کے مغرب کا باضابطہ مؤقف سامنے لاتا ہے جو ایک الٹی منطق ہے جسے ہر اس ذی شعور شخص اور انسان کی طرف سے تضحیک اور غصے کا سامنا کرنا پڑتا ہے جو تھوڑی سی اخلاقی ذمہ داری کا بھی مظاہرہ کرے۔

اس جنگ کے خاتمے کے بعد اصل ’تباہ کار اور ندیدے‘ بن یامین نتن یاہو ہوں گے جو جانتے ہیں کہ قطع نظر اس کے کہ جارحیت کا خاتمہ کیسے ہوتا ہے، اور شاید وہ وہی ہیں جو سب سے زیادہ چاہتے ہیں کہ جنگ بغیر کسی اختتام کے جاری رہے۔ احتساب اور محاسبے کے دروازے کھلے رہیں گے۔

 ’طوفان الاقصیٰ‘ آپریشن کیسے کیا گیا؟

 1996 میں وزیر اعظم بننے کے بعد سے انہوں نے اپنے ووٹروں سے جو ’بیتاکون‘ (سکیورٹی) کا وعدہ کیا تھا، وہ کہاں ہے؟ حماس کے لوگ لوہے، الیکٹرانک، مٹی اور لوہے کے گنبد کی باڑوں سے کیسے داخل ہوئے؟ وہ حماس کی زیر حراست یرغمالیوں اور جنگی قیدیوں کو کیسے واپس لائیں گے؟ یرغمالیوں اور قیدیوں کی رہائی کے بدلے وہ کیا قیمت ادا کریں گے؟

ہمیں یاد رکھنا چاہیے کہ جنگ اب بھی شدید ہے۔ جارحیت، المیہ اور قتل عام جاری ہے۔ اس لیے مستقبل میں کیا ہو سکتا ہے اس کے بارے میں کوئی بھی پیش گوئی یا اندازے درست نہیں ہو سکتے ہیں کیوں کہ صورت حال تبدیل ہو سکتی ہے۔ اگر جنگ کا دائرہ پھیل گیا یا کوئی نیا، غیر متوقع ہتھیار استعمال کیا گیا تو حالات اس طرح بدل سکتی ہیں جن کی ہمیں توقع نہیں۔

 ’طوفان الاقصیٰ‘ جیسے اہم آپریشن کے بعد کچھ بھی ممکن ہے اور ہم اس بارے میں یقین سے نہیں کہہ سکتے کہ آگے کیا ہو گا۔ کل غیر یقینی ہے، اور ہمیں انتظار کرنا ہو گا اور دیکھنا ہو گا۔

نوٹ: یہ تحریر کالم نگار کی ذاتی آرا پر مبنی ہے، جس سے انڈپینڈنٹ اردو کا متفق ہونا ضروری نہیں۔

زیادہ پڑھی جانے والی نقطۂ نظر