جنسی ہراسانی کے الزامات: نیویارک کے گورنر عہدے سے مستعفی

63 سالہ اینڈریو کومو نے یہ استعفیٰ ایک ایسے وقت میں دیا ہے جب ایک ہفتہ قبل نیویارک کے اٹارنی جنرل نے ایک تحقیقات کے نتائج جاری کیے تھے، جس کے مطابق کومو نے کم از کم 11 خواتین کو جنسی طور پر ہراساں کیا۔

نیویارک کے مستعفی ہونے والے  گورنر اینڈریو کومو (فائل فوٹو: اے ایف پی)

نیویارک کے گورنر اینڈریو کومو نے جنسی ہراسانی کے الزامات کے بعد منگل کو اپنے عہدے سے استعفیٰ دینے کا اعلان کر دیا۔

خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس (اے پی) کے مطابق 63 سالہ ڈیموکریٹ نے جان بوجھ کر خواتین کو ہراساں کرنے کے الزامات سے انکار کیا، لیکن انہوں نے کہا کہ اس ’بہت گرم‘ سیاسی آب و ہوا میں لڑنا ریاست کو مہینوں تک ہنگاموں کا نشانہ بنائے رکھے گا۔

کومو نے ایک ٹیلی ویژن خطاب میں کہا: ’اس صورت حال میں مدد کرنے کا بہترین طریقہ یہ ہے کہ اگر میں ایک طرف ہٹ جاؤں اور حکومت کو دوبارہ حکومت میں آنے دوں۔‘

واضح رہے کہ گورنر اینڈریو کومو کو مواخذے کے ذریعے ہٹانے کا اعلان کیا گیا تھا اور تقریباً پوری ڈیموکریٹک سٹیبلشمنٹ ان کے خلاف ہو گئی تھی، جس کے بعد صدر جو بائیڈن بھی اس میں شریک ہوگئے تھے۔

گورنر نے یہ استعفیٰ ایک ایسے وقت میں دیا ہے جب ایک ہفتہ قبل نیویارک کے اٹارنی جنرل نے ایک تحقیقات کے نتائج جاری کیے تھے، جس کے مطابق کومو نے کم از کم 11 خواتین کو جنسی طور پر ہراساں کیا۔

تفتیش کاروں نے کہا کہ انہوں نے خواتین کو ناپسندیدہ بوسے دیئے، ان کے سینوں یا کولہوں کو پکڑا یا دوسری صورت میں انہیں نامناسب طریقے سے چھوا، ان کی ظاہری شکل اور ان کی جنسی زندگی کے بارے میں معنی خیز تبصرے کیے اور کام کے ماحول کو ’خوف سے بھرپور‘ بنا دیا۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

کومو کے استعفے کے بعد 62 سالہ ڈیموکریٹ کیتھی ہوکل اور بفیلو کے علاقے سے کانگریس کی سابق رکن ریاست کی 57 ویں گورنر بنیں گی۔ وہ اس عہدے پر فائز ہونے والی پہلی خاتون گورنر ہوں گی۔

انہوں نے کہا کہ کومو کا استعفیٰ ’درست کام اور نیو یارک کے بہترین مفاد میں ہے۔‘

'می ٹو' دور کے  اس سکینڈل نے نہ صرف ایک کیریئر بلکہ ایک خاندان کو مختصر کر دیا ہے۔ کومو کے والد ماریو کومو 1980 اور 90 کی دہائی میں گورنر تھے اور خود اینڈریو کوومو کا اکثر ممکنہ صدارتی امیدوار کے طور پر ذکر کیا جاتا تھا۔ وہ 2022 میں دوبارہ انتخاب لڑنے کا ارادہ بھی کر رہے تھے۔

اگرچہ ری پبلکنز نے کومو کے جانے پر خوشی کا اظہار کیا لیکن پھر بھی مواخذے پر زور دیا، جو انہیں دوبارہ عہدے کے لیے انتخاب لڑنے سے روک سکتا ہے۔

زیادہ پڑھی جانے والی امریکہ