قومی سلامتی پالیسی کیسے عام شہری کے حقوق کا تحفظ کرسکتی ہے؟

پاکستان کی پہلی قومی سلامتی پالیسی ملک کے لیے ایک جامع سیکیورٹی فریم ورک بیان کرتی ہے، جس کا مقصد لوگوں کی حفاظت، وقار اور خوشحالی کو یقینی بنانا ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے جمعے کو وفاقی حکومت کی تیار کردہ ملک کی پہلی قومی سلامتی پالیسی کا اعلان کیا (کریڈٹ: وزیراعظم آفس)

وزیراعظم عمران خان نے جمعے کو وفاقی حکومت کی تیار کردہ ملک کی پہلی قومی سلامتی پالیسی کا اعلان کیا، جس میں  پاکستان کے عام شہری کے معاشی اور عام تحفظات کو مرکزی اہمیت حاصل ہے۔

پالیسی کے مجموعی طور پر 110 میں سے تقریبا 50 صفحات پر مشتمل ایک مختصر ورژن کو جاری کیا گیا ہے۔

اس دستاویز کے مطابق پاکستان کی پہلی قومی سلامتی پالیسی ملک کے لیے ایک جامع سیکیورٹی فریم ورک بیان کرتی ہے، جس کا مقصد لوگوں کی حفاظت، وقار اور خوشحالی کو یقینی بنانا ہے۔

مختلف شعبہ جات کا تنقیدی تجزیہ پالیسی کی تفصیلی دستاویز میں موجود ہے اور اسی طرح پالیسی کے نفاذ کی جانب پیش رفت کی نگرانی اور جائزہ لینے کے لیے عمل درآمد کا فریم ورک کو بھی عوامی ورژن میں شامل نہیں کیا گیا۔

دستاویز میں قومی ہم آہنگی، معیشت، دفاع، داخلی سلامتی، خارجہ پالیسی اور انسانی سلامتی کے باب شامل ہیں۔

مندرجہ ذیل سطور میں ہم اپنے قارئین کے لیے پاکستان کی پہلی قومی سلامتی کے چند اہم نقاط پیش کر رہے ہیں، جن سے یہ واضح ہو کہ یہ پالیسی  شہریوں اور ان کے تحفظ سے متعلق کیا بیان کرتی ہے۔

  •  قومی سلامتی پالیسی قومی سلامتی کے روایتی اور غیر روایتی عناصر کے باہمی ربط کو تسلیم کرتے ہوئے، آنے والی دہائیوں کے لیے ایک مربوط، متحد، اور ذمہ دار سیکیورٹی پالیسی کو ترتیب دینے کے لیے حکومتی نقطہ نظر پیش کرتی ہے، جس کے ذریعے قومی سلامتی کے چیلنجز کو مواقعوں میں تبدیل کیا جا سکتا ہے۔
  •  قومی اہمیت کے معاملات اور ان کے نفاذ سے متعلق پالیسیاں ہمیشہ معاشرے کے تمام طبقات کی آرا اور خدشات پر مشتمل ہونی چاہیے، کیونکہ جامع پالیسی کی تشکیل ریاست اور شہری کے درمیان مثبت تعلق پیدا کرتی ہے اور حکومتی پالیسی کو جوابدہ بناتی ہے، اس لیے قومی طاقت کے تمام عناصر بشمول حکومتی ادارے اور محکمے، نجی اداروں اور سول سوسائٹی کا رخ پاکستان کے اہم قومی سلامتی کے مفادات کی تکمیل کی طرف کر دیا جائے۔
  •  قومی سلامتی پالیسیوں کا تسلسل جمہوری عمل کے ذریعے قومی سلامتی کے اہم امور پر وسیع اتفاق رائے پیدا کرے گا جنہیں سیاسی اختلافات سے متاثر نہیں ہونا چاہیے۔
  • پاکستان کے تنوع کو پروان چڑھانے، رواداری کو فروغ دینے اور تعلیمی اور ثقافتی اداروں کے ذریعے قومی ہم آہنگی کو فروغ دینے اور ایک جامع قومی گفتگو کے لیے کوششیں کی جائیں گی، جب کہ ملک میں سماجی و اقتصادی عدم مساوات دور کرنے کے لیے فلاح و بہبود پر مرکوز سماجی فنڈز کو مزید مضبوط کرنے، چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروباری شعبے کے لیے روزگار کے مواقع پیدا کرنے کے لیے وقف کوششوں، اور رسمی اور غیر رسمی معیشت کے درمیان فرق سے پیدا ہونے والے بگاڑ کو دور کرنے کی ضرورت ہو گی۔
  • گورننس کو بہتر بنانے اور اداروں کی صلاحیتوں میں اضافے کے لیے رابطہ کاری کے طریقہ کار کو مزید مضبوط کرنے کی ضرورت ہوگی، جیسے وزارت بین الصوبائی رابطہ، مشترکہ مفادات کی کونسل، قومی مالیاتی کمیشن، اور قومی اقتصادی کونسل وغیرہ، جب کہ صوبائی اور مقامی حکومتوں کے درمیان ذمہ داریوں کی موجودہ تقسیم کو ضلعی اور نچلی سطحوں پر زیادہ بااختیار اور ذمہ دار گورننس کے ذریعے بہتر بنایا جا سکتا ہے۔
  •  جمہوری اصولوں پر عمل کرتے ہوئے پاکستان کے وفاقی نظام کو مضبوط کیا جائے اور وفاقی اکائیوں اور گلگت بلتستان اور پاکستان کے زیر انتظام کشمیر کے علاقوں کے درمیان ہم آہنگی کو ہر سطح پر دانشمندانہ پالیسی کے نفاذ کے ذریعے یقینی بنایا جائے۔
  •  بہتر پیداواری صلاحیت، سرمایہ کاری، اور بچت پر توجہ مرکوز کرتے ہوئے، بیرونی عدم توازن کو دور کرنے، اور تیز مالیاتی انتظام کے ذریعے کم آمدنی والے ممالک کی صف میں شامل ہونے کے لیے اقتصادی پالیسیوں کو فروغ دینا ہو گا، جب کہ تجارت اور رابطے کے لیے پاکستان کے جیو اکنامک مقام کو چینلائز کرنے کی ضرورت ہو گی، اور مساوی ترقیاتی اقدامات کو ترجیح دینا ہو گی جس سے سب سے زیادہ شہریوں اور کم ترقی یافتہ علاقوں کی ترقی پر توجہ مرکوز رہے گی۔
  • توانائی کی طلب کے تناسب سے پائیدار ماحول دوست توانائی کی ترقی کو فروغ دے کر اصلاح کی جائے گی۔
  •  ایک ایسے تعلیمی نظام کو فروغ دیا جائے جو پرائمری سطح پر سستی معیاری تعلیم تک رسائی فراہم کرے، اور ایک اعلیٰ تعلیمی نظام جو عالمی سطح پر مسابقتی ہو اور علم کی تخلیق، قابل فروخت مہارت، اور سائنس اور ٹیکنالوجی پر توجہ مرکوز کر سکے۔
  •  مستقبل کے چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے خلائی ٹیکنالوجی اور اس کے اطلاق کو مضبوط اور بہتر بنایا جائے، اور معلومات اور سائبر سیکیورٹی، ڈیٹا سیکیورٹی، اور نگرانی کی صلاحیت کو بڑھاتے ہوئے جنگی غلط معلومات اور اثر و رسوخ کی کارروائیوں کا مقابلہ کیا جائے، جب کہ قومی مفادات کو محفوظ بنانے کے لیے بین الاقوامی ٹیکنالوجی ایکو سسٹم کے ساتھ مؤثر طریقے سے منسلک ہوتے ہوئے حکومتی اور شہریوں کے ڈیٹا کی حفاظت اور رازداری کو یقینی بنایا جائے۔
  •  تمام شہریوں کے جان و مال کے تحفظ کو یقینی بنانے کے لیے ملک کے تمام حصوں میں ریاست کی رٹ کو یقینی بنایا جائے، جب کہ دہشت گردی، پر تشدد قوم پرستی، انتہا پسندی، فرقہ واریت اور منظم جرائم سے نمٹنے کو ترجیح دی جائے، اور ملک کو فکری سرگرمیوں، کاروبار، سرمایہ کاری اور مہمانوں کے لیے ایک محفوظ مقام بنایا جائے۔
  •  سٹریٹیجیک اور اقتصادی مفادات کی خاطر مشترکہ ہم آہنگی کی بنیاد پر ایک فعال، عملی، اور ناقابل معافی نقطہ نظر کے ذریعے عالمی طاقتوں کے ساتھ وسیع البنیاد تعلقات استوار کیے جائیں، جب کہ ممکنہ خطرات کو کم سے کم کرنا، خارجہ پالیسی کے متنوع اختیارات کو برقرار رکھنا، اور خارجہ پالیسی کے اقدامات میں اقتصادی سفارت کاری کے کردار کو بڑھایا جائے۔ باہمی احترام اور خود مختار مساوات کی بنیاد پر اپنے قریبی پڑوس میں تعلقات کو معمول پر لانے کے ذریعے علاقائی امن کی تلاش کی جائے۔
  •  بڑے شہروں پر نقل مکانی کے دباؤ کو کم کرنے کے لیے آبادی کے انتظام، شہری منصوبہ بندی، دیہی معیشت کو دوبارہ متحرک کرنے اور چھوٹے شہروں اور قصبوں کی مساوی ترقی کو یقینی بنا کر پائیدار ترقی کے ایجنڈے کی طرف پیش رفت حاصل کی جائے۔ یکساں طور پر، مہارتوں کی نشوونما اور انٹرپرینیورشپ کو فروغ دینے کے لیے نوجوانوں پر مرکوز پالیسیوں پر عمل کریں۔
  •  معیاری صحت کی دیکھ بھال کو مزید سستا بنانے کے علاوہ بیماریوں کی نگرانی اور روک تھام کو مزید مضبوط، غذائی قلت اور سٹنٹنگ کو دور کرنے کی کوششیں، مرکزی دھارے میں آنے والی احتیاطی صحت کی دیکھ بھال، اور ایک صحت مند اور متحرک پاکستان کے لیے وبائی امراض اور ان کے ردعمل کا طریقہ کار وضع کیا جائے۔
  •  زندگی کے تمام شعبوں میں خواتین اور ٹرانس جینڈر افراد کی آزادانہ اور محفوظ شرکت کو فعال بنایا جائے، فیصلہ سازی کے فورمز، پالیسی سازی اور امن، تحفظ اور سلامتی پر کام کرنے والے اداروں میں خواتین کی زیادہ سے زیادہ شمولیت کو یقینی بنایا جائے، اور شہریوں کو بالخصوص خواتین اور خواجہ سراؤں کو صنفی بنیادوں پر تشدد سے بچایا جائے۔

’سٹیک ہولڈرز میں اتفاق رائے کے لیے نیک نیتی چاہیے‘

پاکستان کے معروف اسلام آباد پالیسی ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کے ڈائریکٹر حسین ندیم کا کہنا ہے کہ پہلی بار پاکستان کے قومی سلامتی کے وژن کو نہ صرف بیان کیا گیا ہے بلکہ اس بیان میں جیو اکنامکس کو جیوپالیٹکس پر ترجیح دی گئی ہے۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

حسین ندیم کا کہنا تھا: ‘ایک ایسی دنیا میں جہاں سلامتی اور ترقی ایک دوسرے سے جڑے ہوئے ہیں، اس پالیسی نے قومی سلامتی کے کلیدی مقاصد کو حاصل کرنے کے لیے انسانی سلامتی کے پہلو کو ایک فریم ورک کی شکل دی ہے۔

‘پالیسی کا سب سے مشکل عنصر واقعتاً ایک ایسے ملک میں قومی اتفاق رائے پیدا کرنا ہے جو متعدد سطحوں پر پولرائزڈ ہے۔ لہٰذا، تمام بڑی سیاسی جماعتوں اور اسٹیک ہولڈرز کو پالیسی پر آن بورڈ کرنے کے لیے نیک نیتی کی ضرورت ہے۔ ایسا کرنے کے لیے حکومت کو حزب اختلاف کی سیاسی جماعتوں کو ساتھ بیٹھنے کی پیشکش کرنی پڑ سکتی ہے تاکہ وہ قومی سلامتی کے بنیادی اصولوں پر متفق ہوں۔’

زیادہ پڑھی جانے والی پاکستان