میکارتھی: رپبلکن اپنے ہی رہنما کو سپیکر کیوں بننے نہیں دے رہے؟

امریکی ایوان نمائندگان نے بدھ کی شام کو اپنا اجلاس نئے سپیکر کا انتخاب کیے بغیر ملتوی کر دیا۔

امریکی نمائندے کیون میکارتھی 4 جنوری 2023 کو واشنگٹن ڈی سی میں یو ایس کیپیٹل میں امریکی ایوان نمائندگان کے فلور پر امریکی نمائندے مارجری ٹیور گرین سے بات کر رہے ہیں (اے ایف پی/ اولیور ڈولیری)

سو سال میں پہلی بار امریکی ایوان نمائندگان میں پہلے راؤنڈ کی ووٹنگ کے بعد سپیکر کا انتخاب نہ ہوسکا اور چھ ناکام کوششوں کے بعد اجلاس ملتوی کرنا پڑا ہے۔

ایوان میں رپبلکن رہنما کیون میک کارتھی نے نومبر کے وسط مدتی انتخابات میں اپنی پارٹی کو 222 سیٹوں کے ساتھ ڈیموکریٹس کی 213 کے مقابلے میں ایک چھوٹی سی فتح دلائی۔ یہ کانگریس کے ایوان زیریں میں رپبلکنز کے لیے اپنی قانون سازی کی طاقت کا مظاہرہ کرنے کا موقع ہونا تھا۔ اس کی بجائے، جو کچھ ہوا وہ طنز اور انتشار تھا۔

تین بیلٹ کے بعد کیون ایوان کے اکثریتی ارکان کی حمایت حاصل کرنے میں ناکام رہے، انہیں سپیکر بننے کے لیے 218 ووٹ درکار تھے۔ پہلے دو بیلٹس میں وہ 203 ووٹ لینے میں کامیاب ہوئے تاہم ان کی اپنی پارٹی کے 19 ارکان نے ان کے خلاف ووٹ دیا۔ تیسرے بیلٹ میں یہ تعداد بڑھ کر 20 ہوگئی۔ ان الگ ہونے والے رپبلکنز نے اپنے پسندیدہ امیدوار – اوہائیو کے کانگریس مین جم جارڈن کو تجویز کیا اور ووٹ دیا۔

جم جورڈن نے، جو کہ ٹرمپ کے سخت دائیں بازو کے حامی ہیں، دوسرے بیلٹ سے قبل میکارتھی کو نامزد کیا تھا۔ جم خود اقرار کر چکے ہیں کہ ان کے سپیکر بننے کا ’کوئی امکان نہیں۔‘

ریپبلکن صفوں کے اندر سے کیون میک کارتھی کی مخالفت ’فریڈم کاکس‘ کے اراکین کی طرف سے کی جا رہی ہے - جو انتہائی قدامت پسند ایوان کے اراکین کا ایک گروپ ہے۔ کیون نے اس دھڑے کو اہم رعایتیں دی تھیں، جن میں طریقہ کار کی اصلاحات پر اتفاق کرنا بھی شامل ہے جو فیصلہ سازی کی طاقت کی مرکزیت کا خاتمہ کرے گی اور ’کرسی خالی کرنے‘ کی تحریک پر ووٹ ڈالنے کی اجازت دے گی، جس کا مقصد درحقیقت، سپیکر کو ہٹانا ہوگا۔

اقتدار کے لیے چیلنجز

یہ کیوں ضروری ہے؟ ایوانِ نمائندگان کا اجلاس سپیکر کے بغیر نہیں ہو سکتا۔ یہ واحد قیادت کی پوزیشن ہے جس کا ذکر امریکی آئین میں کیا گیا ہے۔ اس دوران حکومت کا کاروبار مفلوج ہوکر رہ گیا ہے۔ ہاؤس کمیٹیوں کو باضابطہ نہیں بنایا جا سکتا اور کانگریس کے اراکین تکنیکی طور پر ممبر نہیں ہیں کیونکہ جب تک یہ سب مکمل نہیں ہو جاتا وہ رسمی طور پر حلف نہیں اٹھا سکتے۔

چاہے کیون میک کارتھی رپبلکن باغیوں میں سے چند کو مزید رعایتوں کے ساتھ جیتنے میں کامیاب ہو جائیں یا نہیں، اس شکست نے ان کی طاقت کی بنیاد اور پارٹی کو اکٹھا کرنے کی صلاحیت کو کمزور کر دیا ہے۔ شکاگو یونیورسٹی کے ماہر سیاسیات روتھ بلوچ روبن نے کہا کہ کیون میکارتھی ’بنیادی طور پر اپنی پارٹی کے ایک حصے کے یرغمال ہیں۔‘

ڈیموکریٹس بمشکل اپنی خوشی کو چھپا سکتے تھے جب وہ یہ سب ان کے سامنے ہوتے دیکھے رہے تھے۔ ان کے ارکان چیمبر میں ڈیموکریٹ رہنما، نیویارک کے نمائندے حکیم جیفریز کے مضبوطی سے پشت پر رہے۔ صدر جو بائیڈن کی ممکنہ طور پر 2024 کے دوبارہ انتخابی مہم کے حکمت کار رپبلکن پارٹی کے اندر موجود انتشار سے فائدہ اٹھائیں گے اپنی مہم کے لیے استحکام اور ذمہ داری کا پیغام تیار کیا جا سکے۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

سپیکر کے انتخاب میں رپبلکن کی ناکامی نے بھی سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے اثر و رسوخ پر دوبارہ قومی سطح پر روشنی ڈالی ہے۔ 6 جنوری 2021 کو یو ایس کیپیٹل پر حملے کے بعد ٹرمپ/میکارتھی کے تعلقات میں ایک مختصر سی پھوٹ پڑ گئی۔ کیون میک کارتھی نے ابتدائی طور پر سابق صدر پر بغاوت پر اکسانے کا الزام لگایا تھا لیکن فوری طور پر یو ٹرن لے لیا اور خود کو ٹرمپ کے کٹر حامی کے طور پر کھڑا ک دیا۔

ٹرمپ نے پچھلے مہینے سپیکر شپ کے لیے کیون کی عوامی طور پر تائید کی تھی۔ 3 جنوری کو پوچھے جانے پر تاہم اگر وہ اب بھی ان کی حمایت کرتے ہیں، تو سابق صدر نے جواب دیا: ’ہم دیکھیں گے کہ کیا ہوتا ہے۔‘ اس استدلال نے صرف رپبلکن باغیوں کی حوصلہ افزائی کی، جو ٹرمپ کے وفادار بھی ہیں۔

چوتھے بیلٹ سے پہلے ٹرمپ نے اپنے سوشل میڈیا پلیٹ فارم (ٹروتھ سوشل) پر ہاؤس رپبلکنز سے کیون میک کارتھی کو ووٹ دینے کا مطالبہ کیا۔ ٹرمپ، اب اپنی پارٹی پر کنٹرول حاصل کرنے کے لیے جدوجہد کر رہے ہیں جو کبھی ان کے پاس تھا، وہ اپنی سیاسی مطابقت کو میک کارتھی کی قسمت سے جوڑ رہے ہیں۔

الیکشن کب تک چل سکتا ہے؟

ایوان نمائندگان کے ارکان اس وقت تک کوشش جاری رکھیں گے جب تک کہ وہ کوئی فیصلہ نہیں کر لیتے۔ سپیکر شپ کو طے کرنے کے لیے ووٹنگ کا سب سے طویل سلسلہ 1856 میں پیش آیا تھا، جب ناتھانیئل پرینٹس بینکس نے 133 ووٹوں کے بعد مکمل اکثریت کی بجائے اراکین کی پلوریلٹی کی بنیاد پر کامیابی حاصل کی۔

اصولی طور پر سپیکر کے لیے یہ تازہ ترین ووٹ کا سلسلہ دنوں یا ہفتوں تک چل سکتا ہے۔ تعطل کو حل کرنے کا ایک غیر امکانی منظر نامہ یہ ہے کہ 1856 کی مثال کی پیروی کی جائے اور قانون سازوں کو ایک ایسی قرارداد منظور کرنے کی اجازت دی جائے جو ایک سپیکر کو سادہ اکثریت کی بجائے کثرت رائے سے دوبارہ منتخب ہونے کی اجازت دے گی۔ لیکن یہرپبلکن ہاؤس کی قیادت کے لیے ناقابل یقین حد تک خطرناک ہو گا، کیونکہرپبلکن ووٹ کی تقسیم کے نتیجے میں ڈیموکریٹ رہنما حکیم جیفریز کو سپیکر کا عہدہ سونپ دیا جا سکتا ہے۔

ہاؤس رپبلکن پارٹی اب ہنگامہ حالت کا شکار ہے اور کیون میک کارتھی کا کہنا ہے کہ وہ ایک طرف نہیں کھڑے ہوں گے۔ الٹرا کنزویٹوز ایک پرعزم کاکس ہے، جو بظاہر حکومت کی قانون ساز شاخ کو ناکارہ بنانے کے منفی نظریات کی پرواہ نہیں کرتی۔ اس کے بعد کیا ہوتا ہے اور رپبلکن دراڑ کی وجہ سے پیدا ہونے والی فرقہ وارانہ تقسیم ان کے ایوان کی اکثریت کو ناقابل عمل بنا سکتی ہے۔

یہ مضمون اس سے قبل دی کنورشنسٹ میں شائع ہوچکا ہے۔

زیادہ پڑھی جانے والی امریکہ