عراقی سیاست میں صدام حسین کی بیٹی کی واپسی؟

عراقی سیاست میں رغد صدام حسین کی واپسی کے امکان نے عراقی ممبران پارلیمینٹ کے سخت احتجاج کو جنم دیا، یہ تنازع العربیہ ٹی وی کو انٹرویو دینے کے بعد پیدا ہوا۔

عرب دنیا کے ٹیلی ویژن چینل کئی برسوں سے اس خطے کی سیاسی بحثوں اور تناؤ کا منظر بنے ہوئے ہیں۔ ان چینلوں کے سیاسی پروگرام اکثر مشہور ہوتے ہیں، لیکن چند دن میں سو ملین سے زیادہ کسی پروگرام کا دیکھا جانا، جو خطے کے ممالک کے مابین سیاسی اور سفارتی تنازع کا سبب بنتا ہے، معمول کی بات نہیں ہے۔

معزول عراقی صدر صدام حسین کی بڑی بیٹی رغد صدام حسین کا، جو اب 52 سال کی ہیں، عرب چینل العربیہ پر گذشتہ ہفتے چھ اقساط پر مشتمل یہ انٹرویو نشر ہوا تھا۔ یہ گفتگو العربیہ کے میزبان صہیب شرایر نے اردن میں اپنے سٹوڈیو میں کیا تھا۔ رغد جو اردن میں رہتی ہیں آج کل عرب کے سیاسی میدان میں جگہ تلاش کرنے کے لیے کوشاں ہیں۔

اس تفصیلی گفتگو میں رغد نے موجودہ عراق اور بچپن کی یادوں دونوں پر بات کی۔ لیکن شاید اس کا ایک جملہ سب سے متنازع ہوگیا۔ یہ پوچھے جانے پر کہ کیا انہوں نے عراق میں سیاست میں واپسی کا امکان دیکھا ہے، تو انہوں نے کہا: ’سب کچھ ممکن ہے۔‘

عراقی سیاست میں رغد صدام حسین کی واپسی کے امکان نے ممبران پارلیمینٹ کے سخت احتجاج کو جنم دیا۔ پارلیمنٹ کے کچھ ممبروں کے دباؤ پر، عراقی وزارت خارجہ نے سعودی عرب اور اردن کے سفیروں کو طلب کیا تاکہ انٹرویو سے متعلق متنبہ کیا جاسکے۔

باپ کے دفاع میں

رغد 1968 میں پیدا ہوئی تھیں۔ ان کی پیدائش سے ایک سال پہلے عراق، دوسرے عرب ممالک کے ساتھ، چھ دن کی تاریخی جنگ میں اسرائیل کے ہاتھوں ہار گیا تھا۔ لیکن رغد ابھی بھی اپنی ماں کے پیٹ میں ہی تھیں جب اس وقت کے عراقی صدر عبدالرحمن عارف کو، جنہوں نے اپنے زیادہ مشہور مصری ہم منصب جمال عبد الناصر کے ساتھ النکشا کی تاریخی شکست بانٹی تھی، بعثت پارٹی کے ذریعہ 17 جولائی کی بغاوت میں معزول کر دیا گیا تھا۔ اس وقت 31 سالہ صدام حسین، جس نے دو سال قبل بعث پارٹی میں ایک اہم تقسیم کا اہتمام کیا تھا اور عراقی بعث پرستوں کو بے دخل کردیا تھا۔ دمشق میں بعث پارٹی اب مارکسسٹوں کے ہاتھ میں تھی اور بغداد میں بعث پارٹی سکیورٹی تنظیم بننے کے لیے حرکت میں تھی جس میں نوجوان صدام نے کلیدی کردار ادا کیا تھا۔

بغاوت کے وقت صدام کی بیوی حاملہ تھیں۔ اس سے قبل انہوں نے دو بیٹوں، عدے اور قصے کو جنم دیا تھا، جو اس وقت بالترتیب چار اور دو سال کے تھے۔ اگلی پیدائش صدام کی پہلی بیٹی کی تھی۔

بعث پارٹی نے خود کو ’سوشلسٹ‘ کہا تھا اور سمجھا جاتا تھا کہ وہ جدید ترین اقدار کی نمائندگی کرتی ہے۔ تاہم ، صدام کا کنبہ بہت روایتی تھا۔ صدام کی اپنی بھانجی سے شادی کا اہتمام گھرانے کے بزرگوں نے کیا تھا اور رغد ایسے ماحول میں پروان چڑھی جس میں تکریت قبیلے نے ایک اہم کردار ادا کیا۔

ایک حالیہ انٹرویو میں رغد نے بتایا کہ انہوں نے 15 سال کی عمر میں حسین کامل المجید سے شادی کی، جو ان کے والد کی قریبی فوجی تھے اور ان سے 14 سال بڑے تھے۔ بغداد میں صدام کے خاندان کی سرپرستی کے ماحول میں رغد اپنے دو بھائیوں کے ساتھ پروان چڑھیں۔ تاہم ہائی سکول سے فارغ ہونے کے بعد، وہ مخالفت کے باوجود یونیورسٹی میں داخل ہونے میں کامیاب ہوگئیں۔ صدام کے خاندان میں رغد اپنی دو چھوٹی بہنوں، رینا اور ہالا کے ہمراہ بااثر شخصیت بن گئیں۔

گذشتہ ہفتے کی گفتگو کا سب سے حیران کن حصہ وہ ہے جہاں رغد اپنے والد اور شوہر کے مابین تنازع کے بارے میں بات کرتیں ہیں۔ اس تنازع کے نتیجے میں ہی مسٹر المجید 1995 میں رغد کے ساتھ اردن فرار ہوگئے۔ بالآخر وہ ایک سال سے بھی کم عرصے بعد عراق واپس آئے اور عدم اعتماد کے درمیان خاندانی تنازع میں ہلاک ہوگئے۔ برسوں سے یہ افواہ جاری ہے کہ رغد نے اپنے شوہر کو عراق واپس آنے کے لیے قائل کیا اور ان سے وعدہ کیا کہ اس کے والد انہیں سزا نہیں دیں گے۔

رغد نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ ان کے بڑے بھائی نے ان کے شوہر کی موت میں جنھیں غدار کہا جاتا تھا کلیدی کردار ادا کیا۔ بہت سے ناظرین کے لیے حیرت کی بات یہ تھی کہ کہانی سناتے وقت رغد نے آنسو نہیں بہائے اور نہ ہی زیادہ جذبات ظاہر کیے۔ انہوں نے اپنے شوہر کی ہلاکت پر افسوس کا اظہار کیا، لیکن انہوں نے زور دیا کہ انہیں اپنے والد سے جو محبت تھی اس کا موازنہ کسی دوسرے جذبات سے نہیں کیا جاسکتا ہے۔ انہوں نے اپنے والد کی حکمرانی کا بھی دفاع کیا۔ یہ یقینی طور پر ہزاروں عراقیوں کو پسند نہیں ہوگا جو صدام کے تحت انسانی حقوق کی وسیع پیمانے پر پامالیوں کو یاد رکھتے ہیں۔

قبضے کے برسوں بعد

عصری عربی میں ’قبضہ‘خاص جذباتی معنی رکھتا ہے، خاص طور پر چونکہ یہ عام طور پر اسرائیل کے ذریعہ عرب زمینوں پر قبضے کو کہتے ہیں۔ اس گفتگو میں رغد نے بار بار وہی لفظ استعمال کیا جس کا 2003 میں عراق پر امریکی حملے کا حوالہ دیا گیا، اور ان مشکل دنوں کو بیان کیا جن میں وہ اپنے کنبہ کے ساتھ مل کر ملک سے فرار ہوئے، پہلے شام اور پھر اردن۔ اس نے اسے اور صدام کے کنبہ کے دیگر افراد اور ہزاروں سابق بعثت کو پناہ دی۔ کم از کم 120،000 تارکین وطن عراقیوں اور لاکھوں فلسطینیوں کا شہر ، رگھد اب بھی سلامتی کے ساتھ زندہ ہے۔ عمان میں ، شاید دنیا کے کہیں اور سے زیادہ ، بازاروں اور دکانداروں اور کاروں کے پیچھے کونے میں صدام حسین کی تصویر مل سکتی ہے۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

اس خاندان کے دو بڑے بیٹے، عدی حسین، قصی حسین، امریکہ کی زیر قیادت عراق پر حملے کے دوران ہلاک ہوگئے تھے جس کے بعد سے رغد اس خاندان کی سب سے بڑی ہیں۔ انہوں نے عدالت میں اپنے والد کے دفاع میں کلیدی کردار ادا کیا۔ ایک حالیہ انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ دسمبر 2006 میں ان کے والد کی پھانسی ان کی زندگی کا سب سے مشکل ترین لمحہ تھا۔

ان سالوں میں رغد کیا کر رہی تھیں؟ بہت سے سابق بعثت فوج کے افسران نے جو خود کو صدام کا وفادار سمجھتے تھے داعش کے بننے میں کلیدی کردار ادا کیا۔ رغد کے مخالفین کا دعوی ہے کہ انہوں نے اس گروہ کا دفاع کیا جس نے نئی عراقی حکومت کے خلاف کارروائی کی ہے۔ یہاں تک کہ اگست 2014 میں جب داعش عروج پر تھی جرمن ہفتہ وار میگزین دراشپیگل نے ’رغد کو دہشت گردی کی گاڈ مدر‘ کے عنوان سے ایک رپورٹ شائع کی، جس میں یہ دعوی کیا گیا تھا کہ اس نے جوابی کارروائی میں لاکھوں ڈالر دولت داعش کو دی تھی۔ اس رپورٹ کی مصنفہ رانیہ سیلوم نے رغد کی عیش و آرام کی زندگی کے بارے میں لکھا ہے: ’ان کے محافظوں سے لے کر ناک، سینے اور سیاہ آنکھوں کی سرجری کے لیے شہر کے سب سے مشہور کاسمیٹک سرجن ’کے تواتر سے چکر لگائے۔ وہ اقتدار میں واپس آنے کا ارادہ رکھتی ہیں۔‘

حالیہ گفتگو میں ، رغد نے اپنی ایک الگ تصویر پینٹ کرنے کی کوشش کی۔ وہ طویل عرصے سے ٹوئٹر پر آ کر سیاسی منظرنامے پر حاوی ہیں۔ انہوں نے جارحانہ حملوں سے بہت سارے عراقیوں کے دلوں کو بھی چھو لیا کہ کس طرح ایران کی افواج نے اپنے قدم مضبوط کرنے کے لیے عراق میں خلا کو استعمال کیا۔ خاص طور پر جہاں انہوں نے کہا، ’ایرانیوں نے حقیقی طاقت کی کمی کے سبب عراق پر حملہ کیا ہے۔‘

بغداد میں رغد کے اس انٹرویو پر شدید ردعمل سامنے آیا ہے۔ تحریک آزادی کے رہنما مقتدا الصدر نے اس بات پر زور دیا کہ صدام کے کنبہ کے عراق واپس آنے کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔ انہوں نے کہا، ’ہمیں صدام کے قتل عام اور اجتماعی قبروں اور کانوں اور ہاتھوں کا کٹنا یاد ہے۔‘

مقتدا نے عراقی پارلیمنٹ اور حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ بعثت کمیشن کو فعال کریں اور رغد کے حامیوں کی واپسی کو روکیں۔

صدر یہ ریمارکس اس سال کے انتخابات کے موقع پر دے رہے ہیں۔ عراق اب ایک تاریخی موڑ پر ہے۔ یہ ملک رواں سال اکتوبر میں ایک اہم انتخابات کی طرف گامزن ہے۔

زیادہ پڑھی جانے والی خواتین