نوجوانوں کے لیے روزگار کے دو پروگرام متعارف کرانے کا اعلان

ورلڈ بینک کے اعداد و شمار کے مطابق 2010 سے بےروزگاری میں مسلسل اضافہ ہوا ہے اور گذشتہ چند برس بھی کچھ اچھے نہیں رہے۔ آنے والے دنوں کے بارے میں پیش گوئی کوئی اچھی نہیں۔

وزیراعظم عمران خان نے نوجوانوں کے لیے روزگار کے دو پروگرام متعارف کرانے کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہنر مندی کی تعلیم کے لیےایک لاکھ 70 ہزار سکالر شپس دیئے جائیں گے۔

انہوں نے ان خیالات کا اظہارمنگل کو یہاں جوانوں کے لیے ایک ویڈیو پیغام میں کیا جس میں ان کا کہنا تھا کہ 50 ہزار سکالر شپس جدید ٹیکنالوجیز کے لیےدی جائیں گی، کامیاب جوان پروگرام کے تحت کاروبار کے لیے100 ارب روپے کے قرضے میرٹ پر دیں گے، ہر سال نوجوانوں کے لیےفنڈز میں اضافہ کیا جائے گا۔

وزیراعظم نے کہا کہ نوجوانوں کی خواہش ہوتی ہے کہ انہیں سرکاری ملازمت مل جائے لیکن حکومت کے لیےتمام نواجونوں کو سرکاری ملازمت فراہم کرنا ممکن نہیں۔ پہلے ہی سرکاری ملازمین کی تعداد زیادہ ہے اور پینشن کابل بڑھ رہا ہے۔ تاہم حکومت اس سلسلے میں بھی روزگار کے پروگرام متعارف کرارہی ہے، پورے ملک میں روزگار نجی شعبے میں حاصل ہوتا ہے یا پھر لوگ خود اپنا کاروبار شروع کرتے ہیں۔جھوٹی اور درمیانے درجے کی صنعتیں لگائی جاسکتی ہیں۔

پاکستان میں روزگار کا حال کچھ اچھا نہیں۔ ورلڈ بینک کے اعداد و شمار کے مطابق 2010 سے بےروزگاری میں مسلسل اضافہ ہوا ہے اور گذشتہ چند برس بھی کچھ اچھے نہیں رہے۔ آنے والے دنوں کے بارے میں پیش گوئی کوئی اچھی نہیں۔ آئی ایم ایف کے مطابق 2021 میں بےروزگاری کی شرح ڈیڑھ فیصد رہے گی جس کی ملکی تاریخ میں کوئی نظیر نہیں ملتی۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

تازہ سرکاری اعلان کے مطابق سٹارٹ اپس میں نئے آئیڈیاز کے تحت آمدنی میں اضافہ کیا جاسکتا ہے۔ اس سلسلے میں حکومت دو پروگرام لارہی ہے۔ ہنرمندی کی تعلیم کے لیےایک لاکھ 70ہزار سکالر شپس دیئے جائیں گے۔ اس سے نوجوانوں کو ہنرمندی کی تربیت دی جائے گی اس میں سے ایک سال میں 50 ہزار سکالر شپس جدید ٹیکنالوجی سے متعلق ہوں گے جن میں مصنوعی ذہانت اور بینک ڈیٹا وغیرہ شامل ہیں۔ وزیر اعظم نے کہا کہ چھ چھ ماہ کے کورسز کے بعد نوجوانوں کو ایسی ملازمتیں ملی گی جن کے بارے میں ’نواجونوں نے سوچا بھی نہیں ہوگا۔‘

دنیا تیزی کے ساتھ ٹیکنالوجی کے انقلاب کی طرف جا رہی ہے، وزیر اعظم نے کہا کہ اگر نوجوانوں کے پاس اپنے کاروبار شروع کے لیے آئیڈیاز ہیں اور ان کے پاس مالی وسائل نہیں ہیں تو اس کے لیے100 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں جن سے کامیاب جوان پروگرام کے تحت نوجوانوں کو قرضے دیئے جائیں گے۔ جو نوجوان اپنی دکان کھولنا چاہیں یا کوئی دوسرا کاروبار کرنا چاہیں تو وہ کاروبار کرسکتے ہیں، اس کے لیے میرٹ پر قرضے دیئے جائیں گے۔

وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ سب سے زیادہ فنڈز اس مقصد کے لیے انہوں نے مختص کیے ہیں تاکہ نوجوان خود اپنا کاروبارشروع کرسکیں اور اپنے پاؤں پر کھڑے ہو سکیں۔ ہر سال اس سلسلے میں فنڈز میں اضافہ کیا جائے گا تاکہ زیادہ سے زیادہ نوجوانوں کو مستفید کیا جاسکے۔

وزیراعظم نے کہا کہ ہماری کوشش ہے کہ نوجوانوں کوخود بھی روزگار ملے اور یہ ملک کی ترقی میں بھی اپنا کردار ادا کرسکیں۔ ’امید ہے کہ سکل ایجوکیشن اور کامیاب جوان پروگرام کے تحت قرضوں سے نواجوں بھرپور فائدہ اٹھائیں گے۔‘

زیادہ پڑھی جانے والی نئی نسل