افغان طالبان کے خلاف نیا اتحاد

نیشنل موومنٹ پارٹی کے رہنما عبدالرشید دوستم، جمعیت اسلامی شاخ کے رہنما عطا محمد نور، وحدت پارٹی کے رہنما حاجی محمد محقق، اتحاد اسلامی پارٹی کے رہنما عبدالرب رسول سیاف اور سابق نائب صدر یونس قانونی اس نئے اتحاد کے اہم ارکان ہیں۔

(تصاویر: فیس بک صفحات)

افغانستان کی سیاسی جماعتوں کے پانچ رہنماؤں، جنہوں نے اشرف غنی ​​حکومت کے خاتمے کے بعد سے مختلف ممالک میں پناہ مانگ رکھی ہے، طالبان کے خلاف ’اسلامی جمہوریہ افغانستان کی قومی مزاحمت کی سپریم کونسل‘ کے قیام کے معاہدے کا اعلان کیا ہے۔

نیشنل موومنٹ پارٹی کے رہنما عبدالرشید دوستم، جمعیت اسلامی شاخ کے رہنما عطا محمد نور، وحدت پارٹی کے رہنما حاجی محمد محقق، اتحاد اسلامی پارٹی کے رہنما عبدالرب رسول سیاف اور سابق نائب صدر یونس قانونی اس نئے اتحاد کے اہم ارکان ہیں۔

ان سیاسی رہنماؤں نے ایک بیان جاری کیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ قومی مزاحمت کی سپریم کونسل کی سرگرمیاں سیاسی اور عسکری دو حصوں میں منظم ہیں اور ان کی ترجیح سیاست کے ذریعے افغانستان میں امن اور استحکام حاصل کرنا ہے۔

کونسل نے دنیا بھر کے ممالک سے مطالبہ کیا کہ وہ طالبان کابینہ کو تسلیم نہ کریں، جن میں سے کچھ ممبران سکیورٹی ایجنسیوں کے پابندیوں اور ظلم و ستم کی زد میں ہیں، اور افغان عوام کی امن کی خواہش اور خواتین اور اقلیتوں کے حقوق کی حمایت کریں۔ کونسل کے رہنماؤں نے افغان عوام سے یہ بھی کہا کہ وہ اپنے آپ کو ظلم اور جارحیت اور غیرملکی قبضے کے خلاف مشکل اور طویل مدتی مزاحمت کے لیے تیار کریں۔

کونسل نے طالبان سے مطالبہ کیا کہ وہ سابق ​​سرکاری فوجیوں کی ٹارگٹ کلنگ اور حراست سے باز رہیں اور جبری نقل مکانی اور لوگوں کے مکانات پر قبضہ ختم کریں۔

انڈپینڈنٹ فارسی کے ساتھ ایک انٹرویو میں ایک مصنف اور سیاسی کارکن جنہوں نے قومی مزاحمتی کونسل کے قیام کے لیے سیاسی جماعت کے رہنماؤں کے اجلاس میں شرکت کی ڈاکٹر حسین یاسا نے کہا: ’افغانستان میں امن اور استحکام کے لیے طالبان سے لڑنے کے لیے ایک مرکزی محور قائم کرنا ضروری ہے۔‘ ان کے مطابق اگر سیاسی کوششیں افغانستان میں امن اور استحکام کا باعث نہیں بنتیں اور طالبان اس طریقہ کار پر عمل نہیں کرتے تو سپریم کونسل آف نیشنل ریزسٹنس فوجی کارروائی کا سہارا لے گی اور نتائج کے ذمہ دار طالبان ہوں گے۔

یاسا نے بتایا کہ ’قومی مزاحمت کی سپریم کونسل میں کوئی ایک رہنما نہیں ہوتا ہے لیکن اس کی قیادت کونسل کے طور پر کی جاتی ہے۔‘

’اسلامی جمہوریہ افغانستان کی قومی مزاحمت کی سپریم کونسل‘ اور ’افغانستان کے قومی مزاحمتی محاذ‘ کے اہداف کے درمیان مماثلت نے کچھ سوشل میڈیا صارفین کو اس پر یقین کرنے کا موقع دیا کہ جیسے دونوں محاذ ایک جیسے ہیں، لیکن ڈاکٹر حسین یاسا کا کہنا ہے کہ دونوں الگ ہیں لیکن وہ ہم خیال ہیں۔ ان کے مطابق احمد مسعود کو سپریم کونسل آف نیشنل ریزسٹنس کی قیادت کی سطح پر بھی مدعو کیا گیا ہے لیکن انہوں نے ابھی تک اس درخواست کا حتمی جواب نہیں دیا اور سپریم کونسل آف نیشنل ریزسٹنس کے رہنماؤں کے درمیان بات چیت اور قومی مزاحمتی محاذ جاری ہے۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

یاسا کے مطابق قومی مزاحمت کی سپریم کونسل کے قائدین کی رائے میں قومی مزاحمتی محاذ کی سرگرمیوں اور پروگراموں کی منظوری دی گئی ہے اور مستقبل قریب میں ان کا ایک مشترکہ اجلاس ہو سکتا ہے۔

یاسا کا خیال ہے کہ اگرچہ طالبان تمام افغان شہروں پر حاوی ہیں لیکن اتحاد کا سماجی اثر و رسوخ اور طالبان سے لڑنے کا تجربہ انہیں فتح کی امید میں مدد دے گا۔ ان کے مطابق افغانستان کے اندر حالات تیزی سے ان کے حق میں بدل جائیں گے اگر قومی مزاحمت کی سپریم کونسل کے رہنما سیاسی کوششوں سے مایوس ہو جائیں اور فوجی کارروائی کا سہارا لیں۔

عبدالرشید دوستم، محمد محقق، عطا محمد نور، عبدالرب رسول سیاف اور یونس قانونی، جو کہ قومی مزاحمت کی سپریم کونسل کے بانی ہیں، 1990 کی دہائی میں احمد شاہ مسعود کی قیادت میں شمالی اتحاد کے اہم ارکان تھے اور انہیں لڑنے کا طویل تجربہ ہے۔

کونسل کے کچھ اراکین بشمول محمد محقق نے طالبان رہنماؤں پر زور دیا کہ وہ ایک جامع نظام قائم کریں، جامع حکومت بنائیں اور تمام قبائل کو قبول کریں۔ طالبان کابینہ کے اعلان نے، جس میں اس تحریک سے باہر کا کوئی فرد موجود نہیں تھا، نہ صرف محقق جیسے لوگوں کی امیدوں کو توڑ دیا بلکہ کئی افراد اور ملکوں کو بھی حیران کر دیا جو یقین رکھتے تھے کہ طالبان بدل گئے ہیں۔

طالبان حکومت کے عہدیداروں نے بار بار زور دیا ہے کہ افغانستان میں جنگ ختم ہو چکی ہے اور کوئی طاقت ان کی حکومت کے لیے خطرہ نہیں ہے۔ افغانستان کے مختلف شہروں میں بم دھماکے، جن میں سے زیادہ تر کا دعویٰ دولت اسلامیہ خراسان (آئی ایس آئی ایس) کرتا ہے، طالبان کے لیے ایک بڑا چیلنج اور عوامی زندگی کے لیے ایک بڑا خطرہ بن گیا ہے۔ ایسے میں یہ اتحاد فل الحال طالبان کی سیاسی مشکلات میں اضافہ کرسکتا ہے۔

زیادہ پڑھی جانے والی ایشیا