افغانستان: شیشہ سازی کی تاریخی صنعت ایک فرد کی بدولت زندہ

تیموری دور میں ہرات کی شیشہ سازی کی صنعت بہت خوشحال تھی اور ہرات کے شیشہ ساز اپنی مصنوعات دنیا کے تمام حصوں میں بھیجتے تھے۔

ایک افغان شخص 5 اگست 2009 کو ہرات میں اپنی روایتی شیشے کی دکان پر شیشے کی ایک چیز تیار کر رہا ہے (اے ایف پی/شاہ مرائی)

ہرات کی جامع مسجد کے شمال مشرق کی طرف اور زرنگار نامی سڑک پر بہت سی دکانیں ہیں جو تقریباً 15 سال پہلے سے زیادہ تر کتب پرنٹنگ اور بائنڈنگ اور تحریری کام کرتی ہیں۔

لیکن اس سے پہلے اور کئی سالوں سے یہ علاقہ نوادرات کے ڈیلروں کے لیے مخصوص تھا اور کئی دکانیں یہاں قریب قریب واقع تھیں۔ اس دوران سلطان احمد حامدی کی دکان دوسروں کے مقابلے میں زیادہ خوشحال تھی کیوں کہ وہ اس میں نوادرات کی فروخت کے علاوہ اپنی شیشے کی مصنوعات بھی فروخت کرتے تھے۔

ہم محفوظ طور پر کہہ سکتے ہیں کہ ان کی مصنوعات پورے افغانستان میں منفرد تھیں کیوں کہ ان کے اور ماسٹر غلام سخی کے علاوہ افغانستان میں شیشہ سازی کی صنعت کو جاری رکھنے کے لیے کوئی دوسرا ماہر کاریگر نہیں بچا تھا۔

حمیدی کا انتقال 2018 میں ہوا اور اس وقت ہرات بلکہ پورے افغانستان میں شیشے کی صرف ایک بھٹی رہ گئی۔ اس روایتی صنعت کو جاری رکھنے کے لیے کوئی اور نہیں ہے۔ حال ہی میں ہرات کے محکمہ ثقافت کے حکام نے کہا کہ وہ شیشے کی صنعت کو مکمل طور پر تباہ ہونے سے روکنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ طالبان کے انٹیلی جنس اینڈ کلچر ڈیپارٹمنٹ نے حکومتی تعاون سے شیشے کی بھٹی کو دوبارہ فعال کر دیا ہے۔

ہرات میں شیشے کی صنعت

ہرات میں محکمہ اطلاعات و ثقافت کے سربراہ نعیم الحق حقانی نے میڈیا کو بتایا کہ اس تاریخی صنعت کو محفوظ رکھنے کے لیے حکومتی سرپرستی میں شیشے کی ورکشاپ کو فعال کر دیا گیا ہے۔ تاہم اب بھی شیشے کی مصنوعات فروخت کرنے والے کاری گروں کا کہنا ہے کہ مارکیٹ میں جمود اور مانگ کی کمی کی وجہ سے انڈسٹری جمود کا شکار ہے۔

ہرات کلچرل ہیریٹیج سپورٹرز ایسوسی ایشن کے سربراہ عبدالقیوم وزیری کا کہنا ہے کہ افغانستان میں تاریخی اور روایتی صنعتوں کو ہر ممکن طریقے سے زندہ رکھا جانا چاہیے: ’شیشہ سازی ثقافتی ورثے میں سے ایک ہے جس پر بہت زیادہ توجہ دی جانی چاہیے اور میری درخواست ہے۔ تمام شہری آئیں۔ اس صنعت کو سپورٹ کریں اور خریدیں۔‘

اس خطے میں شیشہ سازی کی صنعت کی ایک قدیم تاریخ ہے۔ خود کاری گروں کا کہنا ہے کہ افغانستان میں شیشہ سازی تین ہزار سال قبل کی ہے لیکن ہرات کے تاریخی نوادرات اور تکنیک کے حکام اس کی سرکاری تاریخ تقریباً 1800 سال قبل بتاتے ہیں۔

ہرات کے تاریخی یادگاروں کے تحفظ کے محکمے کے سابق ڈائریکٹر ایام الدین اجمل نے انڈپینڈنٹ فارسی کو بتایا کہ ہرات میں آثار قدیمہ کی کھدائی کے نتیجے میں حاصل ہونے والے نمونوں کی بنیاد پر ہرات میں شیشہ سازی 1800 سال قبل کی ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ یہ صنعت 70 سال پہلے تک افغانستان میں بہت خوشحال تھی اور ہرات کی اس تاریخی صنعت کی مصنوعات کے خریدار پورے افغانستان میں موجود تھے۔ اجمل کے مطابق ماضی میں جب دنیا میں شیشے کی پیداوار بہت کم تھی، ہرات کے کاریگر اس علاقے میں دستیاب معدنیات کو شیشہ بنانے کے لیے استعمال کرتے تھے۔

اس کے بعد انہوں نے آئرن، سیسہ اور تانبے کے پاؤڈر کا استعمال کرتے ہوئے شیشوں کو مختلف رنگ دیا۔ لیکن دنیا کے کارخانوں میں شیشے کی پیداوار بڑھنے کے بعد معدنیات سے شیشے کی پیداوار سستی نہیں رہی۔ نتیجے کے طور پر کاریگروں نے ٹوٹے ہوئے اور ضائع شدہ شیشے کو جمع کیا اور شیشے کے نئے برتن بنانے کے لیے رنگ شامل کیا۔

ایام الدین اجمل کے مطابق 1950 کی دہائی کے بعد سے ہرات میں شیشہ سازی سے جڑی خوشحالی میں کمی آئی کیوں کہ لوگوں کو شیشے کے بہتر اور جدید ترین سامان تک رسائی حاصل تھی اور ستم ظریفی یہ ہے کہ شیشے کا یہ سامان ہرات میں شیشے کے کاریگروں کی مصنوعات سے سستے تھا۔ نتیجتاً یہ صنعت روز بروز کمزور ہوتی چلی گئی اور 10 شیشے کی بھٹیوں سے کم ہو کر دو رہ گئیں۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

اجمل کے مطابق یہ دونوں بھٹیاں غیرملکی سیاحوں اور افغانستان کے دیگر علاقوں کے شہریوں کی بدولت فعال رہیں۔ اس کے بعد کاری گروں نے ضروری گھریلو سامان بنانا چھوڑ دیا اور آرائشی اشیا بنانا شروع کر دیں۔

ہرات میں شیشے کے واحد کاری گر خلیفہ غلام سخی اس تاریخی صنعت کی طرف لوگوں کی عدم توجہی سے پریشان ہیں۔ وہ شکایت کرتے ہیں کہ کوئی بھی ان کی شیشے کی مصنوعات نہیں خریدتا ماسوائے غیر ملکیوں کے جو بہت کم ہیں۔ غلام سخی کو امید ہے کہ حکومت ہرات اس قدیم صنعت کو محفوظ رکھنے کے لیے صحیح طریقہ اختیار کرے گی۔

ہرات کی شیشہ سازی کی صنعت تیموری دور میں پروان چڑھی اور ہرات کے شیشہ ساز اپنی مصنوعات دنیا کے کونے کونے میں بھیجتے تھے۔ لیکن طویل جنگوں اور بڑے پیمانے پر علاقائی بحرانوں کی وجہ سے، خاص طور پر حالیہ دور میں، یہ صنعت بھی آہستہ آہستہ معاشرے میں اپنی مانگ کھو کر خوشحالی سے گر گئی۔

فی الحال، صرف افریقی ملک کینیا میں شیشہ سازی کی روایتی صنعت ہرات کی طرح ہے، لیکن اس کے ساتھ نئے اقدامات اور اختراعات بھی شامل ہیں۔ چند سال پہلے افغانستان کی حکومت نے دو افغان شیشہ سازوں کو کچھ عرصے کے لیے کینیا بھیجا تاکہ کینیا کے کاری گروں سے شیشہ سازی کے نئے روایتی طریقے سیکھیں۔

لیکن ان کی واپسی کے بعد ہرات میں شیشہ سازی اپنی سابق ​​پوزیشن دوبارہ حاصل نہیں کر سکی۔

زیادہ پڑھی جانے والی تاریخ