پھیپھڑوں کا کینسر: پانچ باتوں پر یقین کرنا چھوڑ دیں

پھیپھڑوں کے کینسر کے متعلق اب بھی کچھ غلط فہمیاں موجود ہیں۔ ضروری نہیں ہے کہ یہ بیماری صرف ’تمباکو نوشی‘ سے ہو۔

چاہے آپ تمباکو نوشی کریں یا نہ کریں، پھیپھڑوں کے کینسر کی علامات کو لازمی دیکھیں (اینوانتو)

نومبر پھیپھڑوں کے سرطان سے آگاہی کا مہینہ ہے۔ یہ ایک ایسی بیماری ہے جس کے متعلق ہم میں سے بہت سے لوگوں کا خیال ہے کہ وہ اس بیماری کی اہم وجوہات اور علامات جانتے ہیں۔

تاہم، پھیپھڑوں کے کینسر کے متعلق اب بھی کچھ غلط فہمیاں موجود ہیں۔ ضروری نہیں ہے کہ یہ بیماری صرف ’تمباکو نوشی‘ سے ہو۔

ان خرافات کو ختم کرنے کے لیے ہم نے پھیپھڑوں کے کینسر کے ماہرین سے بات کی ہے۔ لہذا یہاں آپ کو وہ تمام معلومات ملیں گی جن کی آپ کو ضرورت ہے..

’پھیپھڑوں کا کینسر صرف عمر رسیدہ افراد کو ہوتا ہے‘

میو کلینک (mayoclinichealthcare.co.uk) کے پلمونولوجسٹ جان کوسٹیلو کے مطابق، ’پھیپھڑوں کا کینسر یقینی طور پر عمر رسیدہ افراد میں زیادہ عام ہے۔ تشخیص کی اوسط عمر 70 سال ہے۔ تاہم، یہ اس بات کی عکاسی کرتا ہے کہ پھیپھڑوں میں طویل عرصے تک تمباکو کا دھواں جاتا رہا ہے۔‘

اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ اگر آپ بوڑھے ہیں تو آپ کو یہ کینسر خصوصی طور پر ہوگا۔

پرسی ہیلتھ (percihealth.com) میں لیڈ سپیشلسٹ کینسر نرس لیزا جیکس کے مطابق، ’زیادہ تر لوگوں کو کئی برسوں تک تمباکو نوشی کے بعد، 60 اور 70 کی دہائی میں پھیپھڑوں کا کینسر ہوتا ہے، لیکن کبھی کبھار لوگوں کو پھیپھڑوں کا کینسر بہت چھوٹی عمر میں ہی ہو جاتا ہے، یہاں تک کہ 20 اور 30 سال کی عمر میں بھی۔

پھیپھڑوں کا کینسر ہمیشہ تمباکو نوشی سے ہوتا ہے؟

اگرچہ تمباکو نوشی پھیپھڑوں کا کینسر ہونے کے امکانات کو بڑھا سکتی ہے، لیکن یہ اس بیماری کی واحد وجہ نہیں ہے۔

سپیشلسٹ کینسر نرس لیزا جیکس کا کہنا ہے کہ ’تمباکو نوشی پھیپھڑوں کے سرطان کی سب سے بڑی وجہ ہے لیکن پھیپھڑوں کے سرطان کا شکار ہونے والے تقریباً 10 فیصد افراد کبھی تمباکو نوشی نہیں کرتے۔‘

پلمونولوجسٹ جان کوسٹیلو نے مزید کہا کہ ’پھیپھڑوں کے کچھ کینسر ہیں جو جینیاتی ہیں اور ہو سکتا ہے کہ ان کا تعلق تمباکو نوشی سے نہ ہو، اور دیگر کچھ ایسبسٹوس، ریڈون گیس جیسے مادوں اور تمباکو کے دھوئیں میں رہنے کی وجہ سے ہوتے ہیں۔‘

ان کا کہنا ہے کہ یہ ’نسبتاً غیر معمولی‘ ہیں۔

’آپ تمباکو نوشی سے متاثرہ پھیپھڑوں کا نقصان ریورس نہیں کر سکتے ہیں‘

جان کوسٹیلو کا کہنا ہے کہ ’تمباکو نوشی کی وجہ سے ہونے والے کچھ  نقصان اور سوزش کو ریورس کیا جاسکتا ہے، لیکن خاص طور پر، ایمفیسیما پھیپھڑوں کی آرکیٹیکچرل تباہی ہے جو سانس کی انتہائی بیماری کا سبب بنتی ہے اور اسے ریورس نہیں کیا جا سکتا۔‘

لہذا تمباکو نوشی چھوڑنے سے آپ کو کم خطرہ ہوسکتا ہے۔ لیکن بہتر یہی ہے کہ آپ  اسے شروع ہی نہ کریں۔

پھیپھڑوں کا کینسر ہمیشہ جان لیوا ہوتا ہے؟

پھیپھڑوں کے کینسر کی تشخیص کا مطلب یہ نہیں ہے کہ اس سے یقینی طور پر موت ہوگی، لیکن پھر بھی یہ سنگین ہے۔

جان کوسٹیلو کا کہنا ہے کہ ’عام بیماری والے لوگوں میں پھیپھڑوں کا کینسر ہو تو ان کے پانچ سال تک زندہ رہنے کی شرح 65 فیصد ہے۔ اگر یہ تشخیص کے وقت جسم میں پھیل چکا ہو تو، زندہ رہنے کی شرح صرف آٹھ فیصد ہے۔‘

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

تاہم، وہ کہتے ہیں کہ ’پھیپھڑوں کے کینسر کے لیے سکریننگ کی نئی تکنیک موجود ہیں۔ جیسا کہ ماضی میں بہت زیادہ تمباکو نوشی کرنے والے 50 سال سے زائد عمر کے افراد کے لیے سی ٹی سکین۔ ان سے ابتدائی بہت چھوٹے ٹیومر کا پتا چل سکتا ہے جس کو نکالا جا سکتا ہے جس میں پانچ سال زندہ رہنے کی شرح 80 سے 90 فیصد ہوتی ہے۔

لہذا اگر آپ کو مستقل کھانسی کے بارے میں خدشات ہیں تو، اپنے ڈاکٹر سے رجوع کریں اور جتنی جلدی ممکن ہو چیک کروائیں۔

خواتین کا پھیپھڑوں کے کینسر کے لیے فکر مند ہونا ضروری نہیں؟

کینسرریسرچ یو کے کے مطابق، خواتین کے مقابلے میں مردوں کو یہ کینسر ہونے کا زیادہ امکان ہے (پھیپھڑوں کے کینسر کے کیسز میں 48 فیصد خواتین کے مقابلے میں 52 فیصد مرد ہیں۔)

تاہم، یہ وقفہ بہت کم ہے اور خواتین کو پھیپھڑوں کے کینسر کے بارے میں آگاہی کی ضرورت ہے۔

جان کوسٹیلو کا کہنا ہے کہ ’جب سے خواتین مردوں کے ساتھ تمباکو نوشی کی لت میں مبتلا ہوئی ہیں اس وقت سے ان میں پھیپھڑوں کے کینسر کا مسئلہ بڑھ رہا ہے، اور اسی لیے اگر وہ تمباکو نوشی کرتی ہیں تو انہیں خطرہ رہتا ہے۔

’خواتین میں پھیپھڑوں کے کچھ کینسر زیادہ عام ہیں جن کا تعلق تمباکو نوشی سے نہیں۔‘

سپیشلسٹ کینسر نرس لیزا جیکس کا مزید کہنا ہے کہ ’برطانیہ میں یہ تیسرا سب سے عام کینسر ہے اور خواتین میں یہ کینسر کی دوسری سب سے عام قسم ہے۔‘

لہذا، چاہے آپ تمباکو نوشی کریں یا نہ کریں، پھیپھڑوں کے کینسر کی علامات کو لازمی دیکھیں۔

جیسا کہ دو یا تین ہفتوں سے زیادہ عرصے تک کھانسی، بار بار سینے میں انفیکشن، سانس لینے میں دشواری یا سانس لینے کے دوران درد۔ اگر آپ کو کوئی تشویش ہو تو اپنے ڈاکٹر سے رجوع کریں۔

زیادہ پڑھی جانے والی صحت