کیا امریکی فوج بھی میٹاورس بنا رہی ہے؟

ڈیفنس ٹیک کمپنیوں نے میٹاورس کے جنون کو آگے بڑھایا ہے — لیکن جو کچھ وہ بنا رہے ہیں وہ میٹا کی ورچوئل دنیا سے بہت مختلف ہوگا۔

5 جنوری 2022 کو لاس ویگاس، نیواڈا میں کنزیومر الیکٹرانکس شو میں ایک خاتون ین اوو واسکٹ کا مظاہرہ کر رہی ہیں، جو صارفین کو ورچوئل رئیلٹی گیمز بشمول ہوا، فائرنگ یا پنچنگ کے دوران جسمانی احساسات محسوس کرنے کی اجازت دیتا ہے (اے ایف پی)

10 مئی کودو لڑاکا پائلٹوں نے اونچائی کا پروٹو میٹاورس تجربہ کیا۔ کیلیفورنیا کے صحرا سے چند ہزار فٹ اوپر، Berkut 540 جیٹ طیاروں کے ایک جوڑے میں، انہوں نے  اے آر ہیڈ سیٹس کو ایک ایسے سسٹم سے جوڑنے کے لیے لگایا جس نے آسمان میں ان کے ساتھ ساتھ اڑتے ہوئے ایندھن بھرنے والے ہوائی جہاز کی چمکتی تصویر اختیار کر لی۔ اس کے بعد ایک پائلٹ نے ورچوئل ٹینکر کے ساتھ ایندھن بھرنے کی کوشش کی جبکہ دوسرا اسے دیکھ رہا تھا۔

نئے آنے والے فوجی میٹاورس میں خوش آمدید۔

یہ صرف سلیکان ویلی ہی نہیں ہے جو ان دنوں میٹاورس مینیا کی گرفت میں ہے۔ جس طرح ٹیک کمپنیاں اور کارپوریشنز ورچوئل دنیا کے لیے حکمت عملی تیار کرنے کے لیے کوشاں ہیں، بہت سے دفاعی سٹارٹ اپس، کنٹریکٹرز اور سرمایہ لگانے والے تیزی سے میٹاورس پر بات کر رہے ہیں، چاہے اس کی تعریف اور افادیت ابھی واضح نہ ہو۔

امریکی فوجی اہلکار ریان کینی ویب سائٹ سگنل کے لیے لکھتے ہیں کہ فوجی میٹا ورس ایک ڈیجیٹل ماحول ہوگا جو فوجی اہلکاروں کو مستقبل کے بڑے پیمانے کی کارروائی کے لیے تربیت دینے کے قابل بنائے گا۔ یہ ایک تخلیقی ماحول ہوگا جہاں فوجی (اور الگورتھم) ایک دوسرے اور نقلی دشمنوں کے ساتھ بات چیت کرسکتے ہیں۔

میٹا ورس حقیقی دنیا کے ماحول سے جمع کردہ اعداد و شمار پر مبنی ہوگا اور اس سے فوجیوں کو جنگی منظرناموں کی ایک وسیع رینج کا تجربہ کرنے کا موقع ملے گا۔ یہ کمانڈروں کے لیے ایک قیمتی آلہ بھی ہوگا، پیچیدہ کارروائیوں کی منصوبہ بندی، تقلید اور عمل درآمد کرنا اور پھر ان ڈیجیٹل پلے بک کو خودکار جوابات کے لیے استعمال کرنا۔

میٹاورس کے لیے درکار کلیدی ٹیکنالوجی — آگمینٹڈ اور ورچوئل رئیلٹی، ہیڈ ماؤنٹڈ ڈسپلے، تھری ڈی سمیولیشنز اور مصنوعی ذہانت سے تیار کردہ ورچوئل ماحول — دفاعی دنیا میں پہلے ہی موجود ہیں۔ ماہرین کے مطابق یہ اس بات کا ایک اچھا موقع ہے کہ بنیادی ٹیک آف ہو سکتا ہے، یہاں تک کہ اگر یہ سویلین حلقوں میں ہچکولے کھا رہی ہے۔

مثال کے طور پر بڑھی ہوئی حقیقت، مصنوعی ذہانت، اور ویڈیو گیم گرافکس کے امتزاج نے فائٹر پائلٹوں کو ورچوئل مخالفین، بشمول چینی اور روسی جنگی طیاروں کے خلاف ڈاگ فائٹنگ کی مشق کرنے کے قابل بنایا ہے۔

ریڈ 6 کمپنی کا جو یہ ٹیکنالوجی تیار کر رہی ہے، کہنا ہے کہ یہ روایتی فلائٹ سمیلیٹر کے مقابلے پائلٹ کی صلاحیتوں کا زیادہ حقیقت پسندانہ امتحان لے سکتے ہیں۔ ریڈ 6 کے بانی اور سی ای او ڈینیئل رابنسن نے ویب سائٹ وائرڈ کو بتایا کہ ’ہم جو بھی خطرہ چاہتے ہیں اس کے خلاف پرواز بھر سکتے ہیں۔ اور اس خطرے کو یا تو ایک فرد دور سے یا مصنوعی ذہانت سے کنٹرول کر سکتا ہے۔‘

ریڈ 6 کی اے آر ٹیکنالوجی کو صارفین کے اے آر یا وی آر ہیڈسیٹ کے مقابلے میں کم تاخیر اور اعلی اعتبار کے ساتھ زیادہ شدید حالات میں کام کرنا پڑتا ہے۔ رابنسن نے مزید کہا کہ کمپنی اب ایک ایسے پلیٹ فارم پر کام کر رہی ہے جو بہت سے مختلف منظرناموں کو بڑھا ہوا یا ورچوئل رئیلٹی میں پیش کرنے کی اجازت دے گا۔ ’ہم جو کچھ بنا رہے ہیں وہ واقعی ایک فوجی میٹاورس ہے۔ یہ آسمان میں ایک ملٹی پلیئر ویڈیو گیم کی طرح ہے۔‘

میٹاورس سے متعلق آئیڈیاز پہلے سے ہی کچھ جدید ترین فوجی نظاموں کا حصہ ہیں۔ نئے ایف-35 فائٹر جیٹ کے ہائی ٹیک ہیلمٹ میں مثال کے طور پر، ایک بڑھا ہوا ریئلٹی ڈسپلے شامل ہے جو ہوائی جہاز کے ارد گرد سے ویڈیو فوٹیج کے اوپر ٹیلی میٹری ڈیٹا اور ہدف کی معلومات دکھاتا ہے ۔ 2018 میں امریکی فوج نے اعلان کیا کہ وہ مائیکروسافٹ کو 22 بلین ڈالر تک ادا کرے گی تاکہ وہ جنگجوؤں کے لیے اپنے HoloLens آگمینٹڈ ریئلٹی سسٹم کا ایک ورژن تیار کرے، جسے Integrated Visual Augmentation System (IVAS) کہا جاتا ہے۔

وی آر اور اے آر حالیہ برسوں میں فوجی تربیت کے معمول کے پہلو بن گئے ہیں۔ 2014 میں جنوبی کیلیفورنیا یونیورسٹی کے دفتر برائے بحری تحقیق اور انسٹی ٹیوٹ برائے تخلیقی ٹیکنالوجیز نے پروجیکٹ بلیو شارک تیار کیا، ایک ایسا نظام جو ملاحوں کو جہاز چلانے اور مجازی ماحول میں تعاون کرنے کی اجازت دیتا ہے۔

ایک اور کوشش، جسے پروجیکٹ ایونجر کہا جاتا ہے، اب امریکی بحریہ کے پائلٹوں کو تربیت دینے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔ امریکی فضائیہ پائلٹوں کو ہوائی جہازوں اور مشنوں کا انتظام کرنے کا طریقہ سکھانے کے لیے وی آر کا استعمال کر رہی ہے۔ وی آر کو دائمی درد اور پوسٹ ٹرامیٹک تناؤ کے لیے سابق فوجیوں کے علاج میں مدد کے لیے بھی استعمال کیا جاتا ہے۔ اور بوئنگ نے اے آر ماحول بنایا ہے۔جو میکینکس کو حقیقی جہاز پر سوار ہونے سے پہلے ان پر کام کرنے کی مشق کرنے دیتا ہے۔

حال ہی میں امریکی فوج نے زیادہ پیچیدہ ورچوئل دنیا کی تلاش شروع کر دی ہے۔ ورچوئل دنیا کو اس طرح سے جوڑنے میں بھی دلچسپی بڑھ رہی ہے جو میٹاورس سوچ سے مشابہت رکھتی ہے۔ دسمبر 2021 میں امریکی فضائیہ نے ایک اعلیٰ سطحی کانفرنس کا انعقاد کیا جس میں ایک تخلیقی ماحول کے ذریعے 250 سے زائد افراد شامل تھے جو کہ امریکہ سے جاپان تک پھیلے ہوئے مقامات پر موجود تھے۔

امپروببل کمپنی کے دفاعی ڈویژن کے جنرل مینیجر کیٹلن ڈوہرمین کا کہنا ہے کہ ’یہ وعدہ ان ٹیکنالوجیز کو مربوط کر رہا ہے۔‘ اس کمپنی نے جو ورچوئل ورلڈ ٹیکنالوجیز تیار کرتی ہے وسیع و عریض ورچوئل میدان جنگ بنائے ہیں جن میں برطانیہ کے فوجی جنگی کھیلوں کے لیے 10,000 سے زیادہ انفرادی طور پر کنٹرول کیے جانے والے کردار ہیں اور امریکی محکمہ دفاع (DOD) کے ساتھ بھی کام کرتے ہیں۔

ڈوہرمین کا کہنا ہے کہ ’یہ ایک انتہائی پیچیدہ قسم کا سملیشن (تخروپن) ہے، خاص طور پر اس وفاداری کو دیکھتے ہوئے جس کا فوج کا مطالبہ ہے۔ آپ کے پاس یا تو زندہ کھلاڑی ہوسکتے ہیں جو سملیشن میں حصہ لے رہے ہیں یا [کردار] AI کے قابل ہوسکتے ہیں، جو اکثر فوج کرتی ہے۔‘

پالمر لکی، جو اوکلس  کے بانی ہیں، ایک وی آر  کمپنی جسے فیس بک نے 2014 میں حاصل کیا تھا، کا کہنا ہے کہ وی آر اور میٹاورس پر سب سے آگے جانے کے زکربرگ کے فیصلے نے تجارتی دنیا میں بہت زیادہ توقعات پیدا کی ہیں۔ ’ہر کوئی اپنی سہ ماہی کارپوریٹ کالز پر، جیسے کہ ایک یا دو ہفتے بعد، ان سے سرمایہ کار پوچھ رہے ہیں، آپ کا میٹاورس پلے کیا ہے؟‘

2017 میں پالمر لکی نے دفاعی کمپنی اینڈوریل کی مشترکہ بنیاد رکھی۔ وہ کہتے ہیں کہ تمام حالیہ میٹاورس ہائپ کے باوجود، بڑی دفاعی ضرورت موجود ہے، جس کی ایک وجہ یہ ہے کہ فوجی تربیت بہت اہم اور مہنگی ہے۔ لیکن وہ کہتے ہیں کہ ٹیکنالوجی کو مفید ہونے کے لیے انتہائی حقیقت پسندانہ ہونا ضروری نہیں ہے اور وہ چاہتے ہیں کہ اینڈوریل صرف اس ٹیکنالوجی کے استعمال پر توجہ مرکوز کرے جہاں ضروری ہو۔

’وی آر کے ساتھ ہم جو کچھ بھی کر رہے ہیں وہ کچھ ہے جہاں یہ کسی بھی دوسرے آپشن سے منفرد طور پر بہتر ہے۔‘ ان کا کہنا ہے کہ اس میں لوگوں کو اینڈوریل کے ڈرون چلانے کی تربیت دینے کے لیے وی آر کا استعمال کرنا یا زمین پر موجود سینسر کے ڈیٹا کا استعمال کرتے ہوئے کسی علاقے کے بارے میں معلومات ظاہر کرنا شامل ہے۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

جیسا کہ زکربرگ کے میٹاورس کے منصوبہ کی طرح نئے فوجی نظام موثر ہونے کے لیے اے آئی پر بہت زیادہ انحصار کرتے ہیں۔ اکتوبر 2020 میں ریڈ 6 کی تیار کردہ اے آر ٹیکنالوجی کا استعمال ایک حقیقی لڑاکا پائلٹ کو ہوائی جہاز کے خلاف ایک اے آئی الگورتھم کے ذریعے کنٹرول کرنے کے لیے کیا گیا تھا جسے ڈیفنس ایڈوانسڈ ریسرچ پروجیکٹس ایجنسی (DARPA) AI ڈاگ فائٹنگ پروجیکٹ کے حصے کے طور پر تیار کیا گیا تھا۔

AI ٹاپ گن نے، جسے EpiSci نامی ایک اور سٹارٹ اپ نے بنایا ہے، یہ سیکھا کہ کس طرح اپنے مخالف کو پیچھے چھوڑنا ہے۔ اے آئی کے پائلٹ نے بالآخر مافوق الفطرت مہارتیں تیار کیں اور وہ ہر بار اپنے انسانی حریف کو شکست دینے میں کامیاب رہا۔

ایک اور پروجیکٹ، جسے Perceptually-enabled Task Guidance کہا جاتا ہے، کا مقصد ایک AI اسسٹنٹ بنانا ہے جو دیکھتا ہے کہ ایک فوجی کیا کر رہا ہے اور آواز یا گرافکس کے ذریعے مشورہ دیتا ہے۔

بوئنگ کی طرف سے تیار کردہ آگمنٹڈ ریئلٹی کے نظام کے برعکس، جو صرف ایک مخصوص ترتیب میں کام کرتا ہے، اس طرح کے نظام کو حقیقی دنیا کا احساس دلانے کی ضرورت ہوگی۔ بروس ڈریپر، DARPA کے پروگرام مینیجر کے ذمہ دار، کہتے ہیں کہ فوج کے ذریعے دریافت کی جانے والی ٹیکنالوجیز کی اصل قدر حقیقی اور ورچوئل کو ملانے میں ہے۔

وہ کہتے ہیں کہ ’میٹاورس زیادہ تر ورچوئل ہے، اور ورچوئل دنیا تربیت کے لیے مفید ہے، لیکن ہم جسمانی دنیا میں رہتے ہیں۔ ’فوجی ڈومین فطری طور پر جسمانی ہے، یہ کسی تجریدی میٹاورس کے بارے میں نہیں ہے۔‘

لیکن ورچوئل اور حقیقی دنیا کو ملانے کی کوششوں میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ مارچ 2022 میں مائیکروسافٹ کے ایک لیک ہونے والے میمو نے مبینہ طور پر ظاہر کیا کہ ہولو لینس اے آر ہیڈسیٹ کے یو ایس آرمی ورژن IVAS پر کام کرنے والوں کو توقع تھی کہ صارفین اسے اچھا نہیں پائیں گے۔ اور اپریل 2022 میں DOD کی طرف سے جاری کردہ ایک آڈٹ نے یہ نتیجہ اخذ کیا کہ امریکی فوج اس کے نتیجے میں اپنا پیسہ ضائع کر سکتی ہے۔

مائیکروسافٹ کے ایک سینیئر کمیونیکیشن مینیجر جیسن کروولا نے IVAS کی صلاحیت کا اعلان کرنے والے اعلیٰ فوجی شخصیات کے کئی بیانات شیئر کیے ہیں۔ انہوں نے 2021 کی DOD رپورٹ کی طرف بھی اشارہ کیا جس میں IVAS کو تیزی سے تیار کرنے کی اہمیت پر بحث کی گئی ہے، جس سے راستے میں مسائل کو حل کیا جا سکتا ہے۔

اس طرح کی اعلیٰ اور مہنگی کوششوں نے صرف ان لوگوں کے اعتماد کو بڑھایا ہے جو فوجی میٹاورس کو آگے بڑھا رہے ہیں۔ ڈوگ فلپون، پالانٹیر کے عالمی دفاعی سربراہ، ایک دفاعی کمپنی جس نے اینڈوریل میں سرمایہ کاری کی ہے کہتے ہیں کہ ’میں جانتا ہوں کہ یہ فوجی تربیت کا مستقبل ہے۔‘ فلپون Snowpoint Ventures کے شریک بانی بھی ہیں، جس نے Red6 میں سرمایہ کاری کی ہے۔

لیکن میں اسے مستقبل کے طور پر بھی دیکھتا ہوں جس طرح فوج لڑتی ہے اور فیصلے کرتی ہے۔ لہذا یہ صرف لڑائی کے بارے میں نہیں ہے، یہ فیصلے کرنے کے بارے میں ہے۔‘

پالمر لکی کا کہنا ہے کہ اینڈوریل پہلے ہی اس ٹیکنالوجی پر کام کر رہا ہے جو تربیتی مشنوں اور لڑائی میں ایسا کر سکتی ہے۔ وہ کہتے ہیں ’ہمارے لیے اگلا بڑا قدم، جس کے بارے میں میں واقعی پرجوش ہوں، ہمارے بنیادی پروڈکٹ سے لے کر اس ڈیٹا کو ہیڈ اپ ڈسپلے تک پہنچانا ہے کہ فرنٹ لائن پر موجود فوجی دستے پہننے کے قابل ہو جائیں گے۔‘

لیکن اس جدید ٹیکنالوجی کا کتنا حصہ اسے فرنٹ لائن تک پہنچاتا ہے — یا یہاں تک کہ تربیتی مشقوں میں بھی — یہ واضح نہیں ہے۔ سورین ایڈم میٹی، ویسٹ لافائیٹ، انڈیانا میں پرڈیو یونیورسٹی کے پروفیسر، جنہوں نے امریکی فوج کے لیے ورچوئل میدان جنگ کے تربیتی پلیٹ فارم تیار کیے ہیں، کہتے ہیں کہ ٹیکنالوجی اکثر میٹاورس بوسٹرز کے تصور سے کہیں زیادہ آسان ہوگی۔

وہ تجویز کرتے ہیں کہ IVAS ہیڈسیٹ کا ایک آسان ورژن آخر کار ایک اے آر رائفل سکوپ میں ضم کیا جا سکتا ہے۔ ’جب آپ وہاں سے باہر ہوتے ہیں اور آپ کو گولی مار دی جاتی ہے، تو آخری چیز جس کے بارے میں آپ فکر کرنا چاہتے ہیں وہ سامان کا ایک اور ٹکڑا ہے۔‘ اور ٹیکنالوجی کو مفید ہونے کے لیے میٹاورس کی طرح وسیع ہونے کی ضرورت نہیں ہے۔ ’ہمیں اس میٹاورس استعارے کے بارے میں کچھ اور سوچنے کی ضرورت ہے - جو طاقتور ہے لیکن اس کی حدود بھی ہیں۔‘

کچھ لوگوں کا کہنا ہے کہ چند وجوہات کی وجہ سے امریکی فوج کو آپریشنل فیصلوں سے آگاہ کرنے کے لیے میٹاورس استعمال کرنے میں احتیاط برتنی چاہیے۔ سب سے پہلے یہ واضح نہیں ہے کہ آیا میٹاورس حقیقی دنیا کی درست نمائندگی کرے گا۔ دوسرا، یہاں تک کہ اگر کوئی میٹاورس درست تھا، تو یہ یقینی بنانا مشکل ہوگا کہ تمام متعلقہ معلومات کو شامل کیا گیا تھا۔ آخر میں آپریشنل فیصلے کرنے کے لیے میٹاورس کا استعمال کنفیوژن اور افراتفری کا باعث بن سکتا ہے اگر میٹاورس میں خرابی ہو یا غلط معلومات پیدا کرنے کے لیے کسی مخالف کے ذریعے نشانہ بنایا جائے۔

زیادہ پڑھی جانے والی ٹیکنالوجی