پاکستان میں سبز کچھوؤں کی شہری پھیلاؤ کے خلاف جدوجہد

سندھ وائلڈ لائف ڈپارٹمنٹ کے رضاکاروں کی ایک ٹیم میں شامل عامر خان اب صرف سبز کچھوے کراچی کے صرف دو ساحلوں اور صوبہ بلوچستان کے غیر آباد جزیروں پر اپنے انڈے دینے کے لیے ساحل پر آتے ہیں۔

پاکستان کا ساحلی شہر کراچی، جو ٹریفک اور تعمیرات سے بھرا ہوا ہے، میں بحیرہ عرب سے چار سبز کچھوے اپنے انڈے دینے کے لیے جگہ کی تلاش میں نکلتے ہیں۔

تین، قریب ہی ہو رہی ایک بیچ پارٹی کی چمکدار روشنیوں اور آواز کی وجہ سے فوری طور پر پیچھے ہٹ جاتے ہیں۔

لیکن ایک ساحل کنارے کے آخر میں اپنے فلپرز سے ریت کو ہوا میں اچھالتا اور خشک جگہ پر بیٹھ جاتا ہے جہاں اس نے گالف بال کے سائز کے 88 انڈے دیے ہیں۔

پاکستان میں کچھوے کی آخری زندہ اس نسل کی جائے افزائش کو تحفظ فراہم کرنے والے چھ لوگ بھی قریب ہی کھڑے تھے۔

صوبہ سندھ کے محکمہ جنگلی حیات میں میرین وائلڈ لائف کے سربراہ اشفاق علی میمن کا کہنا ہے کہ ’انسان ہونے کا مطلب صرف دوسرے انسان سے محبت کرنا نہیں، ان جانوروں کو بھی اسی طرح کی توجہ اور محبت کی ضرورت ہے۔‘

سینڈ سپٹ بیچ شہر کے دو کروڑ 20 لاکھ رہائشیوں کے لیے ایک پسندیدہ تفریحی مقام اور پاکستان کے خطرے سے دوچار سبز کچھوؤں کے لیے ایک اہم جائے افزائش ہے۔

ساحل سمندر کے آٹھ کلومیٹر (پانچ میل) حصے پر کنکریٹ کے گھروں کی تعمیر سے مسلسل جو میٹر بہ میٹر ریت کی پٹی میں کھا گئے ہیں جہاں کچھوے گھونسلے بناتے ہیں۔

میمن کی اہلیہ، رضاکاروں کے کام میں معاونت کرنے والی حسین بانو کہتی ہیں کہ ’ایک بار میں نے کسی کو دیکھا جو کچھوے کو اس وقت پریشان کر رہا تھا جب وہ انڈے دے رہی تھی۔ وہ اپنے پیچھے انڈوں کی قطار چھوڑ کر حفاظت کے لیے بھاگ گئی۔ یہ ایک بہت تکلیف دہ منظر تھا۔‘

آلودگی کا خطرہ

ورلڈ وائلڈ لائف فنڈ کا کہنا ہے کہ سمندری کچھوؤں نے 10 کروڑ سال سے زیادہ عرصے سے دنیا کے سمندروں میں لمبا فاصلہ طے کیا ہے لیکن انسانی سرگرمیوں نے اس قدیم مخلوق کی بقا کو خطرے میں ڈال دیا ہے۔

2000 کی دہائی کے اوائل تک، پاکستان کے ساحل کے پانچ خطرے سے دوچار کچھوؤں کی نسلوں کی رہائش گاہ تھے۔

اب صرف سبز کچھوے کراچی کے صرف دو ساحلوں اور صوبہ بلوچستان کے غیر آباد جزیروں پر اپنے انڈے دینے کے لیے ساحل پر آتے ہیں۔

تعمیرات، شور اور کچرے کی آلودگی کے ساتھ ساتھ ڈبلیو ڈبلیو ایف پاکستان نے یہ بھی بتایا ہے کہ ڈیزل اور پیٹرول کے دھوئیں کی وجہ سے ہیچلنگ میں خرابی پیدا ہوئی ہے۔

مزید پڑھ

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

ان کے انڈے دینے کی جگہوں پر بڑے خلل کے ساتھ ساتھ، ہر سال ماہی گیری کے جال میں ہزاروں کچھوے زخمی یا مر بھی جاتے ہیں۔

ان کے سبز رنگ کی وجہ سے، انہیں دنیا بھر میں خطرے سے دوچار آبی مخلوق کے طور پر درج کیا گیا ہے۔

’زندہ ڈائنوسار‘

سندھ وائلڈ لائف ڈپارٹمنٹ کے پاس چھ رضاکاروں کی ایک وقف ٹیم ہے جنہیں معاوضہ دیا جاتا ہے اور جو اگست اور جنوری کے درمیان انڈے دینے کے موسم کے دوران اندھیرے میں ساحلوں پر گشت کرتی ہے۔

عامر خان نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ ’جب کچھوے گڑھے استعمال کرنے کے لیے آتے ہیں تو ہمارے رضاکار ان کی دیکھ بھال کے لیے موجود ہوتے ہیں اور اس بات کو یقینی بناتے ہیں کہ کوئی انہیں پریشان نہ کر سکے۔‘

ان 88 انڈوں کو اسی رات ایک محفوظ ساحلی مرکز لے جایا گیا اور آوارہ کتوں اور سانپوں کے خطرے سے دور 45-60 دن تک ریت میں دبا دیا گیا۔

صرف چند گھنٹوں کی عمر کے اور صرف دو انچ لمبے کچھوؤں کو رضاکار بالٹیوں میں پانی کے کنارے پر لاتے ہیں اور ایک ایک کرکے رات کے وقت چھوڑ دیتے ہیں۔

پاکستان میں سبز کچھوؤں کی تعداد کے اعداد و شمار دستیاب نہیں ہیں لیکن گذشتہ چند برسوں سے ہیچلنگ کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے۔

2022 میں رضاکاروں نے کامیابی کے ساتھ 30,000 انڈے نکالے اور رواں سال کی تعداد پہلے ہی سیزن کے نصف حصے میں 25،000 سے تجاوز کر چکی ہے۔

خان نے کہا کہ یہ ’زندہ ڈائنوسار‘ تیزی سے بڑھتے ہوئے شہری پھیلاؤ اور ماہی گیروں سے پیدا ہونے والے خطرات کے خلاف جدوجہد جاری رکھیں گے۔

29 سالہ رضاکار محمد جاوید کا کہنا کہ ’ان کچھوؤں کی دیکھ بھال کرنا اچھا لگتا ہے، یہ ہمارے ساحل کی خوبصورتی میں اضافہ کرتے ہیں۔‘

زیادہ پڑھی جانے والی ماحولیات